உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    متنازع بیان پر کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نے مانگی معافی

    بنگلورو : کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نے بھوپال میں دئے اپنے متنازعہ بیان کیلئے معافی مانگ لی ۔ فوزیہ چودھری کوقابل اعتراض بیان کے بعد چوطرفہ تنقید اور شدید مخالفت کا سامنا کرناپڑھ رہاتھا۔

    بنگلورو : کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نے بھوپال میں دئے اپنے متنازعہ بیان کیلئے معافی مانگ لی ۔ فوزیہ چودھری کوقابل اعتراض بیان کے بعد چوطرفہ تنقید اور شدید مخالفت کا سامنا کرناپڑھ رہاتھا۔

    بنگلورو : کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نے بھوپال میں دئے اپنے متنازعہ بیان کیلئے معافی مانگ لی ۔ فوزیہ چودھری کوقابل اعتراض بیان کے بعد چوطرفہ تنقید اور شدید مخالفت کا سامنا کرناپڑھ رہاتھا۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

      بنگلورو : کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نے بھوپال میں دئے اپنے متنازعہ بیان کیلئے معافی مانگ لی ۔ فوزیہ چودھری کوقابل اعتراض بیان کے بعد چوطرفہ تنقید اور شدید مخالفت کا سامنا کرناپڑھ رہاتھا۔


      میڈیا کی خبروں کے مطابق فوزیہ چودھری نے قرآن کی دو آیتوں کو متنازع قرار دیتے ہوئے ان کا مذاق اڑايا ۔ یہ بات انہوں نے جمعہ کو اردو اکیڈمی کے ایک روزہ اردوقومی كنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ ان کے اس بيان پر بھوپال سمیت ملک بھر کے مذ ہبی اور ادبی حلقے نے مذمت کی اور اس طرح کے بیان کرنے والوں پر سخت قدم اٹھانے کی بات کہی ۔


      ا س کے بعد کرناٹک اردو اکیڈمی کی صدرڈاکٹر فوزیہ چودھری نےاپنے متنازع بیان پرمعذرت کا اظہار کیاہے۔ بنگلورو میں دارالعلوم شاہ ولی اللہ میں منعقدہ علما کی ایک نشست میں ڈاکٹرفوزیہ چودھری نےاپنے متنازع بیان کے سلسلے میں وضاحت پیش کی۔


      فوزیہ چودھری نے کہاکہ پٹنہ میں ہوئے ایک کنونشن میں اُنہوں نے ایک انگریزی کتاب کا حوالہ دیاتھا۔ انہوں نے اپنے طور پر اسلام کے متعلق کوئی متنازع بات نہیں کہی۔

      First published: