உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دہلی والوں کیلئے بڑی خبر! بجلی کی سبسڈی جاری رکھنے کیلئے جولائی سے کرنا ہوگا یہ کام

     power subsidy scheme: عہدیداروں نے کہا کہ یہ فارم صارفین کو ڈیجیٹل اور فزیکل دونوں شکلوں میں 'ہاں' اور 'نہیں' کے اختیارات کے ساتھ دستیاب کرائے جائیں گے جس میں بجلی کے بل پر سبسڈی طلب کرنے یا یکم اکتوبر کے بعد اسے چھوڑنے کے بارے میں کیا جائے گا۔

    power subsidy scheme: عہدیداروں نے کہا کہ یہ فارم صارفین کو ڈیجیٹل اور فزیکل دونوں شکلوں میں 'ہاں' اور 'نہیں' کے اختیارات کے ساتھ دستیاب کرائے جائیں گے جس میں بجلی کے بل پر سبسڈی طلب کرنے یا یکم اکتوبر کے بعد اسے چھوڑنے کے بارے میں کیا جائے گا۔

    power subsidy scheme: عہدیداروں نے کہا کہ یہ فارم صارفین کو ڈیجیٹل اور فزیکل دونوں شکلوں میں 'ہاں' اور 'نہیں' کے اختیارات کے ساتھ دستیاب کرائے جائیں گے جس میں بجلی کے بل پر سبسڈی طلب کرنے یا یکم اکتوبر کے بعد اسے چھوڑنے کے بارے میں کیا جائے گا۔

    • Share this:
      دہلی کے لوگوں کو اب بجلی کے بل پر سبسڈی subsidy کے لیے خود سے ایک قدم آگے آنا پڑے گا، کیونکہ آپ کو سبسڈی چاہتے ہیں یا نہیں، آپ کو اس کی معلومات ایک فارم کے ذریعے حکومت کو دینی ہوگی۔ قومی راجدھانی میں بجلی کے صارفین کو بجلی کے بلوں پر دہلی حکومت کی سبسڈی اسکیم کو جاری رکھنے یا اس سے باہر نکلنے کے لیے اگلے مہینے سے ایک فارم بھرنا ہوگا۔ افسران نے یہ معلومات فراہم کیں۔

      عہدیداروں نے کہا کہ یہ فارم صارفین کو ڈیجیٹل اور فزیکل دونوں شکلوں میں 'ہاں' اور 'نہیں' کے اختیارات کے ساتھ دستیاب کرائے جائیں گے جس میں بجلی کے بل پر سبسڈی طلب کرنے یا یکم اکتوبر کے بعد اسے چھوڑنے کے بارے میں کیا جائے گا۔ آپ کو بتا دیں کہ دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے گزشتہ ماہ اعلان کیا تھا کہ یکم اکتوبر کے بعد بجلی سبسڈی صرف ان لوگوں کو دی جائے گی جو اس کا انتخاب کریں گے۔

      دہلی حکومت کے ایک سینئر افسر نے کہا، "محکمہ بجلی نے ایک تجویز تیار کی ہے کہ کس طرح سبسڈی حاصل کرنے یا معاف کرنے کے بارے میں صارفین کی رائے لی جائے گی۔
      سینئر افسر نے مزید کہا کہ اگلے ماہ سے صارفین اپنے بجلی کے بل کا فارم اپنی پرنٹ شدہ تفصیلات کے ساتھ حاصل کر سکتے ہیں، جس میں انہیں سبسڈی حاصل کرنے کے لیے 'ہاں' یا 'نہیں' لکھنا ہوگا۔ وہیں ساتھ ہی power distribution company discom اپنے آفیشل پورٹلز کے ذریعے بجلی کے صارفین کے ردعمل ڈیجیٹل فارمیٹ میں جمع کرے گی۔ عہدیداروں نے بتایا کہ دہلی میں 80 فیصد سے زیادہ صارفین اپنے بجلی کے بلوں کی ادائیگی ڈیجیٹل طور پر کرتے ہیں۔

      Donkey Milk Farming: انجینئر نے نوکری چھوڑ کھولی گدھی کے دودھ کی ڈیری، لاکھوں ہورہی کمائی



      یہی نہیں، حکومت کی جانب سے صارفین میں بیداری پیدا کرنے کے لیے ایک مہم شروع کرنے کا بھی منصوبہ ہے کہ انہیں یکم اکتوبر کے بعد سبسڈی صرف اس صورت میں ملے گی جب وہ اس کا مطالبہ کریں گے۔ اروند کیجریوال نے پہلے کہا تھا کہ صارفین کی طرف سے سرینڈر کی گئی سبسڈی سے بچا ہوا پیسہ دہلی کے اسکولوں اور اسپتالوں کی ترقی پر خرچ کیا جاسکتا ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: