உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کانگریس ممبر اسمبلی کے بیٹے کی "غنڈہ گردی "، پٹائی سے زخمی نوجوان پر اسپتال میں جاکر بھی کیا حملہ

    ایم اے حارث کے فرزند محمد نلپاڈ ۔ فائل فوٹو

    ایم اے حارث کے فرزند محمد نلپاڈ ۔ فائل فوٹو

    بنگلورو کے ایک مشہور ریستوراں میں ایک نوجوان پر مبینہ طور پر حملہ کرنے کے معاملہ میں کانگریس ممبر اسمبلی این اے حارث کے بیٹے اور ان کے حامیوں کے خلاف کیس درج کیا گیا ہے ۔

    • Share this:
      بنگلورو : بنگلورو کے ایک مشہور ریستوراں میں ایک نوجوان پر مبینہ طور پر حملہ کرنے کے معاملہ میں کانگریس ممبر اسمبلی این اے حارث کے بیٹے اور ان کے حامیوں کے خلاف کیس درج کیا گیا ہے ۔ اس حملہ میں سنگین طور پر زخمی نوجوان کو علاج کیلئے اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے ۔ دریں اثنا اپوزیشن پارٹیوں بی جے پی اور جے ڈی ایس کے احتجاج کے بعد ممبر اسمبلی کے بیٹے کو کانگریس سے چھ سال کیلئے معطل کردیا گیا ہے۔
      متاثرہ نوجوان کی شناخت ڈالرس کالونی کے رہنے والے ودوت کے طور پر کی گئی ہے ، جو رات کا کھانا کھانے کیلئے ہوٹل گیا تھا ، تبھی رات میں تقریبا ساڑھے گیارہ بجے ممبر اسمبلی کا بیٹا محمد نلپد اپنے دوستوں کے ساتھ وہاں پہنچا ۔ اطلاعات کے مطابق نلپد نے اسے ٹھیک سے بیٹھنے کیلئے کہا ، جس کو لے کر دونوں کے درمیان کہا سنی ہوگئی ۔
      یہ نوک جھونک اس قدر بڑھ گئی کہ نلپد اور اس کے دوستوں نے مبینہ طور پر ودوت کی جم کر پٹائی کردی ۔ ودوت کو زخمی حالت میں نردیک میں واقع مالیہ اسپتال لے جایا گیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ نلپد کا غصہ اس کے بعد بھی ٹھنڈا نہیں ہوا اور اس نے مبینہ طور پر اسپتال میں گھس کر پھر اس نوجوان کی پٹائی کی ۔ اس دوران بچاو کی کوشش کررہے متاثرہ کے بھائی کے ساتھ بھی مارپیٹ کی گئی ۔


      اس واقعہ کے بعد گزشتہ رات کانگریس ممبر اسمبلی حارث نے بھی اسپتال جاکر متاثرہ نوجوان کی کیفیت دریافت کی ۔ حالانکہ اس کے بعد اپوزیشن بی جے پی اور جے ڈی ایس معاملہ پر پردہ ڈالنے کا الزام لگاتے ہوئے اس کو فوری طور پر معطل کرنے کا مطالبہ کیا ۔ اپوزیشن کے احتجاج کے پیش نظر کانگریس نے حارث کے بیٹے کو چھ سال کیلئے معطل کردیا ہے۔
      First published: