پہلوخان موب لنچنگ معاملہ: ایس آئی ٹی نے پولیس جنرل ڈائریکٹرکوسونپی اپنی رپورٹ

پورے ملک میں سرخیوں میں رہی راجستھان کےالورضلع کے پہلوخان موب لنچنگ معاملےمیں تشکیل ایس آئی ٹی نے جمعرات کواپنی رپورٹ پولیس جنرل ڈائریکٹربھوپیندرسنگھ یادوکوسونپ دی ہے۔

Sep 05, 2019 09:06 PM IST | Updated on: Sep 05, 2019 09:19 PM IST
پہلوخان موب لنچنگ معاملہ: ایس آئی ٹی نے پولیس جنرل ڈائریکٹرکوسونپی اپنی رپورٹ

پہلو خان موب لنچنگ معاملے میں ایس آئی ٹی نے پولیس جنرل ڈائریکٹرکو سونپی اپنی رپورٹ

پورے ملک میں سرخیوں میں رہے راجستھان کےالورموب لنچنگ کے پہلوخان موب لنچنگ معاملےمیں تشکیل دی گئی ایس آئی ٹی نےجمعرات کواپنی رپورٹ پولیس جنرل ڈائریکٹر بھوپیندرسنگھ یادوکوسونپ دی ہے۔ اے ڈی جی (کرائم) بی ایل سونی اورایس آئی ٹی کی ٹیم کی قیادت کررہےایس اوجی کےڈی آئی جی نتن دیپ بلگن نے یہ رپورٹ جمعرات شام کوڈی پی جی کوسونپی۔ رپورٹ سونپنےسے پہلےاے ڈی جی کرائم نےاس کی سنجیدگی سےتحقیق کی۔ ایس آئی ٹی نےاپنی رپورٹ میں پہلے کی گئی پولیس جانچ میں رہی خامیوں کوسامنے رکھا ہے۔

گزشتہ 14 اگست کوآیا تھا عدالت کا فیصلہ

Loading...

الورمیں تقریباً سوا دوسال پہلےیکم اپریل، 2017 کوہریانہ کےنوح میوات کے باشندہ پہلوخان موب لنچنگ کا شکارہوئے تھے۔ اس کےبعد ان کی موت ہوگئی تھی۔ اس معاملے میں گزشتہ 14 اگست کوعدالت کا فیصلہ آیا تھا۔ عدالت نےاس معاملے میں تمام 6 ملزمین کوبری کردیا تھا۔ اس معاملےمیں عدالت میں چالان کے بعد مستقل سماعت ہوئی تھی، لیکن پولیس جانچ میں بہت سی ایسی خامیاں رہی تھیں، جن کے سبب عدالت میں پہلو خان کا حق کمزورپڑا۔ آخر کار شک کےفائدہ پرملزم بری ہوگئے۔

ایس آئی ٹی کوسونپا گیا تھا ذمہ 

عدالت کے فیصلے کےدو دن بعد ہی وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نےاعلیٰ افسران کی میٹنگ لی تھی۔ میٹنگ میں پہلوخان معاملے کی اپیل کرنے اورایس آئی ٹی بنانے پرفیصلہ کیا گیا تھا۔ اس کے بعد فوری طورپرایس آئی ٹی کی تشکیل کی گئی۔ ایس آئی ٹی کومعاملے کی جانچ میں رہی خامیوں اوربےضابطگیوں کونشان زد کرنے کا ذمہ سونپا گیا تھا۔ اس رپورٹ میں جانچ میں لاپرواہی برتنے والےافسران کی ذمہ داری طے کی گئی ہے۔ ایس آئی ٹی نے معاملے سے منسلک وہ ثبوت بھی جمع کئے ہیں، جو پولیس جانچ میں جمع نہیں کئے گئے تھے۔

ڈی آئی جی (ایس اوجی) کودی گئی تھی کمان

ایس آئی ٹی کوپورے معاملے کی جانچ کرکے15 دن میں اپنی رپورٹ دینی تھی۔ اے ڈی جی کرائم بی ایل سونی کی نگرانی میں تشکیل کی گئی ایس آئی ٹی کولیڈ کرنےکی ذمہ داری ڈی آئی جی (ایس اوجی) نتن دیپ بلگن دی گئی۔ ان کی ٹیم میں سی آئی ڈی (سی بی) ایس پی سمیر کمارسنگھ اوراے ایس پی ویجیلنس سمیردوبے کو شامل کیا گیا تھا۔

Loading...