ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

تلنگانہ: عیدگاہ میں نہیں ادا کرپائیں گے نماز عیدالفطر، لاک ڈاون سے متعلق یہاں پڑھیں تفصیلات

کورونا وائرس کےخلاف لڑائی تلنگانہ کو اس لحاظ سے امتیازحاصل ہےکہ مرکزی حکومت کے اعلان سے پہلے ہی ریاست میں لاک ڈاؤن کے نفاذکا فیصلہ کیا گیا تھا۔

  • Share this:
تلنگانہ: عیدگاہ میں نہیں ادا کرپائیں گے نماز عیدالفطر، لاک ڈاون سے متعلق یہاں پڑھیں تفصیلات
کورونا وائرس کےخلاف لڑائی تلنگانہ کو اس لحاظ سے امتیازحاصل ہےکہ مرکزی حکومت کے اعلان سے پہلے ہی ریاست میں لاک ڈاؤن کے نفاذکا فیصلہ کیا گیا تھا۔

حیدرآباد: کورونا وائرس کےخلاف لڑائی تلنگانہ کو اس لحاظ سے امتیازحاصل ہےکہ مرکزی حکومت کے اعلان سے پہلے ہی ریاست میں لاک ڈاؤن کے نفاذکا فیصلہ کیا گیا تھا۔ فی الحال صورتحال یہ ہےکہ وزیراعلیٰ تلنگانہ نے مرکزی حکومت کی جانب سے دی گئی لاک ڈاؤن کے تیسرے مرحلے کےدورانیہ کو مزید طویل کرتے ہوئے یہ اعلان کیا کہ ریاست میں لاک ڈاؤن 29 مئی تک جاری رہےگا۔ کابینہ کے اجلاس کے بعد پریس سے بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ چندرا شیکھر راؤ نےکہا کہ لاک ڈاؤن کے دوران کسی بھی قسم کے مذہبی اجتماع کی اجازت نہیں دی جائے گی، جہاں تک ریاست تلنگانہ کی صورتحال ہے، اب یہ واضح ہوگیا ہےکہ یہاں 23 یا 24 مئی کو منعقدہ عید الفطرکی نماز عیدگاہ کے بجائےگھر پر ادا کرنی ہوگی۔


اس طرح حکومت تلنگانہ نے عید الفطر کے سلسلہ میں  عوام کو یہ بھی پیغام دیا گیا ہے کہ وہ عید کے لئے بازار کھولنے کو تیار نہیں ہیں، لہٰذا عوام بھی عیدکی تیاری اور خریداری کےلئے اپنے گھروں سے باہر نکلنےکی کوشش نہ کریں۔ حالانکہ ریاستی حکومت نے چند شعبوں جیسے زراعت اور تعمیرات کےلئے اورینج اورگرین زون میں اجازت دے دی ہے اور اس سے متعلق سیمنٹ اسٹیل اور الیکٹریک کےساز و سامان کی دوکانیں بھی کھلی رکھی جا سکتی ہیں، لیکن ملبوسات کپڑے جوتے اور انسانی آرائش کے سازسامان کی تجارت کی اجازت نہیں ہے۔


تلنگانہ میں لاک ڈاؤن 29 مئی تک جاری رہےگا۔ فائل فوٹو
تلنگانہ میں لاک ڈاؤن 29 مئی تک جاری رہےگا۔ فائل فوٹو


ریاست کے گرین اور اورنج زون میں شراب کی دکانیں بھی کھولنےکی اجازت دی گئی ہے۔ حالانکہ پورے ملک میں شراب کی دوکانوں پر جس طرح مہ نوشوں کا ہجوم دیکھا جارہا ہے اس پر سوالیہ نشان کھڑے کئےجا رہے ہیں۔ جبکہ ریڈ زون میں شامل  ریاست کے 6 اضلاع میں کسی بھی قسم کی کوئی تجارتی سرگرمی کی اجازت نہیں ہے۔ حالانکہ تلنگانہ میں کورونا کا اثر دوسری ریاستوں کے مقابلے قدرے کم ہے، لیکن ریاست کے صدر مقام حیدرآباد اور اس سے مضافاتی اضلاع رنگا ریڈی میڑچل اور وقار آباد ابھی بھی ملک بھر میں سب سے زیادہ متاثرہ یعنی ریڈ زون میں شامل ہیں۔

تلنگانہ کے وزیراعلیٰ چندرا شیکھر راؤ نےکہا کہ لاک ڈاؤن کے دوران کسی بھی قسم کے مذہبی اجتماع کی اجازت نہیں دی جائے گی: فائل فوٹو
تلنگانہ کے وزیراعلیٰ چندرا شیکھر راؤ نےکہا کہ لاک ڈاؤن کے دوران کسی بھی قسم کے مذہبی اجتماع کی اجازت نہیں دی جائے گی: فائل فوٹو


تلنگانہ میں اب تک ملے تقریباً 1100 کورونا متاثرین میں سے67 فیصدکیسیزکا تعلق انہیں اضلاع سے ہے اور یہاں سے مثبت کیسیز کا پتہ چلنےکا سلسلہ ابھی بھی جاری ہے۔ ریاستی حکومت کا ماننا ہےکہ وہ کورونا پرکنٹرول کےلئےکسی قسم کی ڈھیل نہیں دے سکتی، اس لئے پوری ریاست کےلئے 29 مئی تک لاک ڈاؤن میں توسیع کی جا رہی ہے، جس میں رات کا کرفیو بھی شامل ہے۔ کورونا سے لڑائی کے ابتدائی ایام میں وزیر اعظم مودی نے جب 22 مارچ کو 14 گھنٹےکی ’جنتا کرفیو’ کا اعلان کیا تو چیف منسٹر تلنگانہ نے اس کے دورانیہ میں مزید 10 گھنٹوں کا اضافہ کرتے ہوئے ریاست میں اس دن 24 گھنٹے کےکرفیوکا نفاذ کیا تھا۔ اسی دن جنتا کرفیو کے اختتام سے پہلے ہی کے سے آر نے ریاست تلنگانہ میں 31 مارچ تک لاک ڈاؤن کا اعلان کیا جبکہ مرکزی حکومت نے 24 مارچ کو اعلان کیا کہ وہ ملک بھر کے لئے 25 مارچ سے 14 اپریل تک لاک ڈاؤن کا نفاذ کرے گی۔

اس کے بعد ریاستی حکومت نے مرکزی حکومت کے احکامات کی پیروی کرتے ہوئے11 اپریل کو یہ فیصلہ کیا کہ تلنگانہ میں لاک ڈاؤن  30 اپریل تک جاری رہےگا۔ مرکزی حکومت نے لاک ڈاؤن کے دوسرے مرحلے کے تحت اس کو مزید بڑھا کر اس کی حد کو تین مئی تک طوالت دی تھی۔ اسی دوران کے سے آر نے 19 اپریل کو ریاستی کابینہ کے اجلاس کے بعد تلنگانہ میں لاک ڈاؤن کو  7 مئی تک توسیع کا اعلان کیا۔  مرکزی حکومت نے  لاک ڈاؤن  کے ضمن میں تیسرا اعلان کرتے ہوئے اسے 17 مئی تک بڑھانےکا فیصلہ کیا۔ مرکزی حکومت کے لاک ڈاؤن 3 کی میعاد ختم ہونے سے پہلے ہی 5 مئی کو چندرا شیکھر راؤ نے 7 گھنٹے طویل کابینہ کا اجلاس منعقدکیا اور اس کے بعد پریس کانفرنس میں یہ کہا کہ ریاست میں لاک ڈاؤن 29 مئی تک جاری رہےگا۔
First published: May 06, 2020 10:14 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading