உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    تلنگانہ سکریٹریٹ میں مساجد کی تعمیر کا کام شروع کرنے کا فیصلہ ، سنگ بنیاد 25 نومبر کو

    تلنگانہ سکریٹریٹ میں مساجد کی تعمیر کا کام شروع کرنے کا فیصلہ ، سنگ بنیاد 25 نومبر کو

    تلنگانہ سکریٹریٹ میں مساجد کی تعمیر کا کام شروع کرنے کا فیصلہ ، سنگ بنیاد 25 نومبر کو

    جامعہ نظامیہ کے وائس چانسلر ممتاز عالم دین مفتی خلیل احمد 25 نومبر کو یعنی کل نئے سیکرٹریٹ کمپلیکس کے اطراف میں مسجد کی تعمیر کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔

    • Share this:
      حیدرآباد: تلنگانہ حکومت نے سکریٹریٹ کی مساجد کی دوبارہ تعمیر کا کام شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے، جو پرانی عمارتوں کے انہدام کے دوران شہید کردی گئی تھیں۔ جامعہ نظامیہ کے وائس چانسلر ممتاز عالم دین مفتی خلیل احمد 25 نومبر کو یعنی کل نئے سیکرٹریٹ کمپلیکس کے احاطہ میں مسجد کی تعمیر کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ اس سلسلہ میں بدھ کو ریاستی وزیر داخلہ محمود علی نے چیئرمین تلنگانہ اسٹیٹ وقف بورڈ محمد سلیم اور دیگر سرکاری عہدیداروں کے ساتھ سکریٹریٹ کا دورہ کیا اور مجوزہ جگہ کا معائنہ کیا۔

      واضح رہے کہ نئے سکریٹریٹ کی تعمیر کے لئے قدیم عمارتوں کے انہدام کے دوران سکریٹریٹ کے احاطہ میں موجود دونوں مساجد اور مندر کو 7 اور 8 جولائی 2020 کی درمیانی شب منہدم کیا گیا تھا۔ چیف منسٹر نے اسی مقام پر دوبارہ تعمیر کا وعدہ کیا اور پہلی مرتبہ نومبر کے دوسرے ہفتہ میں سنگ بنیاد رکھنے کا تیقن دیا تھا تھا ۔ بعد میں 27 جنوری کو ریاستی وزراء کے ایشور ، سرینواس یادو اور محمود علی نے مسلم نمائندوں سے مشاورت کے بعد 12 فروری 2021 ء کو سنگ بنیاد کی تاریخ طئے کی تھی ۔ تاہم کورونا وباء اور لاک ڈاؤن کے سبب یہ تاریخ سنگ بنیاد کے بغیر گزر گئی ۔

      باوثوق ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ کے سی آر اور وزراء کا کہنا تھا کہ کورونا وباء اور لاک ڈاؤن کے نتیجہ میں سکریٹریٹ کی تعمیر کا کام سست رفتاری کا شکار ہوا۔ اس کے علاوہ مندر اور چرچ کے پلان کو منظوری دی جانی باقی ہے ۔ ایسے میں صرف مسجد کے تعمیری کاموں کے آغاز کی صورت میں حکومت پر اعتراضات کئے جاسکتے ہیں۔ کسی بھی پارٹی یا گروپ کو حکومت پر تنقید کا موقع دینے سے بچنے کیلئے وزیراعلیٰ تینوں عبادت گاہوں کے تعمیری کاموں کے ایک ہی وقت میں آغاز کے حق میں ہیں۔

      یادر ہے کہ چیف منسٹر نے دونوں مساجد کے لئے پلان کو منظوری دے دی ہے اور بجٹ کا تعین کردیا گیا ہے ۔ مندراور چرچ کے سلسلہ میں مختلف پلان حکومت کے زیر غور ہیں۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: