مہاراشٹر میں حکومت سازی کو لے کر تعطل کے درمیان احمد پٹیل نے نتن گڈگری سے کی ملاقات

کانگریس میں پس پردہ امکانات تلاش کرنے میں ماہر پٹیل نے اگرچہ بعد میں کہا کہ انہوں نے گڈکری کے ساتھ بات چیت میں مہاراشٹر سیاست کے بارے میں کوئی تبادلہ خیال نہیں کیا۔ انہوں نے کہا ’’میں نے مہاراشٹر کا’م‘ تک نہیں کہا‘‘۔

Nov 06, 2019 12:32 PM IST | Updated on: Nov 06, 2019 12:32 PM IST
مہاراشٹر میں حکومت سازی کو لے کر تعطل کے درمیان احمد پٹیل نے نتن گڈگری سے کی ملاقات

سینئر کانگریسی لیڈر اور پارٹی صدر سونیا گاندھی کے قریبی احمد پٹیل

نئی دہلی۔ سینئر کانگریسی لیڈر اور پارٹی صدر سونیا گاندھی کے قریبی احمد پٹیل نے بدھ کے روز یہاں مرکزی وزیر اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سابق صدر نتن گڈکری سے ملاقات کی ”۔ کانگریس میں پس پردہ امکانات تلاش کرنے میں ماہر پٹیل نے اگرچہ بعد میں کہا کہ انہوں نے گڈکری کے ساتھ بات چیت میں مہاراشٹر سیاست کے بارے میں کوئی تبادلہ خیال نہیں کیا۔ انہوں نے کہا ’’میں نے مہاراشٹر کا’م‘ تک نہیں کہا‘‘۔

پٹیل نے کہا’’ گڈکری سے میری ملاقات مہاراشٹر کی سیاست کے بارے میں نہیں تھی ۔ میں مرکزی وزیر کے پاس مہاراشٹر کے کسانوں کے مسائل پر گفت و شنید کرنے کے لئے گیا تھا ‘‘۔  گڈکری اور  پٹیل کی ملاقات کی اہمیت اس بات سے اور بڑھ گئی ہے کہ گڈکری کو آر ایس ایس کا قریبی سمجھا جاتا ہے اور شیوسینا کے لیڈروں نے اس حکومت سازی کے تعطل کے حل کے لئے آر ایس ایس کی قیادت اور گڈکری کی ثالثی کی اپیل کی ہے۔

مہاراشٹر میں حکومت سازی کے سلسلے میں شیوسینا اور بی جے پی میں جاری کھینچ تان کے درمیان گڈکری کی رہائش گاہ پر پیر کے روز دو اہم میٹنگیں ہوئی ہیں ۔ بی جے پی کے موجودہ صدر امت شاہ اور مہاراشٹر کے وزیر اعلی دویندر فڑ نویس نے گڈکری کے ساتھ بات چیت کی تھی ۔ادھر کانگریس کے خیمے میں پارٹی صدر سونیا گاندھی اور نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) کے صدر شرد پوار کے درمیان بھی مہاراشٹر کے معاملے پر ملاقات ہوئی تھی ۔

مہاراشٹر اسمبلی کے 21اکتوبر کو ہوئے انتخابات کے 24 اکتوبر کو نتائج برآمد ہوئے جس میں بی جے پی -شیو سینا اتحاد کو مکمل اکثریت حاصل ہوئی، لیکن شیوسینا وزیر اعلی کے عہدے اور محکموں میں 50-50 کے فارمولے کی بنیاد پر حکومت بنانے کے مطالبے پر بضد ہے جبکہ بی جے پی وزیر اعلی کے عہدے، وزارت داخلہ اور اسمبلی کے اسپیکر کے عہدے کے لئے کسی بھی قسم کا سمجھوتہ کرنے کو تیار نہیں ہے ۔ دریں اثنا، مہاراشٹر میں نو نومبر کو نئی حکومت کی حلف برداری ہونے کی اطلاع ہے ۔

Loading...