ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مدھیہ پردیش کے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر لون دینے کا حکومت نےکیا اعلان

شیوراج کابینہ کے اہم رکن اور مدھیہ پردیش حکومت کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا نے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر حکومت کی جانب سے لون دینے کا اعلان کیا ہے۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش کے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر لون دینے کا حکومت نےکیا اعلان
مدھیہ پردیش کے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر لون دینے کا حکومت نےکیا اعلان

بھوپال: مدھیہ پردیش میں مانسون نے ابھی دستک تو نہیں دی ہے، لیکن اسمبلی ضمنی انتخابات کے پیش نظر حکومت نے سیاسی مانسون کی دستک سے کسانوں کو خوش کرنے کا سلسلہ شروع کردیا ہے۔ شیوراج کابینہ کے اہم رکن اور مدھیہ پردیش حکومت کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا نے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر حکومت کی جانب سے لون دینے کا اعلان کیا ہے۔ وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کا کہنا ہے کہ کسانوں کو سبز باغ دکھاکر اقتدار میں آنے والی کانگریس حکومت نے کسانوں کو ٹھگنے کا کام کیا ہے۔ دیڑھ سال کی حکومت میں کمل ناتھ حکومت نے کسانوں کو راحت دینے کا کام تو دور شیوراج سنگھ حکومت میں کسانوں کو لے کر پہلے جو اسکیم بنائی گئی تھی اسے بھی بند کرنے کا کام کیا ہے۔


شیوراج سنگھ خود کسان ہیں اور کسان کے بیٹے اور انہیں کسانوں کاہردرد نزدیک سے معلوم ہے۔ وہ کمل ناتھ جی کی طرح ہوائی قلعہ تعمیر نہیں کرتے ہیں بلکہ وہیں یوجنائیں بناتے ہیں جس سے کسانوں کا بھلا ہو سکے۔ وہیں مدھیہ پردیش کانگریس نے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کے بیان کو سیاسی شعبدہ بازی سے تعبیر کیا ہے۔ مدھیہ پردیش کانگریس کے سینئر لیڈر و سابق وزیر قانون پی سی شرما کا کہنا ہے کہ اگر شیوراج سنگھ حکومت کسانوں کے معاملے میں سنجیدہ ہے تو کمل ناتھ جی نے کسانوں کی قرض معافی کو لے کر جو قدم اٹھایا تھا، اسی کو جاری رکھیں کسان خود بخود خود کفیل ہوجائے گا اور اسی کسی قسم کے لون کی ضرورت نہیں ہوگی۔


مدھیہ پردیش حکومت کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا نے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر حکومت کی جانب سے لون دینے کا اعلان کیا ہے۔
مدھیہ پردیش حکومت کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا نے کسانوں کو زیرو انٹریسٹ پر حکومت کی جانب سے لون دینے کا اعلان کیا ہے۔


کانگریس لیڈر پی سی شرما نے حکومت  پر یہ بھی الزام لگایا کہ حکومت کے اعلان کے باوجود منڈی میں آج بھی ہزاروں کی تعداد میں کسان اپنے اناج کو لے کر ٹریکٹر کے ساتھ کھڑے ہیں، لیکن منڈی میں نہ تو اناج کے تولائی ہو رہی ہے اور نہ ہی ان کے ٹھہرنے کا کوئی انتظام ہے۔ حکومت کی جانب سے ایس ایم ایس آنےکے بعد بھی کسانوں کو ایک ایک ہفتہ انتظار کرنا ہوتا ہے اور جن کسانوں سے مارچ اور اپریل میں گیہوں کی خریدای کی گئی تھی ان کسانوں کو آج تک حکومت کی جانب سے ادائیگی نہیں کی گئی ہے۔

مدھیہ پردیش میں 24  اسمبلی سیٹوں ضمنی انتخاب سے قبل شیو راج حکومت نے کسانوں کو تحفہ دیا ہے۔
مدھیہ پردیش میں 24  اسمبلی سیٹوں ضمنی انتخاب سے قبل شیو راج حکومت نے کسانوں کو تحفہ دیا ہے۔


واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں 24  اسمبلی سیٹوں کے لئے اسمبلی کا ضمنی انتخاب ہونا ہے۔ 24  سیٹوں سے دونوں پارٹیوں کا مقدر جڑا ہوا ہے۔ 24 سیٹوں میں سے 22 سیٹیں وہ ہیں جو کانگریس کے سندھیا حامی ممبران اسمبلی کے استعفیٰ دینے کے بعد خالی ہوئیں ہیں اور دوسیٹوں کے ممبران اسمبلی کی موت ہو گئی ہے۔ بی جے پی کو اقتدار میں بنے رہنے کے لئے ان سیٹوں کو جیتنا جہاں بہت ضروری ہے وہیں کانگریس ان سیٹیوں کو جیت کر اقتدار میں واپسی کا خواب دیکھ رہی ہے۔



مدھیہ پردیش سے راجیہ سبھا کی تین سیٹوں کے لئے 19 جون کو ووٹ ڈالے جائیں گے۔ بی جے پی اور کانگریس سے دو دو امیدوار میدان میں ہیں۔ کانگریس سے دگ وجے سنگھ اور پھول سنگھ بریا میدان میں ہیں تو بی جے پی سے جیوتی رادتیہ سندھیا اور سمیر سنگھ میدان میں ہیں۔ ایسے میں سماجوادی کا ایک بی ایس پی کے دو اور چار آزاد امیدواروں پر دونوں ہی پارٹیوں کی نظریں ٹکی ہوئی ہیں۔ بی جے پی اور کانگریس سے ایک ایک امیدوار کا راجیہ سبھا میں جانا تو طے ہے، لیکن تیسرے امیدوار کی کامیابی کے لئے سماجودای پارٹی، بہوجن سماج پارٹی اور آزاد امیدواروں کی حمایت آکسیجن کا کام کرے گی۔
First published: Jun 02, 2020 09:24 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading