ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

سی اے اے۔ این آر سی پر بولے اسد الدین اویسی۔ گولی مارنی ہے تو میرے سینے پر مارو، میں کاغذ نہیں دکھاؤں گا

اسدالدین اویسی نے اتوار کو حیدرآباد میں ایک عوامی اجلاس میں کہا ’ جو مودی اور شاہ کے خلاف آواز اٹھائے گا وہ صحیح معنوں میں مرد مجاہد کہلائے گا۔ میں وطن میں رہوں گا، کاغذ نہیں دکھاؤں گا۔

  • Share this:
سی اے اے۔ این آر سی پر بولے اسد الدین اویسی۔ گولی مارنی ہے تو میرے سینے پر مارو، میں کاغذ نہیں دکھاؤں گا
اسد الدین اویسی

حیدرآباد۔ آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (AIMIM) کے صدر اسد الدین اویسی (Asaduddin Owaisi) نے شہریت قانون (CAA) اور قومی شہری رجسٹر (NRC) کو لے کر مودی حکومت کو چیلنج کیا ہے۔ سی اے اے اور این آر سی کو لے کر ہو رہے احتجاجی مظاہروں کے بیچ اویسی نے کہا’ چاہے کچھ بھی ہو جائے، میں کوئی کاغذ نہیں دکھانے والا۔ میں سینے پر گولی کھانے کے لئے تیار ہوں، لیکن وطن نہیں چھوڑوں گا۔ میں ہندوستان میں ہی رہوں گا‘۔


اسدالدین اویسی نے اتوار کو حیدرآباد میں ایک عوامی اجلاس میں کہا ’ جو مودی اور شاہ کے خلاف آواز اٹھائے گا وہ صحیح معنوں میں مرد مجاہد کہلائے گا۔ میں وطن میں رہوں گا، کاغذ نہیں دکھاؤں گا۔ کاغذ اگر دکھانے کی بات ہو گی تو سینہ دکھاؤں گا کہ مارو گولی۔ مارو گولی میرے سینے پر، کیونکہ میرے دل میں ہندوستان کی محبت ہے‘۔



اس سے پہلے وزیر اعظم مودی نے شاہین باغ میں شہریت قانون کے خلاف احتجاج کر رہیں خواتین کا معاملہ اٹھایا تھا۔ لوک سبھا میں وزیر اعظم مودی پر طنز کستے ہوئے اویسی نے کہا تھا کہ خود کو مسلم خواتین کا بھائی کہنے والے وزیر اعظم مودی اب ان کے دھرنے سے ڈرے کیوں ہوئے ہیں؟

دہلی کے شاہین باغ میں شہریت قانون کے خلاف پچھلے 57 دنوں سے دھرنا جاری ہے۔


اویسی نے این آر سی لانے پر کوئی فیصلہ نہیں ہونے سے متعلق حکومت کے بیان کا حوالہ دیا اور وزیر اعظم کو چیلنج کیا کہ وہ ایوان میں آ کر جواب دیں کہ کیا این پی آر اور این آر سی جڑے ہوئے ہیں یا نہیں۔
First published: Feb 10, 2020 11:51 AM IST