موب لنچنگ معاملے پرعدالت کے حکم کےنفاذ کے لئے وزیراعظم سمیت سرکردہ لیڈروں کوعرضی دی گئی

شاہدعلی ایڈوکیٹ نےکہا کہ سپریم کورٹ کی گائڈ لائن کےبعد بھی اگرپولیس افسریا انتظامی افسر کوتاہی کرتا اورپھر کوئی اپنا کام ٹھیک سےنہیں کرتا تو یہ توہین عدالت کے زمرے میں آتا ہے۔

Jul 10, 2019 11:46 PM IST | Updated on: Jul 10, 2019 11:51 PM IST
موب لنچنگ معاملے پرعدالت کے حکم کےنفاذ کے لئے وزیراعظم سمیت سرکردہ لیڈروں کوعرضی دی گئی

یونائیٹیڈ مسلم فرنٹ کے صدرشاہد علی ایڈوکیٹ: فائل فوٹو

موب لنچنگ کولےکرپورے ملک میں ہورہی بحث اوراحتجاجی مظاہروں کے درمیان یونائیٹیڈ مسلم فرنٹ شاہد علی ایڈوکیٹ نےوزیراعظم نریندرمودی، یوپی اے کی چیئرپرسن سونیا گاندھی، بی ایس پی سربراہ مایاوتی، سماجوادی پارٹی کےصدراکھلیش یادواورمسلم اراکین پارلیمنٹ کوہجومی تشدد معاملے کولےکرپٹیشن بھیجی ہے۔

فرنٹ کے صدرشاہد علی ایڈوکیٹ نے نیوز18 اردو سے بات کرتے ہوئےکہا کہ سپریم کورٹ میں گزشتہ سال اپنے فیصلے میں موب لنچنگ کے خلاف قانون بنانےکےلئے کہا تھا اورساتھ ہی ساتھ کئی طرح کی گائڈ لائنس بھی دی تھی، جن میں ایک ماہ کے اندرموب لنچنگ کے متاثرین کےلئےمعاوضہ کی بات کی گئی تھی۔ اسی طرح سے موب لنچنگ کے گنہگاروں کو زیادہ سے زیادہ سزا دینے کی بات بھی کہی گئی تھی۔  اس کےعلاوہ ہرروزاس معاملے کی سماعت کی بات کی تھی، لیکن حکومت نےاس معاملے میں کوئی قدم نہیں اٹھایا۔

Loading...

شاہدعلی ایڈوکیٹ نےکہا کہ سپریم کورٹ کی گائڈ لائن کے بعد بھی اگرپولیس افسریا انتظامی افسرکوتاہی کرتے ہیں اوراپنا کام ٹھیک سےنہیں کرتی توان کے خلاف بھی سخت ایکشن لینے کی بات کی۔ شاہد علی نےکہا کہ حکومت نے طلاق ثلاثہ کےمعاملے میں توقانون بنا دیا، لیکن لوگوں کی جان سے جڑے ہوئے اس معاملے میں کوئی قدم نہیں اٹھایا۔ ایسے میں یہ معاملے توہین عدالت کا معاملہ بھی ہے۔ اگرحکومت نےاس سیشن میں قدم اٹھایا تو معاملے کو دوبارہ سےعدالت کے سامنے توہین عدالت کے طورپرلے جایا جائے گا۔

Loading...