உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بنگلورو کے کیمپے گوڑا انٹرنیشنل ایئرپورٹ کو ملی بم سے اڑانے کی دھمکی، جانچ میں مصروف سکیورٹی ایجنسیاں

    Kempegowda International Airport Bengaluru: عہدیداروں نے بتایا کہ کیمپے گوڑا بین الاقوامی ہوائی اڈے کے تمام ٹرمینلز اور پوائنٹس پر سخت چیکنگ کی جارہی ہے۔ ابھی تک کوئی دھماکہ خیز مواد نہیں ملا ہے۔ پولیس نامعلوم کا سراغ لگانے کی کوشش کر رہی ہے۔

    Kempegowda International Airport Bengaluru: عہدیداروں نے بتایا کہ کیمپے گوڑا بین الاقوامی ہوائی اڈے کے تمام ٹرمینلز اور پوائنٹس پر سخت چیکنگ کی جارہی ہے۔ ابھی تک کوئی دھماکہ خیز مواد نہیں ملا ہے۔ پولیس نامعلوم کا سراغ لگانے کی کوشش کر رہی ہے۔

    Kempegowda International Airport Bengaluru: عہدیداروں نے بتایا کہ کیمپے گوڑا بین الاقوامی ہوائی اڈے کے تمام ٹرمینلز اور پوائنٹس پر سخت چیکنگ کی جارہی ہے۔ ابھی تک کوئی دھماکہ خیز مواد نہیں ملا ہے۔ پولیس نامعلوم کا سراغ لگانے کی کوشش کر رہی ہے۔

    • Share this:
      بنگلورو: ایک اجنبی نے کیمپے گوڑا بین الاقوامی ہوائی اڈے بنگلور کو (Kempegowda International Airport Bengaluru) فون کیا اور اسے بم سے اڑانے کی دھمکی دی۔ کے آئی اے (KIA) حکام نے بتایا کہ جمعہ کی علی الصبح 3:30 بجے ایک نامعلوم شخص نے ایئرپورٹ پولیس کنٹرول روم کے 112 نمبر پر کال کی۔ اس نے صرف 'بم دھمکا ہوگا' کہا اور کال کاٹ دی۔ پولیس اور سکیورٹی اہلکاروں نے فوری کارروائی کرتے ہوئے پورے ایئرپورٹ کا معائنہ کیا۔ بم اسکواڈ اور ڈاگ اسکواڈ کو بھی موقع پر طلب کر لیا گیا۔

      عہدیداروں نے بتایا کہ کیمپے گوڑا بین الاقوامی ہوائی اڈے کے تمام ٹرمینلز اور پوائنٹس پر سخت چیکنگ کی جارہی ہے۔ ابھی تک کوئی دھماکہ خیز مواد نہیں ملا ہے۔ پولیس نامعلوم کا سراغ لگانے کی کوشش کر رہی ہے۔ کیمپاگوڑا ہوائی اڈے کی انتظامیہ نے کہا، "سی آئی ایس ایف اور پولیس نے جمعہ کی صبح 7 بجے تک پورے احاطے کی مکمل چھان بین کی۔ سکیورٹی سخت کر دی گئی ہے۔‘ پولیس اسے ایک جعلی دھمکی کال کے طور پر دیکھ رہی ہے، پھر بھی احتیاط اور نگرانی کی جا رہی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: Azam Khan Release: دو سال بعد جیل سے رہا ہوئے اعظم خان، اکھلیش نے ٹویٹ کر کہہ ڈالی بڑی بات

      بتا دیں کہ گزشتہ ماہ بھی بنگلور کے 14 اسکولوں کو بم سے اڑانے کا میل بھیجا گیا تھا، جس کے بعد شہر میں ہلچل مچ گئی تھی۔ تحقیقات کے بعد پولیس کو پتہ چلا کہ اس جعلی میل کے تار کا تعلق شام اور پاکستان سے ہے۔ بنگلورو پولیس نے اس پیش رفت کو دہشت گردانہ سازش اور قوم کے خلاف سائبر حملے کے طور پر لیا تھا اور اس سلسلے میں انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) ایکٹ 66(ایف) کے تحت مقدمہ درج کرکے تحقیقات شروع کی تھی۔

       

      مزید پڑھئے: Beef: گائےکا گوشت بناجیل جانےکاسبب، آسام کےایک استادکوگوشت لانےاوردوستوں کوکھلانےپڑابھاری

      اسی طرح کی پیشرفت میں 13 مئی کو بھوپال کے کئی اسکولوں کو دھمکی آمیز ای میل بھیجے گئے، جس سے طلباء اور اسکول انتظامیہ کو کئی گھنٹوں تک گھبراہٹ کا سامنا کرنا پڑا۔ اسکولوں کو بھیجی گئی ای میل میں لکھا تھا، 'آپ کے اسکول میں 2 طاقتور بم پلانٹ ہیں۔ فوری طور پر پولیس کو کال کریں… یہ کوئی مذاق نہیں ہے، دہرائیں، یہ کوئی مذاق نہیں ہے۔ سینکڑوں زندگیاں موت کی تمازت میں لٹک رہی ہیں، جلدی سے کام کرو، کیونکہ ابھی بھی وقت ہے ورنہ سب کچھ ختم ہو سکتا ہے۔ یہ مت کہو کہ وارننگ نہیں دی گئی۔ اب سب کچھ صرف آپ پر منحصر ہے۔‘‘ اسکولوں نے اس سلسلے میں پولیس کو اطلاع دی۔ بھوپال پولس کی طرف سے گھنٹوں تلاش کے بعد بھی کوئی قابل اعتراض مواد نہیں ملا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: