உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیا آپ کے آدھار نمبر سے بھی خالی ہوسکتا ہے بینک اکاؤنٹ؟ جانیے کیا کہتا ہے UIDAI

    صرف آدھار نمبر سے کیا آپ کا بینک اکاونٹ خالی ہوسکتا ہے؟

    صرف آدھار نمبر سے کیا آپ کا بینک اکاونٹ خالی ہوسکتا ہے؟

    UIDAI نے بتایا کہ آدھار کے کسی بھی مبینہ غلط استعمال یا فراڈ کی کوشش کی وجہ سے کسی بھی طرح کی دھوکہ دہی یا مالی نقصان یا ذاتی تفصیلات کی چوری کا سامنا نہیں کرنا پڑا ہے۔

    • Share this:
      آدھار کارڈ ہماری زندگی کا اہم حصہ بن چکا ہے۔ آدھار کارڈ کے بغیر ہمارے کئی ضروری کام مکمل نہیں پاتے ہیں۔ اس کے علاوہ کئی کام تو ایسے ہیں، جو آدھار کارڈ کے بغیر شروع بھی نہیں ہوسکتے۔ اس لئے آج ے وقت میں ایک عام شہری سے لے کر ملک کی نامور شخصیت کو بھی اپنا کام کرانے کے لئے آدھار کارڈ کی ضرورت ہوتی ہے۔ آپ کے آدھار کارڈ پر لکھے ہوئے 12 نمبرس میں آپ کی وہ تمام تفصیلات موجود ہوتی ہیں، جو آپ کے پہچان کا ثبوت ہے۔

      کیا آدھار نمبر سے خالی کیا جاسکتا ہے آپ کا بینک اکاونٹ؟
      آج کے دور میں ہم سبھی کے بینک اکاونٹ، ہمارے آدھار کارڈ سے لنک ہوتے ہیں۔ ایسے میں کئی لوگوں کے ذہن میں سوال اُٹھتا ہے کہ کیا آدھار نمبر سے فراڈ کیا جاسکتا ہے؟ دراصل، سبھی چھوٹی بڑی ضڑورتوں کے لئے ہمیں اپنا آدھار کارڈ دینا ہوتاہے۔ ایسے میں آپ کے آدھار کارڈ کی کاپی جگہ جگہ پہنچ جاتی ہے تو کیا کوئی فراڈ آپ کے آدھار نمبر سے آپ کے بینک اکاونٹ میں نقب لگا کر سارے پیسے اُڑا سکتا ہے؟

      یہ ایک ایسا سوال ہے جو ہم سبھی کے ذہن میں کبھی نہ کبھی ضرور آتا رہتا ہے۔ اس لئے آدھار کی آفیشل ویب سائٹ UIDAI پر ہم سبھی کے کنفیوژن کو دور کرنے کے لئے اس کا جواب بھی دستیاب ہے۔ UIDAI کا کہنا ہے کہ جس رح صرف آپ کا بینک اکاونٹ نمبر جاننے سے کوئی آپ کے اکاونٹ سے پیسے نہیں نکال سکتا ہے، اُسی طرح صرف آپ کا آدھار نمبر جاننے سے کوئی بھی آدھار سے جڑے بینک اکاونٹ سے پیسے نہیں نکال سکتا ہے۔

      ابھی تک سامنے نہیں آئے ادھار سے جڑے فراڈ کے کیسیز
      اس معاملے پر UIDAI کا کہنا ہے کہ جیسے بینک اکاونٹ سے پیسے نکالنے کے لئے دستخط، ڈیبٹ کارڈ، پن نمبر، او ٹی پی و دیگر کی ضرورت ہوتی ہے، ویسے ہی آدھار کے ذریعے سے آپ کے آدھار سے جڑے بینک اکاونٹ سے پیسے نکالنے کے لئے آپ کے رجسٹرڈ موبائل پر آپ کا فنگر پرنٹ، IRIS یا او ٹی پی کی ضرورت ہوتی ہے جو صرف آپ کے موبائل نمبر پر ہی بھیجا جاتا ہے۔

      UIDAI نے بتایا کہ آدھار کے کسی بھی مبینہ غلط استعمال یا فراڈ کی کوشش کی وجہ سے کسی بھی طرح کی دھوکہ دہی یا مالی نقصان یا ذاتی تفصیلات کی چوری کا سامنا نہیں کرنا پڑا ہے۔ خصوصی طور سے، آدھار پلیٹ فارم پر روزانہ 3 کروڑ سے زیادہ سرٹیفکیشن کیے جاتے ہیں۔ پچھلے 8 سالوں میں اب تک 3,012.5 کروڑ سے زیادہ سرٹیفکیشن (28مئی 2019) کامیابی کے ساتھ کیے جاچکے ہیں۔

      تو پھر جہاں ضرور پڑے، بے فکر ہو کر کیجئے آدھار کا استعمال
      آدھار کو زیادہ محفوظ اور زیادہ فائدہ بنانے کے لئے UIDAI اپنے سیکوریٹی سسٹم اور سیفٹی میکنزم کا اپ گریڈ اور ریویو کرتا رہتا ہے۔ فی الحال، آدھار ڈیٹا بیس سے بائیومیٹرک ڈیٹا کی خلاف ورزی کا ایک بھی کیس سامنے نہیں آیا ہے۔ اس لئے، لوگوں کو آدھار ایکٹ 2016 کے پروویژنس کے تحت ضرورت پڑنے پر اپنی پہچان ثابت کرنے کے لئے بنا کسی ڈر اور کنفیوژن کے آدھار کا استعمال کرنا چاہیے۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: