உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Hijab Case: ’منگلور مسلمز‘کےایڈمن ودیگرکے خلاف مقدمہ درج، جج کےخلاف توہین آمیز تبصرہ کاالزام

    Karnataka Hijab Row: بنگلورو سمیت کرناٹک کے نو اضلاع میں دفعہ 144 نافذ، نعرے بازی اور تقریر پر پابندی(Image: PTI)

    Karnataka Hijab Row: بنگلورو سمیت کرناٹک کے نو اضلاع میں دفعہ 144 نافذ، نعرے بازی اور تقریر پر پابندی(Image: PTI)

    نیوز 18 کے مطابق شکایت میں کہا گیا ہے کہ عتیق شریف نے 12 فروری کو ایک جج کے خلاف توہین آمیز مواد پوسٹ کیا جس میں ان کی ساکھ اور دیانت پر سوالیہ نشان لگایا گیا۔ ایک پولیس افسر نے بتایا کہ جن لوگوں نے جج کے خلاف پوسٹ کو پسند کیا تھا ان پر تعزیری کارروائی بھی ہو سکتی ہے۔ یہ واقعہ کنڑ اداکار چیتن کمار اہنسا کے اسی جج کے خلاف توہین آمیز ریمارکس کے بعد سامنے آیا ہے۔

    • Share this:
      ایک فیس بک پیج ’منگلور مسلمز‘ (Mangalore Muslims) کے ایڈمنسٹریٹر اور ایک دوسرے شخص کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے جس نے حجاب کیس (hijab case) کی سماعت کرنے والے کرناٹک ہائی کورٹ (Karnataka High Court) کے تین ججوں میں سے ایک کے خلاف پوسٹ کیا تھا۔ بنگلورو ساؤتھ ڈویژن کے سائبر کرائم ڈویژن نے 23 فروری کو بنگلورو سے تعلق رکھنے والے عتیق شریف اور ’منگلور مسلمز‘ کے ایڈمنسٹریٹر کے خلاف اپنے طور پر ایک کیس درج کیا تھا، جو حال ہی میں سامنے آیا تھا۔

      شکایت میں کہا گیا ہے کہ عتیق شریف نے 12 فروری کو ایک جج کے خلاف توہین آمیز مواد پوسٹ کیا جس میں ان کی ساکھ اور دیانت پر سوالیہ نشان لگایا گیا۔ ایک پولیس افسر نے بتایا کہ جن لوگوں نے جج کے خلاف پوسٹ کو پسند کیا تھا ان پر تعزیری کارروائی بھی ہو سکتی ہے۔ یہ واقعہ کنڑ اداکار چیتن کمار اہنسا کے اسی جج کے خلاف توہین آمیز ریمارکس کے بعد سامنے آیا ہے جسے گرفتار کر کے عدالتی تحویل میں بھیج دیا گیا تھا۔ حجاب کیس کی سماعت کے لیے خصوصی طور پر تشکیل دی گئی تین رکنی بنچ میں چیف جسٹس ریتو راج اوستھی، جسٹس جے ایم خازی اور جسٹس کرشنا ایس ڈکشٹ شامل ہیں۔

      یہ بنچ ساحلی ضلع اڈوپی کی کچھ مسلم لڑکیوں کے عدالت سے رجوع ہونے کے بعد تشکیل دی گئی تھی اور کہا گیا تھا کہ انہیں حجاب پہننے کی وجہ سے کالج میں داخلے سے منع کیا گیا ہے۔ لڑکیاں یہ بھی چاہتی تھیں کہ حکومتی حکم نامے میں کسی بھی ایسے کپڑے پر پابندی لگائی جائے جس سے امن، ہم آہنگی اور امن عامہ کو نقصان پہنچے۔

      حکومت کا حکم کرناٹک کے مختلف حصوں میں تعلیمی اداروں کے کیمپس میں کشیدگی کے بعد آیا کیونکہ یہ حجاب بمقابلہ زعفرانی اسکارف نکلا، اس طرح فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا ہوئی۔ ہائی کورٹ نے کیس کی سماعت کی ہے اور حکم التوا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: