உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مقامی مساجد میں جمعہ کی نماز ادا کریں، حیدرآباد میں علماء اور تنظمیوں کے ذمہ داران کی اپیل

    سماج دشمن عناصر شہر میں گنیش وسرجن کے آخری دن کے دوران اشتعال انگیزی کا باعث بن سکتے ہیں۔

    سماج دشمن عناصر شہر میں گنیش وسرجن کے آخری دن کے دوران اشتعال انگیزی کا باعث بن سکتے ہیں۔

    Hyderabad: علماء کا کہنا ہے کہ آج چونکہ ریاست بھر میں گنیش وسرجن (Ganesh immersions) کا اہتمام کیا جارہا ہے، اسی لیے کسی بھی طرح کی ناگہانی صورت حال سے بچنے کے لیے اپنی اپنی مساجد میں ہی نماز پڑھیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Hyderabad | Mumbai | Delhi | Jammu | Karnal
    • Share this:
      Friday Namaz: حیدرآباد میں علماء اور تنظمیوں کے ذمہ داران نے مسلمانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ آج یعنی جمعہ کی نماز اپنے محلے کی مساجد میں ادا کریں۔ انھوں نے صبر کا مظاہرہ کرنے کی بھی اپیل کی ہے۔ علماء کا کہنا ہے کہ آج چونکہ ریاست بھر میں گنیش وسرجن (Ganesh immersions) کا اہتمام کیا جارہا ہے، اسی لیے کسی بھی طرح کی ناگہانی صورت حال سے بچنے کے لیے اپنی اپنی مساجد میں ہی نماز پڑھیں۔

      علماء کا کہنا ہے کہ سماج دشمن عناصر شہر میں گنیش وسرجن کے آخری دن کے دوران اشتعال انگیزی کا باعث بن سکتے ہیں۔ انھوں نے متفقہ طور پر مسلمانوں سے اپیل کی کہ وہ اپنے علاقوں کی مقامی مساجد میں نماز ادا کریں۔ حیدرآناد کے ایک عالم دین مولانا مقبول پاشا قادری نے کہا کہ مسلمان اس وقت صبر کا مظاہرہ کریں اور کسی بھی طرح مشتعل نہ ہو۔ انہوں نے حیدرآباد کے مسلمانوں سے کہا کہ وہ حیدرآباد اور تلنگانہ میں سماجی تانے بانے کو داغدار کرنے کے ارادے سے سماج دشمن عناصر کی کسی بھی کوشش پر پرتشدد ردعمل کا اظہار نہ کریں۔

      انہوں نے لوگوں سے درخواست کی کہ وہ جمعہ کی نماز کے لیے دور دراز کی مساجد کو جانے سے گریز کریں اور جمعہ کے روز اپنے اپنے علاقوں کی مساجد میں نماز ادا کریں۔ تحریک مسلم شبان کے صدر محمد مشتاق ملک (Mohd Mushtaq Malik) نے کہا کہ عوام کو چاہیے کہ شہر میں امن کے ماحول کو خراب نہ ہونے دیں۔ جو لوگ شہر میں پر سکون حالات کو خراب کرنا چاہتے ہیں، ان کے منصوبوں کو ناکام بنائیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      کرناٹک میں کم عمر کی شادی کا رواج، لڑکیوں میں تعلیم کے فقدان کا سبب، نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کی رپورٹ جاری
      محمد مشتاق ملک نے لوگوں کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے علاقے کی جامع مسجد یا حیدرآباد کی کسی اور مقامی مساجد میں نماز ادا کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ گنیش وسرجن جلوس کے دوران مشتعل ہونے کے بجائے صبر و تحمل کا مظاہرہ کریں۔ سنی یونائیٹڈ فورم آف انڈیا کے حافظ مظفر حسین نے بھی مسلمانوں سے گنیش کے جلوس کے راستوں سے دور رہنے اور گھروں کے قریب کی مساجد میں نماز ادا کرنے کی اپیل کی۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      ’کوئی بھی حجاب پر پابندی نہیں لگاتا، اصلی مسئلہ اسکول میں حجاب پہننا ہے‘ سپریم کورٹ



      حافظ مظفر حسین نے کہا کہ کئی تہوار ہمارے ملک کی گنگا جمنی تہذیب کی نشانی ہے۔ تاہم اب صورتحال بالکل مختلف ہے جب فرقہ پرست طاقتیں نفرت پھیلانے اور معمولی موقع پر مصیبت کھڑی کرنے کی انتظار میں ہیں۔ ایسے میں حکمت سے کام لیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: