உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    UCC: ’مسلمان ہی نہیں، دیگرمذہبی اقلیتیں بھی یکساں سول کوڈکےخلاف‘ آل انڈیامسلم پرسنل لابورڈ

    Youtube Video

    آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ (All India Muslim Personal Law Board) نے کرناٹک ہائی کورٹ سے بھی اپیل کی کہ وہ حجاب پہننے والی مسلم لڑکیوں کو اسکولوں میں کلاسوں میں شرکت کرنے اور امتحانات میں شرکت کی اجازت دے جب تک کہ سپریم کورٹ اپنا فیصلہ نہ دے دے۔

    • Share this:
      اتراکھنڈ میں نو منتخب بی جے پی حکومت کی جانب سے یکساں سول کوڈ (Uniform Civil Code) کو لاگو کرنے کی کارروائی شروع کرنے کے دوران آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ (All India Muslim Personal Law Board) یا اے آئی ایم پی ایل بی نے کہا ہے کہ نہ صرف مسلمان بلکہ دیگر مذہبی اقلیتوں کو بھی اس پر اعتراض ہے۔

      بورڈ کی ایگزیکٹیو کمیٹی نے اپنی میٹنگ کے دوران کرناٹک میں حجاب کے حالیہ تنازعہ (hijab controversy in Karnataka) پر بھی تبادلہ خیال کیا اور کہا کہ وہ سپریم کورٹ میں اس کیس کا مضبوطی سے مقابلہ کرے گی۔ اتوار کے روز یہاں کمیٹی نے نشاندہی کی کہ میزورم اور دیگر مقامات پر قبائلی قوانین موجود ہیں۔ اس کے علاوہ اکثریتی برادری کے ساتھ ساتھ مذہبی برادریوں کے اندر بھی مختلف قوانین موجود ہیں۔

      بورڈ کے ایک سینئر رکن نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ آئین نے پہلے ہی ہر ایک کو اپنی ثقافت، رسم و رواج اور روایات کو برقرار رکھنے کا حق دیا ہے۔ کسی بھی رواج، روایت یا قانون کو آئینی طور پر یا ہندوستان کی اخلاقیات کی بنیاد پر پورے ملک میں یکساں طور پر لاگو نہیں کیا جاسکتا ہے۔ پشکر سنگھ دھامی حکومت کی پہلی کابینہ میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ یو سی سی کو لاگو کرنے کے لیے ماہرین کے پینل کی سربراہی سپریم کورٹ یا ہائی کورٹ کے ریٹائرڈ جج کریں گے۔

      آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ:

      اے آئی ایم پی ایل بی کا قیام 1973 میں ہندوستان میں مسلم پرسنل لاز بالخصوص مسلم پرسنل لاء (شریعت) کے تحفظ اور مسلسل لاگو ہونے کے لیے مناسب حکمت عملی اپنانے کے لیے کیا گیا تھا۔ بورڈ میں زیادہ تر مسلم فرقوں کی نمائندگی کی جاتی ہے اور اس کے ممبران میں ہندوستانی مسلم معاشرے کے ایک کراس سیکشن سے تعلق رکھنے والے نمایاں لوگ شامل ہیں، جس میں مذہبی رہنما، علماء، وکلاء اور سیاست دان اور دیگر پیشہ ور افراد شامل ہیں۔

      اتوار کے روز اس کے صدر مولانا سید رابع حسنی ندوی کی سربراہی میں ایگزیکٹو باڈی کے اجلاس کے دوران اراکین نے حجاب کے معاملے کو سپریم کورٹ میں سختی سے مسئلہ کو اٹھانے کا فیصلہ کیا۔ بورڈ نے پہلے ہی اس معاملے پر کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف عدالت عظمیٰ سے رجوع کیا ہے، انہوں نے کہا کہ تمام سرکاری اداروں کو اس حقیقت سے آگاہ ہونا چاہئے کہ کسی بھی مذہبی مسئلہ پر کسی مذہب کے ماہرین سے مشورہ کرنے کی ضرورت ہے۔

      مزید پڑھیں: niform Civil Code: کئی ریاستیں یونیفارم سول کوڈ کا کیسے بنا رہی ہیں منصوبہ؟ اور کیوں...؟

      اسلامی اسکالرز اس بات پر متفق ہیں کہ مثال کے طور پر حجاب کا حکم قرآن کے ذریعے دیا گیا ہے اور اسی لیے یہ اسلام کا ایک لازمی حصہ ہے۔ یہ کہنا کہ اس کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے غلط ہے۔ انہوں نے کہا کہ میٹنگ کے دوران اس بات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا کہ حجاب کے معاملے کو اتنی زیادہ تشہیر کی ضرورت نہیں تھی اور اسے مقامی سطح پر حل کیا جانا چاہیے تھا۔

      بورڈ نے کرناٹک ہائی کورٹ سے بھی اپیل کی کہ وہ حجاب پہننے والی مسلم لڑکیوں کو اسکولوں میں کلاسوں میں شرکت کرنے اور امتحانات میں شرکت کی اجازت دے جب تک کہ سپریم کورٹ اپنا فیصلہ نہ دے دے۔

      مزید پڑھیں: Explained: آخر یونیفارم سول کوڈ کیا ہے؟ کیا یہ ہندوستانی ’کثرت میں وحدت‘ کے خلاف نہیں ہوگا؟



      اگر لڑکیوں کو امتحان دینے سے روک دیا جائے تو اس سے ان کی تعلیم، ترقی اور مستقبل متاثر ہو گا۔ انہیں ان کی تعلیم سے روکنا حکومت کے اصولوں کے خلاف ہو گا اور اس لیے انہیں حجاب کے ساتھ امتحانات لکھنے کی اجازت دی جانی چاہیے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: