உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اسد الدین اویسی نے ہریانہ میں کشمیری طلبہ پر حملہ کی سخت مذمت کی

    رکن پارلیمنٹ وصدر کل ہند مجلس اتحاد المسلمین بیرسٹر اسد الدین اویسی : فائل فوٹو۔

    رکن پارلیمنٹ وصدر کل ہند مجلس اتحاد المسلمین بیرسٹر اسد الدین اویسی : فائل فوٹو۔

    حیدرآباد۔ حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ وصدر کل ہند مجلس اتحاد المسلمین بیرسٹر اسد الدین اویسی نے ہریانہ میں کشمیری طلبہ پر حملہ کی سخت مذمت کی۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      حیدرآباد۔ حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ وصدر کل ہند مجلس اتحاد المسلمین بیرسٹر اسد الدین اویسی نے ہریانہ میں کشمیری طلبہ پر حملہ کی سخت مذمت کی۔ پارٹی ہیڈ کوارٹرس دار السلام میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جب سے ہریانہ میں بی جے پی کی حکومت برسراقتدار آئی ہے، لا اینڈ آرڈر مکمل طور پرناکام ہوگیا ہے۔بیرسٹر اویسی نے رمضان میں ٹرین میں حافظ جنید پر حملے کے نتیجہ میں اس کی موت ، فلم پدماوت کی ریلیز کے دوران اسکول بس پر کئے گئے حملے کے واقعہ کا بھی حوالہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ اسکول کی بس میں معصوم بچے بیٹھے ہوئے تھے ، ان پر پتھر بازی کی گئی جس سے یہ بچے پریشان ہوگئے۔


      انہوں نے کہا کہ یہ کشمیری ،سنٹرل یونیورسٹی کے طلبہ ہیں جو نماز ادا کرکے نکل رہے تھے جن کو جان بوجھ کر نشانہ بنا کر مارا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہریانہ میں جو مسلمان ،دلت اورجو افراد بی جے پی ،سنگھ پریوار کے نظریات کے خلاف ہیں،ان کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔انہوں نے کشمیری طلبہ پر حملہ کے واقعہ کی سختی سے مذمت کی اور ہریانہ حکومت سے دستوری ذمہ داری کو پورا کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ دستور ی فرض یہ ہے کہ کسی بھی انسان کی جان ومال کی حفاظت حکومت کرے جس میں وہ ناکام ہوگئی ہے۔انہوں نے سوال کرتے ہوئے کہا ’’ یہ حملہ کیوں کیا گیا اور کشمیریوں کو ہم کیا پیام دے رہے ہیں؟ہم تو یہ کہہ رہے کہ کشمیر ہمار ا اٹوٹ حصہ ہے اور رہے گا مگر یہ کشمیری بچے جو طلبہ ہیں، ان کو مسجد سے نکلنے کے بعد نشانہ بنانے سے کیا پیام جا رہا ہے۔‘‘


      صدر مجلس نے کشمیری طلبہ کی سلامتی کو یقینی بنانے پرزور دیا اور قصورواروں کے خلاف سخت کارروائی کا بھی مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی اور سنگھ پریوار ، دستوری فرض نبھانے کے بجائے اپنے نظریات پر کام کر رہے ہیں۔

      First published: