உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بابری مسجدانہدام کی برسی پر سخت چوکسی، ایودھیا میں سیکورٹی اور انٹیلی جنس گرڈ تعینات

    متھرا انتظامیہ کو ریڈ، یلو اور گرین زون میں تقسیم کیا گیا ہے۔

    متھرا انتظامیہ کو ریڈ، یلو اور گرین زون میں تقسیم کیا گیا ہے۔

    ایودھیا کی سیکورٹی کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے ایس ایس پی شیلیش پانڈے نے کہا کہ ایودھیا میں عقیدت مندوں کی آمد میں اضافہ ہوا ہے، ایسے میں ایودھیا کے لیے پہلے سے ہی وسیع حفاظتی انتظامات کیے گئے ہیں۔ سیکیورٹی کے لیے سول پولیس، پی اے سی اور دیگر اداروں سمیت سیکیورٹی فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔

    • Share this:
      ایودھیا میں 6 دسمبر کو بابری مسجد انہدام کی برسی کے پیش نظر سیکورٹی سخت کر دی گئی ہے۔ انتظامی حکام اور انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ کی فعال ٹیموں سمیت سیکورٹی انتظامات کو چاک و چوبند کردیا گیا ہے۔ ایودھیا میں سیکٹر مجسٹریٹ اور پولیس افسران پہلے سے ہی ڈیوٹی پر ہیں۔

      ایودھیا کی سیکورٹی کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے ایس ایس پی شیلیش پانڈے نے کہا کہ ’’ایودھیا میں عقیدت مندوں کی آمد میں اضافہ ہوا ہے، ایسے میں ایودھیا کے لیے پہلے سے ہی وسیع حفاظتی انتظامات کیے گئے ہیں۔ سیکیورٹی کے لیے سول پولیس، پی اے سی اور دیگر اداروں سمیت سیکیورٹی فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔ انٹیلی جنس ایجنسیوں کو بھی تعینات کر دیا گیا ہے۔ اس بات کا خاص خیال رکھا جا رہا ہے کہ آنے والے عقیدت مندوں کو کسی قسم کی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے‘‘۔

      دریں اثنا بابری انہدام کیس کے ایک اہم استغاثہ کے گواہ حاجی محبوب نے یقین دہانی کرائی ہے کہ پیر کو کوئی پروگرام نہیں کیا جائے گا۔ اب جبکہ رام جنم بھومی کے حق میں فیصلہ آیا ہے، اس پر کوئی پروگرام نہیں ہوگا۔ 6 دسمبر 1992 کو قتل کیے جانے والے مسلم کمیونٹی کے افراد کے لیے مساجد میں قرآن خوانی کا پروگرام منعقد کیا جائے گا۔

      محبوب نے مزید کہا کہ مسجد کے انہدام کے بعد ہونے والے مقدمے کی سماعت کے دوران یقین دہانی کرائی گئی تھی کہ مستقبل میں ایسی کوئی تکرار نہیں ہوگی۔ لیکن اب متھرا کا مسئلہ پھر سے اٹھایا جا رہا ہے۔

      کچھ دائیں بازو کی ہندو تنظیموں کی طرف سے 6 دسمبر کو روایتی پروگرام منعقد کرنے کے اعلانات کے پیش نظر متھرا میں بھی سیکورٹی بڑھا دی گئی ہے۔ ضلعی حکام نے اجازت دینے سے انکار کر دیا ہے۔ متھرا کے سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس گورو گروور نے کہا ہے کہ ’’ہم پورے متھرا میں ایک خصوصی حفاظتی حصار تیار رکھے ہوئے ہیں، سیکورٹی فورسز متھرا میں ہر حرکت پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بھی سخت ہدایات دی گئی ہیں کہ کوئی شرارتی حرکت نہ ہو‘‘۔

      متھرا انتظامیہ کو ریڈ، یلو اور گرین زون میں تقسیم کیا گیا ہے۔ تینوں زونز میں پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے۔ دونوں مذہبی مقامات کے 300 میٹر کے علاقے میں بنائے گئے ریڈ زون میں آنے والوں کی نگرانی کی جا رہی ہے۔ سیکورٹی کے پیش نظر باہر سے پولیس فورس بھی طلب کر لی گئی ہے۔ تنظیموں کو سخت ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: