உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دگ وجے سنگھ یا کوئی اور؟ گاندھی فیملی کس کی کرے گی حمایت، سونیا ۔ راہل میں غور و خوض شروع

    دگ وجے سنگھ یا کوئی اور؟ گاندھی فیملی کس کی کرے گی حمایت، سونیا ۔ راہل میں 'منتھن' شروع

    دگ وجے سنگھ یا کوئی اور؟ گاندھی فیملی کس کی کرے گی حمایت، سونیا ۔ راہل میں 'منتھن' شروع

    Congress President Polls: ذرائع کے مطابق کانگریس عبوری صدر سونیا گاندھی جمعرات رات ڈنر کیلئے پرینکا گاندھی کے گھر گئیں ۔ یہاں ان کی راہل گاندھی سے ویڈیو کال پر بات ہوئی ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : کانگریس قومی صدر عہدہ کیلئے الیکشن کے درمیان نئی دہلی سے بڑی خبر ہے ۔ ذرائع کے مطابق کانگریس عبوری صدر سونیا گاندھی جمعرات رات ڈنر کیلئے پرینکا گاندھی کے گھر گئیں ۔ یہاں ان کی راہل گاندھی سے ویڈیو کال پر بات ہوئی ۔ ذرائع بتاتے ہیں کہ سبھی کے درمیان کانگریس صدر عہدہ کے الیکشن پر گفتگو ہوئی۔ ذرائع بتاتے ہیں کہ کنبہ کے درمیان بحث ہوئی کہ گاندھی فیملی دگ وجے سنگھ کو حمایت دے یا کوئی نیا امیدوار میدان میں لائے۔ اس کا فیصلہ جمعہ صبح ہوجائے گا اور پارٹی کے اندر کے لوگوں کو اس کی جانکاری دیدی جائے گی۔

      بتادیں کہ ٹھیک اس سے پہلے مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اعلی دگ وجے سنگھ کا بھی بڑا بیان سامنے آیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کی کمان ہمیشہ نہرو، گاندھی کنبہ کے ہاتھ میں رہے گی ۔ ہم ان کے نمائندے کی طرح رہیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ میں آخری سانس تک نہرو گاندھی کنبہ کا وفادار رہوں گا ۔ اس سے پہلے دگ وجے سنگھ پرچہ نامزدگی داخل کرنے کے بعد پارٹی کے دوسرے امیدوار ششی تھرور سے ملنے پہنچے ۔ تھرور نے ان کی امیدواری کا استقبال کیا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: کیا راجستھان میں گہلوت کی جگہ بنیں گے وزیراعلی؟ سونیا سے ملاقات کے بعد پائلٹ نے کیا کہا


      تھرور نے ٹویٹ کیا: دگ وجے سنگھ نے آج ملاقات کی ۔ میں ان کی کانگریس صدر کی امیدواری کا خیر مقدم کرتا ہوں ۔ ہم دونوں اس بات پر متفق ہیں کہ ہمارے درمیان ہونے والا الیکشن کوئی دشمنوں کی جنگ نہیں ہے ۔ یہ ساتھیوں کے درمیان ہونے والا دوستانہ مقابلہ ہے ۔ ہم دونوں بس یہی چاہتے ہیں کہ کوئی بھی جیتے، جیت صرف کانگریس کی ہونی چاہئے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: اشوک گہلوت نے ایک مرتبہ پھر کھیلا ڈبل گیم، کرسی بچانے کیلئے چلا یہ نیا داو؟


      تھرور کے اس ٹویٹ پر دگ وجے نے جواب دیا : میں آپ سے متفق ہوں ، ہم ہندوستانی کی فرقہ پرست طاقتوں سے لڑ رہے ہیں ۔ ہم دونوں گاندھی اور نہرو کے نظریہ میں یقین رکھتے ہیں اور کچھ بھی ہو ہمیں سے ان طاقتوں سے لگاتار لڑتے رہنا ہے ۔

      وہیں دگ وجے سنگھ کے صدر کی ریس میں آگے آنے پر مدھیہ پردیش کے سابق وزیر سجن سنگھ ورما کا الگ ہی بیان آیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ابھی دگ وجے سنگھ نے پرچہ نامزدگی داخل کیا ہے ۔ کانگریس پارٹی میں ہر گھنٹے حالات بدل رہے ہیں ۔ دگ وجے سنگھ کی قائدانہ صلاحیت کا اندازہ صرف کانگریس پارٹی کا ہائی کمان ہی کرسکتا ہے ، لیکن پارتی کا ہر کارکن راہل گاندھی کے ساتھ ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: