ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

بنگلورو میں بزم شاہین کا یوم تاسیس ، سماجی فاصلے کے ساتھ منعقد ہوئی تقریب

کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر تقریب میں شعرائے کرام سمیت 50 لوگوں کو ہی مدعو کیا گیا تھا ۔ سنیٹائزر، سماجی فاصلے، چہروں پر ماسک اور دیگر احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے یہ ادبی محفل منعقد ہوئی ۔

  • Share this:
بنگلورو میں بزم شاہین کا یوم تاسیس ، سماجی فاصلے کے ساتھ منعقد ہوئی تقریب
بنگلورو میں بزم شاہین کا یوم تاسیس ، سماجی فاصلے کے ساتھ منعقد ہوئی تقریب

ریاست کرناٹک کی ایک مشہور ادبی و ثقافتی تنظیم بزم شاہین نے آج اپنا یوم تاسیس منایا ۔ بنگلورو کے گلستان شادی محل میں سادگی کے ساتھ تاسیسی  مشاعرہ منعقد ہوا ۔ کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر تقریب میں شعرائے کرام سمیت 50 لوگوں کو ہی مدعو کیا گیا تھا ۔ سنیٹائزر، سماجی فاصلے، چہروں پر ماسک اور دیگر احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے یہ ادبی محفل منعقد ہوئی ۔ بزم شاہین کے صدر الحاج باباجی نے کہا کہ کورونا کی بیماری کے سبب آج پوری  انسانیت پریشان ہے۔ ایسا بھی نازک دور آئے گا ، کسی نے یہ سوچا نہ تھا ۔ لیکن حالات سے قطعی مایوس اور نا امید ہونے کی ضرورت نہیں ہے ۔ کورونا کی بیماری کا مقابلہ کرتے ہوئے مضبوط اور مصمم ارادوں کے ساتھ زندگی گزارنا ہے ۔ اس لئے ان حالات میں احتیاطی تدابیر کے ساتھ بزم شاہین کی سرگرمیاں جاری ہیں ۔


ہر سال 7 جولائی کو بزم شاہین اپنے یوم تاسیس کے موقع پر عظیم الشان کل ہند مشاعرہ منعقد کیا کرتی تھی ۔ اس مشاعرے کے انعقاد سے قبل اور انعقاد کے بعد خوب چرچے ہوا کرتے تھے ۔ ہزاروں کی تعداد میں لوگ مشاعرے میں شرکت کرتے تھے ۔ دیر رات تک مشاعرہ چلتا اور لوگ خوب محظوظ ہوتے ۔ لیکن اس بار بزم کے تاسیسی مشاعرے کی تصویر موجودہ حالات کی عکاسی کررہی تھی ۔ کورونا کے قہر کے درمیان انتہائی سادگی ، سماجی دوری کے ساتھ دوپہر 2 بجے سے شام 4 بجے تک تقریب منعقد ہوئی ۔ اس تاسیسی مشاعرہ کی صدارت معروف ادیب قاسم سہیل قریشی اور نظامت سہیل نظامی نے انجام دی ۔


کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر تقریب میں شعرائے کرام سمیت 50 لوگوں کو ہی مدعو کیا گیا تھا ۔
کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر تقریب میں شعرائے کرام سمیت 50 لوگوں کو ہی مدعو کیا گیا تھا ۔


قاسم سہیل قریشی نے کہا کہ ریاست کرناٹک میں اردو زبان ایک مشکل دور سے گزر رہی ہے۔ ریاست میں نئی حکومت بننے کے بعد اردو اکیڈمی کی اب تک تشکیل نہیں ہوئی ہے ۔ کورونا کی وبا اور لاک ڈاؤن سے حالات مزید خراب ہوئے ہیں ۔ مشاعرے اور ادبی محفلیں نہ ہونے کے سبب کئی شعرا اور ادبا معاشی تنگ دستی کا شکار ہوئے ہیں ۔ قاسم سہیل قریشی نے مطالبہ کیا کہ حکومت ایسے شاعروں اور ادیبوں کو ماہانہ وظیفہ جاری کرے ۔ معروف گلوکار اور شاعر نیاز الدین نیاز نے کہا کہ اردو اکیڈمی میں فنڈ موجود ہے ، ان حالات میں اردو اکیڈمی کو آگے آنا چاہئے ، ضرورت مند شاعروں اور ادیبوں کی مدد کرنا چاہئے ۔

بزم شاہین کے یوم تاسیس کے موقع پر یہ پیغام دیا گیا کہ اردو کے فروغ کیلئے ہر سطح پر کوششیں ہونی چاہئیں ۔  نوجوان نسل کو اردو زبان سکھانے اور اردو ادب کی جانب راغب کرنے کی ضرورت ہے ۔ اس کیلئے اردو انجمنوں ، تنظیموں اور اداروں کو فعال کردار ادا کرنا ہوگا ۔  بزم شاہین کے سکریٹری عزیز داغ نے کہا کہ یوم تاسیس کا مشاعرہ بھلے ہی محدود شعرا اور سامعین کے ساتھ منعقد ہوا ہو ،  لیکن سوشل میڈیا میں اس مشاعرے کا راست ٹیلی کاسٹ پیش کیا گیا ۔ بڑی تعداد میں لوگ اپنے اپنے گھروں میں بیٹھ کر مشاعرے سے لطف اندوز ہوئے ۔

حافظ محمد اکرام عرف الحاج باباجی اور دیگر نے ملکر سال 2007 میں بزم شاہین کی بنیاد رکھی ہے ۔ اردو زبان و ادب کے فروغ کے ساتھ ساتھ قومی یکجہتی ، فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو پروان چڑھانا بزم کا مقصد ہے ۔ بزم شاہین نے اب تک 37 کل ہند مشاعرے منعقد کئے ہیں ۔ بنگلورو کے علاوہ کولار، وانمباڑی اور چنئی مشاعرے ہوئے ہیں ۔ الحاج باباجی نے کہا کہ کرناٹک کے علاوہ اترپردیش ، دہلی ، پنجاب ، تمل ناڈو اور گوا میں بزم شاہین کی شاخیں موجود ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 07, 2020 11:24 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading