உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک اردو اکیڈمی کی انگریزی میڈیم سے پڑھنے والے بچوں کواردوادب سے جوڑنے کی ایک نئی پہل

    طلبا میں عام طور پر حمد، نعت، قوالی کےمقابلے منعقد ہوتے ہیں۔ ان روایتی مقابلوں سے ہٹ کرکرناٹک اردو اکیڈمی نے طلبا کے لیے نئے مقابلوں کاآغاز کیا ہے۔

    طلبا میں عام طور پر حمد، نعت، قوالی کےمقابلے منعقد ہوتے ہیں۔ ان روایتی مقابلوں سے ہٹ کرکرناٹک اردو اکیڈمی نے طلبا کے لیے نئے مقابلوں کاآغاز کیا ہے۔

    طلبا میں عام طور پر حمد، نعت، قوالی کےمقابلے منعقد ہوتے ہیں۔ ان روایتی مقابلوں سے ہٹ کرکرناٹک اردو اکیڈمی نے طلبا کے لیے نئے مقابلوں کاآغاز کیا ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

      بنگلورو۔  لوگوں کی شکایت رہتی ہے کہ اردوکا ادبی سرمایہ نوجوان نسل سے دورہوتا جارہا ہے۔ لیکن اردوزبان کی دکھتی ہوئی اس رگ پرآخرکون ہاتھ رکھے؟ اس اہم مسئلہ کودیکھتے ہوئے کرناٹک اکیڈمی نے ایک نئی پہل کا آغاز کیا ہے۔  انگریزی میڈیم سے پڑھنے والے بچوں کواردوادب سے جوڑنے کی ایک کوشش بنگلورو میں دیکھنے کوملی ہے۔


      طلبا میں عام طور پر حمد، نعت، قوالی کےمقابلے منعقد ہوتے ہیں۔ ان روایتی مقابلوں سے ہٹ کرکرناٹک اردو اکیڈمی نے طلبا کے لیے نئے مقابلوں کاآغاز کیا ہے۔ یہ مقابلے ہیں اردو املا، اردو خوشخط، اردو تلفظ اورلطیفہ گوئی ۔ بنگلورو کے نائینا ہال میں منعقدہ تقریب میں بچوں نےاشعار، لطیفوں، مقالموں پرمشق کرنےکے بعد اسٹیج پراپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ  کیا۔ تقریب میں بچوں کے شاعر حافظ کرناٹکی کی سرپرستی میں تربیت پانے والےطلبا کے درمیان بیت بازی کا مقابلہ ہوا۔ دلچسپ بات یہ رہی  کہ ان مقابلوں میں زیادہ ترانگریزی میڈیم کے طلبا نے حصہ لیا۔

      بنگلورو کے علاوہ شکاری پور کے طلبا نے بھی مقابلوں میں شرکت کی۔اردو اکیڈمی کے صدر عزیزاللہ بیگ کی صدارت میں منعقدہ اس تقریب میں ڈاکٹرحلیمہ فردوس کی کتاب  ’ بچوں کی دھنک رنگ دنیا‘  اور منیراحمد جامی کی کتاب ’ معصومیاں‘ کا رسم اجرا عمل میں آیا۔ تقریب میں کہا گیا کہ نوجوان نسل کواردو ادب کی جانب راغب کیا جائے تاکہ اردو کے مستقبل پرکوئی آنچ نہ آنے پائے۔

      First published: