உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وزیراعظم اسکالرشپ اسکیم کے تحت انجینئرنگ کر رہے کشمیری طلبہ کا برا حال

    بنگلورو : مرکزی حکومت کی اسکیم کے تحت انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے کیلئے بنگلورو آئے کشمیری طلبہ کافی پریشان حال ہیں۔

    بنگلورو : مرکزی حکومت کی اسکیم کے تحت انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے کیلئے بنگلورو آئے کشمیری طلبہ کافی پریشان حال ہیں۔

    بنگلورو : مرکزی حکومت کی اسکیم کے تحت انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے کیلئے بنگلورو آئے کشمیری طلبہ کافی پریشان حال ہیں۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:
      بنگلورو : مرکزی حکومت کی اسکیم کے تحت انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے کیلئے بنگلورو آئے کشمیری طلبہ کافی پریشان حال ہیں۔ کیوں کہ تین سال گزرجانے کے باوجود طلبہ کی فیس اوررہائشی اخراجات حکومت نے ادا نہیں کئے ہیں۔
      سابق وزیراعظم منموہن سنگھ کےدورمیں پانچ ہزارکشمیری طلبہ کوانجینئرنگ کی مفت تعلیم کے لئےاسکالرشپ کا اعلان کیا گیا تھا، جس کے بعد بہت سے طلبہ نے داخلہ لیا تھا ، مگر اباسکالرشپ کے تحت زیرتعلیم طلبہ کوکئی پریشانیوں کا سامنا ہے، جس کے خلاف بنگلورو کےایچ کے بی کے کالج میں زیرتعلیم کشمیری طلبہ نے احتجاج کیا ۔
      طلبہ کا کہنا ہے کہ ان کی فیس، رہائش اورکھانے کے اخراجات اے آئی سی ٹی ای کوادا کرنا ہے ، لیکن تین سال گزر جانے کے باوجود اے آئی سی ٹی ای نے رقم جاری نہیں کی ہے۔ اب کالج انتظامیہ طلبہ سے ہاسٹل اورکینٹین فیس ادا کرنے کیلئے کہہ رہے ہیں ۔
      ادھر کالج کے ڈائریکٹرسی ایم فیض محمد کا کہنا ہے کہ گزشتہ تین سالوں سے کالج انتظامیہ 22 کشمیری طلبہ کی فیس اور دیگراخراجات برداشت کررہی ہے۔ مگر حکومت نے اب تک ایک ماہ کی بھی رقم جاری نہیں کی ہے۔
      First published: