ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

 آن لائن گیمنگ فراڈ میں ملوث چینی شہری سمیت چار گرفتار

Online Gaming Fraud : پولیس کی تحقیقات کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا کہ سوشل میڈیا ایپ ٹیلیگرام کے ذریعہ گیمنگ کے خواہش مند افراد کو جوڑا جاتا تھا ۔ اس مقصد کے لیے ٹیلیگرام پر بنائے گئے گروپس میں صرف انہیں افراد کو شامل کیا جاتا تھا ، جنہیں اس گروپ میں پہلے سے شامل ممبران یا گروپ ایڈمن سفارش کرے ۔

  • Share this:
 آن لائن گیمنگ فراڈ میں ملوث چینی شہری سمیت چار گرفتار
 آن لائن گیمنگ فراڈ میں ملوث چینی شہری سمیت چار گرفتار

آن لائن گیمنگ میں دھوکہ دہی سے متاثر دو شکایتوں پر کارروائی کرتے ہوئے حیدرآباد پولیس نے چین سے چلائے جانے والے ریکٹ کا پردہ فا ش کیا ہے ۔ شکایت کنندگان کے مطابق ایک کو آن لائن گیمز میں  97000 اور دوسرے کو 164000 روپے سے ہاتھ دھونا پڑا تھا ۔ دونوں کی یہ شکایت تھی کہ انہیں بیٹنگ کی لالچ کے ذریعہ دھوکہ دیا گیا ہے ۔ پولیس نے اس سلسلہ میں تلنگانہ گیمنگ ایکٹ کے تحت کیس رجسٹر کرتے ہوئے کاروائی کا آغاز کیا اور تحقیقات کے بعد نئی دہلی سے چار افراد کو گرفتار کیا ، جس میں ایک چینی شہری بھی شامل ہے ۔


پولیس کی تحقیقات کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا کہ سوشل میڈیا ایپ ٹیلیگرام کے ذریعہ گیمنگ کے خواہش مند افراد کو جوڑا جاتا تھا ۔ اس مقصد کے لیے ٹیلیگرام پر بنائے گئے گروپس میں صرف انہیں افراد کو شامل کیا جاتا تھا ، جنہیں اس گروپ میں پہلے سے شامل ممبران یا گروپ ایڈمن  سفارش کرے ۔ اس طرح گروپ میں نئے ممبران کو شامل کروانے پر کمیشن بھی دیا جاتا تھا ۔ انہیں گروپس میں ایڈمن ان ویب سائٹس کا پتہ بتاتا تھا جن پر آن لائن گیمز کھیلتے ہوئے بیٹنگ کی جاسکتی ہے ۔ روزآنہ کی بنیاد پر تبدیلی کرتے ہوئے گروپ میں ہر روز ایک  گیمنگ ویب سائٹ کا انکشاف کیا جاتا ہے اور خاص طریقہ کے کھیل 'كلر پرڈکشن' کے ذریعہ گیمرز مختلف رنگوں پر بیٹنگ لگا سکتے ہیں ۔


پولیس کی تحقیق میں یہ پتہ چلا کہ اس معاملہ میں لین دین کے لیے ' لنک يون'' ڈوکی پے ' اور ' اسپاٹ پے ' اور اس جیسے مزید پانچ  پیمنٹ گیٹ ویز کا استعمال کیا جاتا ہے ۔ ہندوستان میں ادائیگی ' پے ٹی ایم ' اور ' کیش فری '  کے ذریعہ کی جاتی ہے ۔ اس گیمنگ اور  بیٹنگ معاملہ کے ویب سائٹس کلاوڈ سرورز چین کے باہر  امریکہ میں رکھے گئے ہیں ۔ جبکہ انہیں چین سے چلایا جاتا ہے اور ان تمام سائٹس چلانے والی کمپنیوں کو ' بیجنگ ٹی پاؤر ' کنٹرول کرتی ہے ۔ تحقیقات میں اب تک اس کے ذریعہ گیارہ سو کروڑ کی ادائیگیوں کا پتہ چلا ہے ۔ کمشنر آف پولیس حیدرآباد انجنی کمار نے اس کیس کی تفصیلات سے واقف کروایا ۔



دہلی سے جن چار ملزمین کو پکڑا گیا ہے ، ان میں چینی شہری یاہ ہاؤ اور ہندوستانی دھیرج سرکار ، انكت کپور، نیرج تولی شامل ہیں ۔ گزشتہ کچھ عرصہ میں ملک کے مختلف حصوں میں آن لائن گیمز میں پیسہ گنواتے ہوئے خودکشی کرنے کے واقعات پیش آئے تھے ۔ گیمنگ اور بیٹنگ کے اس کیس  کی آگے کی تحقیق کو پولیس ان واقعات کے تناظر میں بھی جانچ رہی ہے ۔ یہ بھی دیکھا جا رہا ہے کہ کیا یہ ریکٹ کسی اور آن لائن دھوکہ دہی میں ملوث ہے ؟  یہ بھی پتہ چلا کہ اس کیس میں ملوث کمپنیوں کے خلاف ملک بھر میں 28 شکایتیں درج ہیں ۔  کمشنر آف پولیس حیدرآباد انجنی کمار اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ میں موجود گیمنگ ایکٹ کی وجہ سے ہی یہاں کی گئی شکایت پر تیزی سے تحقیقات اور گرفتاریاں ممکن ہو سکیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Aug 13, 2020 11:53 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading