உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک میں بڑے پیمانے پر نئے اساتذہ کو بھرتی کرنے کا منصوبہ، ’تعلیمی میدان میں سمجھوتا نہیں ہوگا‘

    کرناٹک کے چیف منسٹر بسواراج بومئی

    کرناٹک کے چیف منسٹر بسواراج بومئی

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Karnataka | Hyderabad | Gujarat | Delhi | Mumbai
    • Share this:
      کرناٹک کے وزیر اعلی بسواراج بومائی (Basavaraj Bommai) نے کہا کہ ریاستی حکومت تسلسل کو برقرار رکھنے کے لیے ایک سال میں ریٹائر ہونے والے اساتذہ کی جگہ نئے اساتذہ کی بھرتی کرے گی۔ انھوں نے کہا کہ حکومت اس سال ریٹائر ہونے والے اساتذہ کی کل تعداد کے حساب سے بھرتی کرے گی۔ نئے اساتذہ کی مساوی تعداد میں بھرتی ہوگی، انھیں تربیت فراہم کی جائے گی اور ریٹائر ہونے والے اساتذہ کی جگہوں پر تعینات کیا جائے گا۔

      بسواراج بومائی نے کہا کہ اس پروگرام کا اعلان 15 اگست کو کیا گیا تھا اور یہ کام ایک سال کے اندر مکمل کر لیا جائے گا۔ اس کے علاوہ 15 اگست سے پہلے 4000 نئے آنگن واڑی مراکز قائم کیے جائیں گے۔ 15000 نئے اساتذہ کی بھرتی کی بدولت تدریس کا بوجھ کم ہوا ہے۔ ریاستی اور مرکزی حکومتوں نے تعلیم کے معیار کو برقرار رکھنے اور اچھی طرح سے برقرار رکھنے والے اسکولوں کے لیے بہت سے قواعد وضع کیے ہیں اور ان اصولوں پر اسکول بورڈز اور اساتذہ کو لازمی طور پر عمل کرنا ہوگا۔

      بومئی نے کہا کہ ریاستی حکومت نے تعلیمی میدان کے لیے 25,000 کروڑ روپے مختص کیے ہیں جس میں سے 19,000 کروڑ روپے اساتذہ کی تنخواہ اور 5,000 کروڑ روپے اسکولوں کی ترقی کے لیے خرچ کیے جاتے ہیں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ طلبہ نے بیت الخلاء کی کمی کی وجہ سے اسکولوں میں آنا چھوڑ دیا ہے، اور ریاستی حکومت نے ایک سال کے اندر تمام سرکاری اسکولوں میں لڑکیوں اور لڑکوں کے لیے الگ الگ بیت الخلاء فراہم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔

      بومائی نے مزید کہا کہ حکومت اساتذہ کے لیے اپنے فرائض کی ادائیگی کے لیے سازگار ماحول پیدا کرنے پر توجہ دے رہی ہے اور یہ فیصلہ زمینی حقیقت اور انسانیت کی بنیاد پر ہوگا۔ لیکن اس میں کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا جب بات تعلیمی میدان کی ترقی کی ہو تو اس سے سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      ’’نصیر الدین شاہ، شبانہ اعظمی اور جاوید اختر ٹکڑے ٹکڑے گینگ کے سلیپر سیل کے ممبر‘‘ Narottam Mishra


      یہ بھی پڑھیں:

      Pakistani Taliban: اسلام آبادکےساتھ پاکستانی طالبان نےجنگ ​​بندی کی ختم، معاہدےکی خلاف ورزی کالگایاالزام

      وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اساتذہ کے استحصال کو روکنے کے لیے قواعد کو آسان بنانے اور نظم و ضبط کو شامل کرنے کی ہدایات دی گئی ہیں۔ یہ دیکھا گیا ہے کہ بغیر کسی معائنے کے نئے اسکول کھولنے کے لیے ’’نو آبجیکشن سرٹیفکیٹ‘‘ دیے جاتے ہیں اور اس سے بچوں کی تعلیم اور معیار متاثر ہوا ہے۔ قواعد کی خلاف ورزی کرنے والوں کے ساتھ ساتھ ایسے شارٹ کٹس کی حوصلہ افزائی کرنے والوں کے خلاف بھی سخت کارروائی کی جائے گی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: