اپنا ضلع منتخب کریں۔

    شردھاقتل کیس: ملزم آفتاب کو لےجانے والی گاڑی پرتلواروں سےکیاگیاحملہ، پولیس نے جانچ کی شروع

    Youtube Video

    مشتعل ہجوم نے پولیس وین پر پتھراؤ بھی کیا۔ حملہ کرنے والے نے کہا کہ اسے دو منٹ کے لیے باہر لےآؤ، میں اسے مار ڈالوں گا۔ آفتاب کی گاڑی پر حملہ کرنے والے کچھ ملزمین کو پولیس نے حراست میں لے لیا ہے۔ حملہ آوروں کا دعویٰ تھا کہ وہ ہندو سینا کے کارکن ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      شردھا قتل کیس کے ملزم آفتاب پونا والا کی گاڑی پرآج یعنی پیر28 نومبر کو دہلی کے روہنی میں حملہ کیا گیا۔ پولی گراف ٹیسٹ کے بعد ایف ایس ایل کی ٹیم آفتاب کے ساتھ باہر آئی۔ اس کے بعد کچھ لوگوں کا ہجوم موقع پر پہنچ گیا اور گاڑی پر حملہ کر دیا۔ ان لوگوں کے ہاتھ میں تلواریں تھیں اور وہ آفتاب کو مارنے کی بات کر رہے تھے۔ جب حملہ ہوا تو ایک پولیس اہلکار وین سے باہر آیا اور اس نے ان لوگوں پر بندوق تان لی۔

      مشتعل ہجوم نے پولیس وین پر پتھراؤ بھی کیا۔ حملہ کرنے والے نے کہا کہ اسے دو منٹ کے لیے باہر لےآؤ، میں اسے مار ڈالوں گا۔ آفتاب کی گاڑی پر حملہ کرنے والے کچھ ملزمین کو پولیس نے حراست میں لے لیا ہے۔ حملہ آوروں کا دعویٰ تھا کہ وہ ہندو سینا کے کارکن ہیں۔

      پولیس وین میں 5 پولیس اہلکار موجود تھے۔


      ڈی سی پی روہنی گوریکبال سنگھ نے میڈیا کو بتایا کہ حملہ آوروں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔اس معاملہ کی جانچ کی جاری ہےاور ہم یہ معلوم کرنے کی کوشش کررہے ہیں کہ اس کے پیچھے کون ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ وہ جس تنظیم کا نام لے رہے ہیں اس کی معلومات بھی اکٹھی کی جا رہی ہیں۔ ذرائع کے مطابق دہلی پولیس کی تیسری بٹالین کے پاس جیل سے قیدیوں کو لے جانے کی ذمہ داری ہے۔ آفتاب کے ساتھ ایک سب انسپکٹر سمیت 5 پولیس اہلکار اور پولیس وین میں 4 اہلکار سوار تھے۔ پولیس وین کچھ نہیں ہے۔

       


      آفتاب کے پولی گراف ٹیسٹ کے بعد ہواحملہ


      آفتاب کا روہنی کے ایف ایس ایل میں پولی گراف ٹیسٹ ہو رہا تھا۔ جس کے بعد پولیس ٹیم اس کے ساتھ واپس جارہی تھی۔ اس دوران کچھ لوگوں نے پولیس وین پر حملہ کر دیا۔ اس سے قبل ایف ایس ایل کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر سنجیو گپتا نے کہا تھا کہ ماہرین کی ٹیم پولی گراف ٹیسٹ کر رہی ہے اور آج کا سیشن جلد ہی مکمل ہو جائے گا۔ اگر ضرورت پڑی تو آفتاب کو کل بھی اس ٹیسٹ کے لیے بلایا جائے گا۔ پولی گراف ٹیسٹ ختم ہونے کے بعد نارکو ٹیسٹ شروع کیا جائے گا۔

      ملزم عدالتی تحویل میں ہے۔


      آفتاب پر اپنی گرل فرینڈ شردھا کو قتل کرنے اور اس کی لاش کے 35 ٹکڑے کرنے کا الزام ہے۔ پولیس کے مطابق آفتاب نے جسم کے اعضاء کو اپنے مہرولی گھر میں فریج میں رکھا تھا اور پھر کئی دنوں تک شہر بھر میں پھینکتا رہا۔ ملزم کو سنیچر یعنی (26 نومبر) کو دہلی کی ایک عدالت نے 13 دن کی عدالتی حراست میں بھیج دیا تھا۔
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: