உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پنجاب نیشنل بینک گھوٹالہ : آئی سی اے آئی نے بے ضابطگیوں کی جانچ کیلئے اعلی سطحی گروپ قائم کیا

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاونٹنٹس آف انڈیا (آئی سی اے آئی) نے پبلک سیکٹر کے پنجاب نیشنل بینک میں جویلر نیرو مودی کے ذریعہ 11,400کروڑ روپے سے زیادہ کی بے ضابطگیوں کا جائزہ لینے کے لئے اعلی سطحی گروپ قائم کیا ہے جو اصلاحاتی اقدامات کی سفارش بھی کرے گا

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      چنئی: انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاونٹنٹس آف انڈیا (آئی سی اے آئی) نے پبلک سیکٹر کے پنجاب نیشنل بینک میں جویلر نیرو مودی کے ذریعہ 11,400کروڑ روپے سے زیادہ کی بے ضابطگیوں کا جائزہ لینے کے لئے اعلی سطحی گروپ قائم کیا ہے جو اصلاحاتی اقدامات کی سفارش بھی کرے گا۔آئی سی اے آئی نے آج ایک بیان جاری کرکے کہا کہ پی این بی میں ہوئے 11,400کروڑ روپے کے بے قاعدہ لین دین کی مختلف میڈیا رپورٹوں نے ادارہ کی توجہ اپنی طرف کھینچی ہے۔ اس میں مبینہ طورپر جویلر نیرو مودی نے پی این بی ممبئی برانچ سے غلط طریقہ سے لیٹر آف انڈرٹیکنگ (ایل او یو) حاصل کیا۔
      پی این بی گھپلہ سے وابستہ بے ضابطگیوں اور پیچیدگیوں کے پیش نظر آئی سی اے آئی اس میں ریگولیٹری کا کردار ادا کرے گا اور متعلقہ بنک، انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ(ای ڈی)، سیکورٹیز اینڈ ایکسچنج بورڈ آف انڈیا (سیبی) اور سی بی آئی سے اس معاملہ میں انکی رپورٹوں کو بھیجے جانے کی درخواست کی ہے۔
      بیان میں کہا گیا ہے کہ آئی سی اے آئی نے خود اس معاملہ میں اعلی سطحی گروپ قائم کیا ہے جو بینکنک نظام میں اصلاحات اور اس طرح کے واقعات کو روکنے کے لئے احتیاطی اور اصلاحی اقدامات پر تجاویز پیش کرے گا۔
      First published: