உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اتر پردیش میں تاج محل سے ’Tejo Mahalaya‘ کا تلفظ کیسے زور پکڑا، کیا ہیں اس کے تاریخی حقائق؟

    اس فورس میں تقریباً ایک درجن انسپکٹر جنرل (آئی جی) رینک کے افسران ہیں

    اس فورس میں تقریباً ایک درجن انسپکٹر جنرل (آئی جی) رینک کے افسران ہیں

    درخواست گزاروں نے کہا کہ عدالت کو ہندو عقیدت مندوں کو یادگار کے اندر "درشن" اور "آرتی" کرنے کی اجازت دینی چاہئے، جہاں فی الحال صرف مسلم عقیدت مندوں کو ہی مسجد میں نماز ادا کرنے کی اجازت ہے جو عالمی ثقافتی ورثہ کی یادگار سے باہر ہے۔ انہوں نے وہاں بند کمرے کھولنے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

    • Share this:
      سال 2015 کے موسم گرما میں سات درخواست گزاروں کے ایک گروپ نے آگرہ میں سول جج (سینئر ڈویژن) کے سامنے ایک عرضی دائر کی۔ کیس نمبر 356 تمام وکلاء کی طرف سے دائر کیا گیا۔ جو کہ ایک غیر معمولی سوال تھا۔ جس میں کہا گیا کہ ہندو عقیدت مندوں کو تاج محل کے احاطے تک عبادت کے لیے رسائی کی اجازت دیں کیونکہ 16ویں صدی کی مغلیہ یادگار اصل میں شیو تھی۔ جو تیجو محلیہ (Tejo Mahalaya) نامی مندر تھی۔

      درخواست گزاروں نے کہا کہ عدالت کو ہندو عقیدت مندوں کو یادگار کے اندر "درشن" اور "آرتی" کرنے کی اجازت دینی چاہئے، جہاں فی الحال صرف مسلم عقیدت مندوں کو ہی مسجد میں نماز ادا کرنے کی اجازت ہے جو عالمی ثقافتی ورثہ کی یادگار سے باہر ہے۔ انہوں نے وہاں بند کمرے کھولنے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

      یہ عرضی سری اگریشور مہادیو ناگناتھیشور ویراجمان تیجو محلیہ مندر پیلس کے نام پر دائر کی گئی تھی، جس کے اگلے دوست (Next friend) ہری شنکر جین، مرکزی درخواست گزار تھے۔ اگلا دوست کسی ایسے شخص کا قانونی نمائندہ ہوتا ہے جو براہ راست سوٹ برقرار رکھنے سے قاصر ہو۔

      ہری شنکر جین نے کہا کہ کم از کم 109 آثار قدیمہ کی خصوصیات اور تاریخی شواہد موجود ہیں جو کسی بھی شک و شبہ سے بالاتر ہیں کہ سوٹ پراپرٹی ایک ہندو مندر ہے۔ مرکزی عمارت کا ڈھانچہ سنگ مرمر کے پلیٹ فارم پر مربع ترتیب میں ہے اور اس کے باہر اور اندر سے آٹھ چہرے ہیں۔ مشرق، مغرب اور جنوب کے تین چہرے اندرونی حصہ میں داخل ہیں، جب کہ شمال کی طرف 'ماربل جلی' کے ساتھ بند ہے۔ یہ بنیادی طور پر شمالی ہندوستان میں ہر "شیوالا" کی ساختی خصوصیات ہیں۔

      درخواست کامیاب نہیں ہو سکی تھی اور وہ آگرہ کی نچلی عدالت میں ابھی تک زیر التوا ہے۔ لیکن الہ آباد ہائی کورٹ (Allahabad high court) میں اسی طرح کے سوالات کے ساتھ قریب قریب ایک ہی درخواست گزشتہ ہفتے دائر کی گئی تھی، جس میں آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا (ASI) کو ہدایت دی گئی تھی کہ وہ تاج محل (Taj Mahal) کے اندر 20 کمرے کھولے تاکہ ہندو مورتیوں کی ممکنہ موجودگی کی جانچ کی جا سکے۔

      درخواست میں کہا گیا ہے کہ کہا جاتا ہے کہ تاج محل کا نام شاہ جہاں کی بیوی ممتاز محل (Shah Jahan’s wife Mumtaz Mahal) کے نام پر رکھا گیا تھا۔ تاہم کئی کتابوں میں شاہ جہاں کی اہلیہ کا نام ممتاز الزمانی بتایا گیا ہے نہ کہ ممتاز محل۔ اس کے علاوہ یہ حقیقت ہے کہ ایک مقبرے کی تعمیر میں 22 سال لگتے ہیں، یہ حقیقت سے بالاتر ہے اور سراسر مضحکہ خیز ہے۔

      نئی درخواست ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب ہندو گروپ دو دیگر اہم مقامات پر تسلیم کیے جانے کے اپنے دعووں پر زور دے رہے ہیں۔ جس میں وارانسی میں کاشی وشوناتھ-گیانواپی مسجد اور متھرا میں کرشنا جنم بھومی-شاہی عیدگاہ مسجد شامل ہیں۔ دونوں صورتوں میں ہندو کارکنوں کا الزام ہے کہ اسلامی عمارت یا عبادت گاہ کی تعمیر کے لیے ہندوؤں کے آثار کو گرایا گیا۔

      آگرہ میں دنیا کے جدید عجائبات میں سے ایک سمجھے جانے والے تاج محل پر تنازعہ سب سے پہلے مورخ پرشوتم ناگیش اوک کی 1989 میں لکھی گئی کتاب تاج محل: دی ٹرو اسٹوری (Taj Mahal: The True Story) نے چھیڑ دیا تھا۔ کتاب میں اوک نے دعویٰ کیا کہ تاج محل اصل میں ایک شیو مندر اور تیجوم محلیہ نام کا ایک راجپوت محل تھا، جسے مغل بادشاہ شاہ جہاں (Shah Jahan) نے قبضہ کر کے ایک مقبرے کے طور پر اپنایا تھا۔

      مزید پڑھیں: Mathura Shahi Idgah: شاہی عیدگاہ مسجد کاسروے، متھراکورٹ کی کمشنر مقررکرنےکی درخواست

      اس نظریہ کو متعدد مورخین اور یہاں تک کہ 2015 میں پارلیمنٹ کے جواب میں مرکزی حکومت نے بھی بار بار مسترد کر دیا ہے۔ پھر بھی اس بارے میں مسلسل تلاش کیا جارہا ہے اور ہندو کارکنوں کے ایک حصے میں تیزی سے مقبول ہو رہا ہے۔

      مزید پڑھیں: شاہین باغ میں بلڈوزر روکنے سے متعلق CPI (M) کی عرضی خارج، سپریم کورٹ نے کہا- ہم صرف متاثرین کی بات سنیں گے، ہائی کورٹ جاو

      سال 2000 میں سپریم کورٹ نے اوک کی ایک درخواست کو مسترد کر دیا جس میں کہا گیا تھا کہ تاج محل ایک ہندو بادشاہ نے بنایا تھا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: