ہوم » نیوز » وطن نامہ

بابری مسجد اراضی تنازعہ : ثالثی کمیٹی کی پروگریس پرسپریم کورٹ میں سماعت آج

سپریم کورٹ میں ثالثی کمیٹی کے رفتار پر بحث ہوگی۔ در اصل ہندو فریق کے گوپال سنگھ وشارد نے ثالثی میں کوئی ٹھوس پیش رفت نہ ہونے کی وجہ سے اسے بند کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے جلد سنوائی کامطالبہ کیاہے

  • Share this:
بابری مسجد اراضی تنازعہ : ثالثی کمیٹی کی پروگریس پرسپریم کورٹ میں سماعت آج
علامتی تصویر

ایودھیا رام جنم بھومی تنازعے کی جلد سماعت کی مانگ پرآج سپریم کورٹ میں سنوائی ہوگی۔ سپریم کورٹ میں ثالثی کمیٹی کی پیش رفت پر بحث ہوگی۔ در اصل ہندو فریق کے گوپال سنگھ وشارد نے ثالثی میں کوئی ٹھوس پیش رفت نہ ہونے کی وجہ سے اسے بند کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے جلد سنوائی کامطالبہ کیا ہے ۔ گوپال نے گزشتہ دنوں اس معاملے پرسپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کی تھی کہ ایودھیا تنازعہ پر جلد سنوائی ہو۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ کی پانچ ججوں پرمشتمل آئینی بینچ اس معاملہ کی سنوائی کر رہی ہے ۔واضح رہے کہ عدالت عظمی کی جانب سے ایودھیا تنازعہ کا حل نکالنے کے لئے مقرر کردہ ثالثی اب تک کسی نتیجے پر نہیں پہنچی ہے۔ ہندو کمیونٹی کی جانب سے نمائندگی کرنے والوں میں سے ایک نے منگل کے روز یہ بیان دیتے ہوئے اس عمل کو ختم کرنے کی مانگ کی اور عدالت سے درخواست کی کہ وہ سال2010سے زیرالتواء معاملے کوحل کرے۔


درخواست گذارکی جانب سے عدالت میں پیش ہونے والے سینئروکیل نے چیف جسٹس آف انڈیا کی نگرانی میں سنوائی کررہے بنچ کے سامنے اس مذکورہ درخواست کا ذکر کیا۔ جس کی سنوائی کے لئے رضا مندی ظاہر کردی گئی ہے۔ یہ درخواست مبینہ طور پر ثالثی کے عمل میں شامل درخواست گذار کی اس میں حصہ داری کے عمل کی بنیاد پرہے جس میں انہوں نے کہاکہ ایسا لگ رہا ہے کہ یہ کام کہیں آگے نہیں بڑھ رہا ہے۔


مارچ8کے روز ایک پانچ ججوں کی بنچ کا قیام عدالت عظمی نے فیصلہ کیا تھا۔ جس نے ایک تین رکنی پینل کی تشکیل دی جس کی نگرانی سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج ایف ایم ائی خلیف اللہ کررہے ہیں ۔ان کے علاوہ پینل میں مشہور ثالث اور وکیل سری رام پانچواور روہانی لیڈر شری شری روی شنکر بھی اس میں شامل ہیں۔مذکورہ پینل سے ایسا کہاگیا تھا کہ مخالفت کرنے والی پارٹیوں کو ایک جگہ لاکر 70سالہ قدیم اراضی کا معاملہ جو2.77ایکڑ پر مشتمل بابری مسجد‘ رام جنم بھومی کی ایودھیا میں موجود اراضی پر مشتمل ہے اس کا حل نکالیں۔مئی کے مہینے میں عدالت نے 15اگست تک اپنا کام پورا کرلینے کے لئے پینل کے وقت میں اضافہ کیاتھا۔


سال1950میں معاملے کو سیول جج کو درخواست دیتے ہوئے مذکورہ مقام پر پوجا کرنے اور مورتی نصب کرنے کی اجازت پر مشتمل درخواست داخل کرنے والے کیس میں شامل ایک فرد کا جانشین مذکورہ درخواست گذارہے۔ سنگھ نے اپنے بحث میں کہاکہ وہ اب 80سال کی عمر میں پہنچ گئے ہیں اور نتیجے کے اب بھی منتظر ہیں جس کے لئے ان کے والد گوپال سنگھ ویشارڈ نے درخواست داخل کی تھی۔ مذکورہ اپیل جس میں الہ آباد ہائی کورٹ کے فیصلے جو2.77ایکڑ اراضی کو مساوی طو رپر رام للی (مورتی)‘ نرموہی اکھاڑہ اور سنی وقف بورڈ میں برابر تقسیم پر مشتمل تھا جس پر چیالنج 2010سے سپریم کورٹ میں زیرالتوا ء ہے
First published: Jul 11, 2019 08:47 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading