உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پلوامہ حملہ: شوہر کا فون اٹھا نہیں پائی بیوی، پھر آئی شہادت کی خبر

     شہید جوان گرو کی بیوی نے شوہر کی شہادت پر سخت درعمل دیا ہے۔ انہوں نے حکومت سے کہا، ’’ ان تمام (دہشت گردوں) کو ویسے ہی مار ڈالو جیسے انہوں نے میرے شوہر کو مارا ہے‘‘۔

    شہید جوان گرو کی بیوی نے شوہر کی شہادت پر سخت درعمل دیا ہے۔ انہوں نے حکومت سے کہا، ’’ ان تمام (دہشت گردوں) کو ویسے ہی مار ڈالو جیسے انہوں نے میرے شوہر کو مارا ہے‘‘۔

    شہید جوان گرو کی بیوی نے شوہر کی شہادت پر سخت درعمل دیا ہے۔ انہوں نے حکومت سے کہا، ’’ ان تمام (دہشت گردوں) کو ویسے ہی مار ڈالو جیسے انہوں نے میرے شوہر کو مارا ہے‘‘۔

    • Share this:
      جموں و کشمیر کے پلوامہ میں فدائین  حملہ میں کرناٹک کے رہنے والے سی آر پی ایف جوان ایچ گرو بھی شہید ہوئے ہیں۔ ان کی بیوی نے شوہر کی شہادت پر سخت درعمل دیا ہے۔ انہوں نے حکومت سے کہا، ’’ ان تمام (دہشت گردوں) کو ویسے ہی مار ڈالو جیسے انہوں نے میرے شوہر کو مارا ہے‘‘۔

      گرو کرناٹک کے مانڈیا ضلع کے مڈور کے رہنے والے تھے۔ پلوامہ میں جمعرات کے روز فدائین حملہ میں سی آر پی ایف کے 40 جوان شہید ہوئے تھے۔ یہ حملہ دہشت گرد تنظیم جیش محمد نے کیا تھا۔

      نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے گرو کی بیوی کویتا نے کہا کہ انہیں شوہر کے شہید ہونے کی خبر رات میں 11 بجے کے بعد ملی۔ روتے ہوئے انہوں نے  بتایا کہ، ’’ مجھے کل میرے شوہر کا فون آیا تھا لیکن میں اسے اٹھا نہیں پائی کیوں کہ میں کسی کام میں لگی ہوئی تھی۔ جب میں نے واپس فون کیا تو ان کا فون پہنچ سے باہر آرہا تھا۔ میرے پاس ان سے بات کرنے کا آخری موقع تھا لیکن میری قسمت بھی اتنی ہی خراب بھی جتنی کی میرے شوہر کی‘‘۔

      کویتا نے مزید کہا کہ، ’’ مجھے میرے شوہر چاہئے۔ جو لوگ سرحدوں کی حفاظت کرتے ہیں وہ ہی مرتے رہیں گے تو پھر انہیں ان کے گھر بھیج دیجیئے۔ کم از کم انہیں اپنے اہل خانہ کی دیکھ بھال تو کرنے دیجیئے‘‘۔
      انہوں نے کہا کہ گرو سری نگر میں تھے اور انہوں نے بتایا نہیں تھا کہ وہ پلوامہ جا رہے ہیں۔ کویتا کے مطابق، ’’ وہ سرحد کی سکیورٹی کے دوران آنے والی تمام پریشانیوں کے بارے میں انہیں بتایا کرتے تھے۔ انہوں نے ملک کے متعدد حصوں میں خراب حالات میں کام کیا۔ ملک کی حفاظت کرنے کے لئے مجھے میرے شوہر پر فخر ہے۔ لیکن  جب انہیں اس کی ضرورت تھی تب انہیں ہی تحفظ نہیں ملا‘‘۔ انہوں نے بار بار دہشت گردوں کو مارنے کا مطالبہ کیا۔

      ریاست کے وزیر سی ایس پٹوراج نے جمعہ کو اعلان کیا کہ کویتا کو سرکاری نوکری دی جائےگی۔

      First published: