உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Shivpal Singh Yadav:شیوپال سنگھ یادو کا اعلان-ایس پی کےساتھ جانا تاریخی بھول تھی، اب کوئی تعلق نہیں رکھیں گے

    ایس پی کے ساتھ جانا تاریخی بھول تھی: شیوپال یادو۔ (فائل فوٹو)

    ایس پی کے ساتھ جانا تاریخی بھول تھی: شیوپال یادو۔ (فائل فوٹو)

    Shivpal Singh Yadav: شیوپال نے دعویٰ کیا کہ ان کے ساتھ مختلف ذاتوں کی الگ الگ تنظیمیں ہیں۔ الگ تھلگ پڑے لوگوں کو ساتھ جوڑ کر کارواں تیار کررہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Lucknow | New Delhi
    • Share this:
      Shivpal Singh Yadav: شیو پال سنگھ یادو نے کہا کہ اب ان کا ایس پی سے کوئی تعلق نہیں رہے گا۔ اس نے کئی مرتبہ دھوکہ دیا ہے۔ اسمبلی انتخابات میں ان کا ساتھ دینا ایک بڑی تاریخی غلطی تھی۔ اب وہ اس کے جال میں نہیں آئیں گے۔ بلدیاتی الیکشن اپنے بل بوتے پر لڑیں گے۔ اگر ملائم سنگھ یادو مین پوری سے لوک سبھا الیکشن لڑتے ہیں تو وہ دوبارہ جیت جائیں گے، لیکن اگر وہ نہیں لڑیں گے تو امیدوار کھڑا کریں گے۔ شیو پال جمعہ کو اپنے دفتر میں نامہ نگاروں سے بات کر رہے تھے۔

      خود کو ایس پی ایم ایل اے ہونے کے سوال پر شیو پال نے کہا کہ انہوں نے ایس پی کی رکنیت لے کر پارٹی کے نشان پر الیکشن لڑا تھا، لیکن ایس پی کے قومی صدر انہیں اپنا ایم ایل اے نہیں مانتے۔ انہوں نے کہا کہ میں پہلے ہی کہہ چکا ہوں کہ ایس پی چاہے تو انہیں برخاست کر سکتی ہیں۔ شیو پال نے بی جے پی کے ساتھ اتحاد کے سوال پر کوئی واضح جواب نہیں دیا۔ انہوں نے کہا کہ اس کا فیصلہ الیکشن کے وقت ہو گا۔ جو ہاتھ بڑھائے گا، اس کے ساتھ کارکنوں سے رائے لے کر کندھے سے کندھا ملانے پرغور کیا جائے گا۔

      ایس پی سے الگ ہونے والے اوم پرکاش راج بھر سمیت دیگر لیڈروں کے سوال پر انہوں نے کہا کہ سب سے بات چیت ہوتی ہے، لیکن لوک سبھا انتخابات کو لے کر ابھی کوئی بات نہیں ہوئی ہے۔ جہاں تک ڈی پی یادو کا تعلق ہے وہ ان کے ساتھ ہیں۔ ایس پی لیڈر اعظم خان کے ساتھ اچھے تعلقات ہونے کی بات کرتے ہوئے شیو پال نے کانگریس کے ساتھ کسی قسم کے رابطے سے انکار کیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      ’’مدارس کے تئیں مرکزی اور ریاستی حکومت کا متعصبانہ رویہ تشویشناک اور غیر آئینی‘‘ AIMPLB

      یہ بھی پڑھیں:
      مدارس سروے تنازعہ: آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ نے مسلمانوں سے کی یہ بڑی اپیل

      انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر رام منوہر لوہیا، مدھو لیمیے ہی نہیں بلکہ آنجہانی جارج فرنانڈیز، شرد یادو جیسے لیڈر بھی اس کے حامی رہے ہیں۔ اب انہی کی وراثت کو آگے بڑھانا چاہتے ہیں۔ شیوپال نے دعویٰ کیا کہ ان کے ساتھ مختلف ذاتوں کی الگ الگ تنظیمیں ہیں۔ الگ تھلگ پڑے لوگوں کو ساتھ جوڑ کر کارواں تیار کررہے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: