உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Explained: نئی دہلی میں افغانستان وطالبان پراین ایس اےسطح کی اہم میٹنگ، سات ممالک کی شرکت، کیاہوگاایجنڈہ؟

    طالبان رہنماوؤں کا فائل فوٹو

    طالبان رہنماوؤں کا فائل فوٹو

    نئی دہلی میں منعقد ہونے والے این ایس اے سطح کے اجلاس کے اہم ایجنڈوں میں طالبان کی حکومت کے بعد سیکیورٹی کے چیلنجز، افغانستان میں استحکام، جامع حکومت کی تشکیل اور موجودہ نظام کو کس طرح تسلیم کیا جائے؟ جیسے اہم موضوعات شامل ہیں۔ جس پر ہندوستان کی جانب سے کھل کر اپنے موقف کو پیش کیے جانے کی امید ہے۔

    • Share this:
      افغانستان اور وہاں برسراقتدار طالبان سے متعلق اپنی نوعیت کی پہلی کانفرنس میں ہندوستان نے ایران، روس اور تمام پانچ وسطی ایشیائی ممالک (Central Asian countries) بشمول تاجکستان، کرغزستان، قازقستان، ازبکستان اور ترکمانستان کو افغانستان پر این ایس اے (NSA) سطح کی میٹنگ میں شرکت کی دعوت دی ہے۔

      یہ میٹنگ 10 نومبر 2021 کو نئی دہلی میں منعقد ہوگی۔ جو کہ قومی سلامتی مشیروں (NSAs) کی سطح کی ہوگی اور اس کی صدارت ہندوستانی قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول (Ajit Doval) کریں گے۔ اس طرح پہلے بھی دو میٹنگیں ستمبر 2018 اور دسمبر 2019 میں ایران میں ہو چکی ہیں۔ ذرائع نے مزید کہا کہ کورونا وبا کی وجہ سے ہندوستان میں میٹنگ پہلے نہیں ہو سکی تھی۔

      اس کانفرنس کا ایجنڈے کیا ہوگا؟

      رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ این ایس اے کے اجلاس میں سرحد پار دہشت گردی کے خطرے، دہشت گرد گروہوں کی موجودگی، سیاسی عدم استحکام سے لے کر انتہا پسندی کے پھیلاؤ اور افغانستان سے بنیاد پرست نظریات جیسے مسائل پر بات کی جائے گی۔ اگست کے وسط میں طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد ہندوستان کو سکیورٹی خدشات لاحق ہیں۔ کانفرنس کے اہم ایجنڈے میں یہ موضوعات شامل ہیں:

      • طالبان کی حکومت کے بعد سیکیورٹی کے چیلنجز

      • افغانستان میں استحکام

      • جامع حکومت کی تشکیل

      • موجودہ نظام کو کس طرح تسلیم کیا جائے؟

        طالبان لیڈر ملا عبدالغنی برادر کی فائل فوٹو (AP)
        طالبان لیڈر ملا عبدالغنی برادر کی فائل فوٹو (AP)


      ہندوستان، افغانستان میں طالبان کے اقتدار پر واپسی کے بعد سے ہی افغانستان اور وسطی ایشیا سے رابطے کے منصوبوں میں شامل رہا ہے۔ جس میں ایران کا چابہار بندرگاہ منصوبہ Chabahar port project اور ترکمانستان-افغانستان-پاکستان-انڈیا (TAPI) گیس پائپ لائن شامل ہے۔ ان منصوبوں میں مزید پیشرفت اور آگے کے عزائم کے لیے اس کانفرنس میں گفتگو بھی ہوسکتی ہے۔ ہندوستان اس بات کو بھی دہرائے گا کہ وہ افغانستان میں ترقی اور تجارتی شراکت دار کے طور پر ایک اہم شرکت دار رہے گا۔ ذرائع نے انڈین ایکسپریس کو بتایا کہ یہ پہلی بار ہوگا کہ تمام وسطی ایشیائی ممالک افغانستان پر اس طرز کے اجلاس میں شرکت کریں گے۔

      کون حصہ لے گا اور کون نہیں؟

      چین، ایران، قازقستان، کرغزستان، پاکستان، روس، تاجکستان، ترکمانستان اور ازبکستان میں این ایس اے کے ہم منصبوں کو دعوت نامے بھیجے گئے تھے۔ دعوت نامے گزشتہ ماہ قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹریٹ National Security Council Secretariat نے نئی دہلی میں مدعو ممالک کے سفارت خانے کے ذریعے بھیجے تھے۔

      یہ میٹنگ 10 نومبر کو نئی دہلی میں ہونے والی ہے، جو کہ قومی سلامتی مشیروں (NSAs) کی سطح پر منعقد ہوگی اور اس کی صدارت قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول Ajit Doval کریں گے۔
      یہ میٹنگ 10 نومبر کو نئی دہلی میں ہونے والی ہے، جو کہ قومی سلامتی مشیروں (NSAs) کی سطح پر منعقد ہوگی اور اس کی صدارت قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول Ajit Doval کریں گے۔


      ایران، روس اور وسطی ایشیا کے پانچوں ممالک بشمول تاجکستان، کرغزستان، قازقستان، ازبکستان اور ترکمانستان نے اس اجلاس میں شرکت کی تصدیق کی ہے۔ تاہم چین اور پاکستان نے شرکت کی تصدیق نہیں کی ہے۔ پاکستان کے قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف Moeed Yusuf نے اعلان کیا کہ وہ اجلاس میں شرکت نہیں کریں گے۔ جس کا مطلب یہ ہوسکتا ہے کہ وہ افغانستان میں ہندوستان کے کردار کے خلاف اپنا رد عمل ظاہر کرنا چاہتے ہوں۔

      دریں اثنا ہندوستانی حکام کو امید ہے کہ چینی وزیر برائے ریاستی سلامتی چن وین کنگ Chen Wenqing یا کوئی اور سیکورٹی عہدے دار شخصی طور پر کانفرنس میں شرکت کرے گا۔ دی ہندو کی ایک رپورٹ میں اس کا ذکر کیا گیا تھا۔

      طالبان پر ہندوستان کا موقف:

      ابھی تک کسی بھی ملک نے افغانستان کے وزیراعظم حسن اخوند Hasan Akhund کی سربراہی میں قائم طالبان کی حکومت کو تسلیم نہیں کیا ہے۔ لیکن ہندوستان سمیت کئی ممالک مختلف سطحوں پر طالبان حکام کو شامل کر رہے ہیں۔ افغانستان پر اقوام متحدہ کے اجلاس میں وزیر خارجہ ایس جے شنکر S Jaishankar نے کہا کہ نئی دہلی افغانستان میں طالبان کی واپسی کے بعد ’’قابل فہم تشویش‘‘ کے ساتھ مذکورہ پیش رفت پر نظر رکھے ہوئے ہے۔

      ہندوستان نے بار بار طالبان حکومت کے سلسلے میں واضح کیا ہے کہ اسے اپنی سرزمین پر دہشت گردی کے لیے محفوظ پناہ گاہوں کی اجازت نہیں دینی چاہیے۔ افغانستان کی نئی انتظامیہ (طالبان) اقلیتوں، خواتین اور بچوں کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانا چاہیے۔

      طالبان رہنماوؤں کی فائل فوٹو
      طالبان رہنماوؤں کی فائل فوٹو


      یہ بات قابل غور ہے کہ ہندوستان کے افغانستان اور اس کے عوام کے ساتھ طویل عرصے سے تاریخی تعلقات ہیں۔ اس ملک کے افغان حکومت کے ساتھ بھی دوستانہ تعلقات رہے ہیں۔ جو حال ہی میں طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد ایک طرح سے معزول کا شکار ہیں۔ طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد ہندوستان نے اس بات کا اعادہ کیا ہے کہ وہ ہمیشہ افغان عوام کے ساتھ کھڑا ہے اور انسانی امداد بھیجنے کے لیے تیار ہے، جیسا کہ اس نے ماضی میں ایسے اقدامات کرکے دیکھائیں ہیں۔

      ایس جے شنکر نے اقوام متحدہ کے اجلاس میں واضح کیا کہ ہندوستان، افغان عوام کے تیئں انسانی امداد بھیجنے کے لیے تیار ہے اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ ملک میں بہترین ممکنہ ماحول پیدا کرنے میں مدد کرے۔

      پاک کے انکار پر ہندوستان کا ردعمل:
      ہندوستان نے پاکستان کے فیصلے کو ’’بدقسمتی لیکن حیران کن نہیں قرار دیا ہے۔ یہ افغانستان کو اپنے محافظ کے طور پر دیکھنے کے اس کی ذہنیت کی عکاسی کرتا ہے۔ پاکستان نے اس طرح کی پچھلی میٹنگوں میں شرکت نہیں کی ہے۔ ہندوستان کے خلاف اس کے میڈیا کے تبصرے اس سے توجہ ہٹانے کی ایک ناکام کوشش ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ مذاکرات کی میزبانی پر ہندوستان کے خلاف پاکستان کے تبصرے افغانستان میں اس کے ’’خطرناک کردار‘‘ سے توجہ ہٹانے کی ناکام کوشش ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: