உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک لائیو: جے ڈی ایس کو ستا رہا ہے اراکین اسمبلی کے تحفظ کا ڈر،چندربابو۔کے سی آر نے دیا 'پناہ'کا آفر

    بی ایس یدیو رپا نے آج کرناٹک کے 23 ویں وزیر اعلی کے طور پرعہدے کا حلف لیا۔راج بھون میں منعقد تقریب میں گورنر وجوبھائی والا نے انہیں حلف دلایا۔وہ تیسری بار وزیر اعلی کے عہدہ کی کمان سنبھال رہے ہیں۔

  • News18 Urdu
  • | May 17, 2018, 13:10 IST
    facebookTwitterLinkedin
    LAST UPDATED 4 YEARS AGO

    AUTO-REFRESH

    HIGHLIGHTS

    13:29 (IST)

    کانگریس ڈی کے شیو کمار نے دعوی کیا کہ کہ کرناٹک میں یدیو رپا حکومت تھوڑے وقت ہی رہنےوالی ہے۔انہوں نے کہا،"ہمیں پورا بھروسہ ہے کہ ہمارے پاس اکثریت ہے۔ہم انصاف کیلئے لڑیں گے اور 100 فیصد ہمارے اراکین اسمبلی ہمارے ساتھ ہیں"ِ

    13:3 (IST)

    کرناٹک کی کمان یدیورپا کے ہاتھوں میں آتے ہی اب کانگریس اور جے ڈی ایس کو اپنے اراکین اسمبلی کی سکیورٹی کی فکر ستانے لگی ہے۔خبر ہے کہ دونوں پارٹیاں اپنے اراکین اسمبلی کو اینگلٹ ریزارٹ سے کسی دوسری جگہ شفٹ کرنے کی سوچ رہی ہیں۔اس درمیان آندھرا پردیش کے سی ایم چندر بابو نائیڈو نے ان کے اراکین اسمبلی کو وشاکھا پٹنم ،جبکہ تلنگانہ کے سی ایم کے چندر شیکھر راؤ نے انہیں حیدرآباد میں پناہ دینے کا آفر دیا ہے۔ادھر ذرائع کے مطابق ،کانگری اپنے اراکین اسمبلی کو کیرالہ شفٹ کرنے جا رہی ہے۔وہاں کی حکومت نے انہیں سکیورٹی کا بھروسہ دیا ہے۔

    12:54 (IST)

    راہل گاندھی نے ساتھ ہی کہا ،'عام طور سے عوام انصاف کیلئے سپریم کورٹ جاتی ہے۔70سال میں پہلی مرتبہ آپ نے دیکھا ہوگا کہ سپریم کورٹ کے جج عوام کے پاس آکر کہہ رپے ہیں کہ ہمیں دبایا جا رہا ہے۔ہم اپنا کام نہیں کر پا رہے ہیں۔آپ کو لگ رہا ہے کہ سپریم کورٹ پر حملہ ہو رہا ہے۔لیکن اصل میں یہ حملہ سیدھا اوپر ہو رہا ہے۔آپ کے حقائق کو چھینا جا رہا ہے۔

    12:51 (IST)

    اس درمیان راہل گاندھی نے مرکز کے نریندر مودی پر ملک  مختلف قانونی تنظیموں کو نقصان پہنچانے کا الزام لگایا ۔چھتیس گڑھ کے رائے پور پہنچے راہل گاندھی نے کہا،ملک کی ہر تنظیم میں آج آر ایس ایس دخل اندازی کر رہی ہے۔آج آئین پر حملہ ہو رہا ہے۔ایس اپہلے کئی ملکوں میں ہوا ،پاکستان میں ہوا،افریقہ کے کئی ملکوں میں تاناشاہی کے دوران ایسا ہوا۔کرناٹک میں ایک طرف ارکان اسمبلی ہیں اور دوسری طرف گورنر ۔جے ڈی ایس نے کہا ہے کہ ان ارکان اسمبلی کو 100 کروڑ راپئے کے آفر دئے گئے"۔

    12:45 (IST)

    تو اس لئے کرناٹک کے سی ایم یدیو رپا نے اوڑھا ہرا شال۔۔نیوز 18۔۔۔


    12:44 (IST)

    بی جے پی نے اپنے انتخابی منشور میں کسانوں کی قرضمعافی کی بات کہی تھی ۔حلف کیتے ہوئے یدیو رپا کے کندھے پر پڑی "ہری شال"بی جے پی کی کسانوں کیلئے پابند عہد کی یاد دلا رہی تھی۔یدیو رپا نے یہاں بھگوان کے ساتھ کسانوں کو ساکشی مانتے ہوئے سی ایم عہدے کا حلف لیا تھا۔اس دوران انہوں نے کندھے پر ہرے رنگ کی ایک شال رکھی تھی۔جو کسانوں کو لیکر پابند عہد کاایک  اشارہ تھا۔

    12:40 (IST)

    یدیو رپا نے سی ایم بننے کے بعد اپنی پہلی کانفرنس میں کسانوں کے ایک لاکھروپئے تک کا قرض معاف کرنے کا جلد ہی  اعلان کرنے کا وعدہ کیا ۔یدیو رپا نے اس اعلان کے ساتھ ہی کہا ی جے پی کا ساتھ دینے والے کرناٹک اور خاص کر اس سی /ایس ٹی کمیونٹی کے لوگوں کا میں شکریہ اد کرتا ہوں۔مجھے تیسری مرتبہ سی ایم بنانے کیلئے لوگوں کا شکریہ'۔

    12:37 (IST)

    کرناٹک اسمبلی کے بعد کانگریس کے مخالف مظاہرے میں جے ڈی ایس بھی شامل ہوئی۔پارٹی سربراہ ایچ ڈی دیوگوڑا نے سبھی مظاہرین رکن اسمبلی کو کالی پٹیاں باندھیں۔


    12:35 (IST)

    سینئر وکیل رام جیٹھملانی نے بی جے پی کو حکومت بنانے کی دعوت دینے کے کرناٹک کے گورنر کے فیصلے کےخلاف سپریم کورٹ رخ کیا۔وہیں چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی بینچ سے جیٹ ملانی نے کہا کہ گورنر کاحکم آئین کی طاقتوں کا کھلا غلط استعمال'اس پر کورٹ نے ان سے کہا کہ وہ متعلقہ بینچ کے سامنے کل اپنی عرضی رکھیں گے۔

    12:32 (IST)

    اس درمیان خبر ہے کہ لا پتہ بتائے جا رہے کانگریس کے دونوں رکن اسمبلی پارٹی کے احتجاجی مظاہرے م یں شامل ہوئے ہیں۔وہیںکانگریس رکن پارلیمنٹ ڈی کے سریش رینا نے کہا،'آنند سنگھ کو چھوڑ کر سبھی ارکان اسمبلی یہاں ہیں،وہ (سنگھ)نریندر مودی کے چنگل میں پھنسے ہیں'۔

    کرناٹک کی کمان یدیورپا کے ہاتھوں میں آتے ہی اب کانگریس اور جے ڈی ایس کو اپنے اراکین اسمبلی کی سکیورٹی کی فکر ستانے لگی ہے۔خبر ہے کہ دونوں پارٹیاں اپنے اراکین اسمبلی کو اینگلٹ ریزارٹ سے کسی دوسری جگہ شفٹ کرنے کی سوچ رہی ہیں۔اس درمیان آندھرا پردیش کے سی ایم چندر بابو نائیڈو نے ان کے اراکین اسمبلی کو وشاکھہ پٹنم ،جبکہ تلنگانہ کے سی ایم کے چندر شیکھر راؤ نے انہیں حیدرآباد میں پناہ دینے کا آفر دیا ہے۔ادھر ذرائع کے مطابق ،کانگری اپنے اراکین اسمبلی کو کیرالہ شفٹ کرنے جا رہی ہے۔وہاں کی حکومت نے انہیں سکیورٹی کا بھروسہ دیا ہے۔

    بی ایس یدیو رپا نے آج کرناٹک کے 23 ویں وزیر اعلی  کے طور پرعہدے کا حلف لیا۔راج بھون میں منعقد تقریب میں گورنر وجوبھائی والا نے انہیں حلف دلایا۔وہ تیسری بار وزیر اعلی کے عہدہ کی کمان سنبھال رہے ہیں۔ یہاں دیکھنے والی بات یہ بھی تھی کہ یدیو رپا کے ساتھ کسی دیگر لیڈر نے وزیر عہدے کی فی الحال حلف نہیں لیا ہے۔

    کرناٹک میں ایک سیاسی رسہ کشی کے درمیان وہاں ایک بار پھر 'آپریشن کمل'شروع ہونے کی اٹکلے ہیں۔'آپریشن کمل'کو کرناٹک کی سیاست کا ایک حادثہ مانا جاتا ہے۔۔2008 کے چناؤ میں بھی معلق اسمبلی کے حالات بن گئے تھے۔۔۔پڑھیں کیا تھا آپریش کمل۔۔۔

    ادھر گورنر وجوبھائی والا کے اس فیصلے کے خلاف کانگریس۔جے ڈی ایس خلاف راج بھون کے باہر مخالف مظاہرے کی تیاری میںتھی جس کے مد نظر شہر میں سکیورٹی نظام برقرار رکھنے کیلئے 16000 پولیس اہلکار تعینات کئے گئے ہیں۔

    کرناٹک انتخابات نتائج 2018 جڑی ہر لائیو اپڈیٹ کیلئے یہاں پڑھیں