ہوم » نیوز » وطن نامہ

اکالی دل نے توڑی بی جے پی سے 22 سال پرانی دوستی ، زرعی بل کی مخالفت میں این ڈی اے چھوڑا

سکھبیر سنگھ بادل نے کہا کہ کوئی بھی اتحاد یا وزارت 'ان داتا' سے زیادہ اہم نہیں ہے۔ ہم پہلے دن سے ہی کسان اور کھیت کے مزدوروں کے ساتھ ہیں ۔ اسی لئے ہم نے تینوں زراعتی ترمیمی بل کی مخالفت کی اور این ڈی اے سے دستبرداری کا فیصلہ کیا۔ اب ہم ان قوانین کو منسوخ کرانے کے لئے احتجاج کریں گے۔

  • Share this:
اکالی دل نے توڑی بی جے پی سے 22 سال پرانی دوستی ، زرعی بل کی مخالفت میں این ڈی اے چھوڑا
اکالی دل نے توڑی بی جے پی سے 22 سال پرانی دوستی ، زرعی بل کی مخالفت میں این ڈی اے چھوڑا

زراعتی ترمیمی بل پر بی جے پی کے ساتھ عدم اتفاق کے تناظر میں شیرومنی اکالی دل نے قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کے ساتھ اپنے تعلقات توڑ لیے ہیں ۔ بی جے پی کی سب سے پرانی حلیف پارٹیوں میں سے ایک شیرومنی اکالی دل کافی طویل عرصے سے پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں سے منظور ہونے والے تینوں زراعتی ترمیمی بل کی مخالفت کر رہی ہے ۔


شیرومنی اکالی دل کے صدر سکھبیر سنگھ بادل نے پارٹی کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا ہے کہ کم از کم سپورٹ پرائس (ایم ایس پی) پر کسانوں کی فصلوں کی خریداری کی گارنٹی سے انکار کرنے کی وجہ سے شرمنی اکالی دل نے بی جے پی کی زیرقیادت این ڈی اے سے الگ ہونے کا فیصلہ کیا ہے ۔


سکھبیر سنگھ بادل نے کہا کہ کوئی بھی اتحاد یا وزارت 'ان داتا' سے زیادہ اہم نہیں ہے۔ ہم پہلے دن سے ہی کسان اور کھیت کے مزدوروں کے ساتھ ہیں ۔ اسی لئے ہم نے تینوں زراعتی ترمیمی بل کی مخالفت کی اور این ڈی اے سے دستبرداری کا فیصلہ کیا۔ اب ہم ان قوانین کو منسوخ کرانے کے لئے احتجاج کریں گے۔ واضح رہے کہ اس سے قبل مرکزی فوڈ اینڈ پروسیسنگ انڈسٹریز کی وزیر ہرسمرت کور بادل نے زراعتی ترمیمی بل پر احتجاج درج کرتے ہوئے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔


 



قابل ذکر ہے کہ اس سے پہلے شیرومنی اکالی دل کے سربراہ سکھبیر سنگھ بادل نے مطالبہ کیا تھا کہ پنجاب حکومت فوری طور پر آرڈیننس لے کر آئے ، جس میں پوری ریاست کو زرعی بازار اعلان کیا جائے ۔ تاکہ مرکز کے زرعی قوانین کو یہاں لاگو کرنے سے روکا جاسکے ۔

بادل نے کہا کہ مرکز کے نئے قوانین کو پنجاب میں لاگو ہونے سے روکنے کا ایک واحد طریقہ یہی ہے کہ پوری ریاست کو زرعی پیداوار کی منڈی اعلان کردیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بھی علاقہ جس کو منڈی اعلان کیا گیا ہے ، وہ نئے قانون کے دائرے سے باہر ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس سے "بڑے کارپوریٹ شارک" ریاست میں داخل نہیں ہوسکیں گے ۔

یو این آئی کے ان پٹ کے ساتھ ۔ 
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 26, 2020 11:02 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading