உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Mann Ki Baat: مہاتما گاندھی کی برسی پر آج 11:30 بجے پی ایم مودی کریں گے ’من کی بات‘، پہلی مرتبہ وقت میں کی گئی تبدیلی

    وزیراعظم مودی کے من کی بات پروگرام میں پہلی مرتبہ کی گئی تبدیلی۔

    وزیراعظم مودی کے من کی بات پروگرام میں پہلی مرتبہ کی گئی تبدیلی۔

    ایک پروگرام میں پی ایم مودی نے کورونا وبا اور سی ڈی ایس بپن راوت کی موت کے بارے میں بات کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا، ’افرادی قوت ہی طاقت ہے، یہ سب کی کوشش ہے کہ ہندوستان 100 سال میں سب سے بڑی وبا سے لڑ سکے۔ ہم ہر مشکل وقت میں ایک خاندان کی طرح ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے رہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:وزیراعظم نریندر مودی (PM Modi) آج (30 جنوری) مہاتما گاندھی (Mahatma Gandhi) کی برسی کے موقع پر اپنے ماہانہ ریڈیو پروگرام ’من کی بات‘ (Mann ki Baat) کریں گے۔ اس کے بعد ’من کی بات‘شروع ہوگی۔ پہلی بار پروگرام کے اوقات میں تبدیلی کی گئی ہے۔ وزیر اعظم کے دفتر کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ اس مہینے کی من کی بات، جو 30 تاریخ کو ہوگی، گاندھی جی کو ان کی برسی پر یاد کرنے کے بعد صبح 11:30 بجے شروع ہوگی۔ پہلے یہ پروگرام ہر بار صبح 11 بجے شروع ہوتا تھا، جسے پی ایم مودی کے آفیشل یوٹیوب چینل پر دیکھا جا سکتا ہے۔ دوردرشن بھی اسے براہ راست نشر کرے گا۔ ’من کی بات‘ وزیر اعظم کا ماہانہ ریڈیو پروگرام ہے جو ہر مہینے کے آخری اتوار کو نشر ہوتا ہے۔

      2014 میں اقتدار میں آنے کے بعد پی ایم مودی نے یہ پروگرام شروع کیا، جس میں وہ تمام مسائل پر ملک کے لوگوں سے بات کرتے ہیں۔ یہ پروگرام عموماً مہینے کے آخری اتوار کو نشر کیا جاتا ہے۔ اس کا پہلا ایپی سوڈ اکتوبر 2014 میں نشر ہوا تھا اور یہ بلاتعطل چل رہا ہے سوائے 2019 میں ایک مختصر مدت کے، جب وزیر اعظم نے اسے لوک سبھا انتخابات کے دوران روک دیا تھا۔

      کورونا کے نئے ویرینٹ اومیکرون پر مودی نے کی تھی بات
      اس سے پہلے ایک پروگرام میں پی ایم مودی نے کورونا وبا اور سی ڈی ایس بپن راوت کی موت کے بارے میں بات کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا، ’افرادی قوت ہی طاقت ہے، یہ سب کی کوشش ہے کہ ہندوستان 100 سال میں سب سے بڑی وبا سے لڑ سکے۔ ہم ہر مشکل وقت میں ایک خاندان کی طرح ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے رہے۔ اپنے علاقے یا شہر میں کسی کی مدد کرنے کے لیے جو کچھ بنایا گیا تھا اس سے زیادہ کرنے کی کوشش کی۔ اگر ہم آج کی دنیا میں ویکسینیشن کے اعدادوشمار کا موازنہ ہندوستان کے ساتھ کریں تو لگتا ہے کہ اس ملک نے ایسا بے مثال کام کیا ہے، کتنا بڑا مقصد حاصل کیا ہے۔ ویکسین کی 140 کروڑ خوراکوں کا سنگ میل عبور کرنا ہر ہندوستانی کا کارنامہ ہے۔ یہ نظام پر ہر ہندوستانی کا بھروسہ ظاہر کرتا ہے، سائنس میں اعتماد کو ظاہر کرتا ہے، سائنس دانوں پر بھروسہ ظاہر کرتا ہے، اور ہم ہندوستانیوں کی سماج کے تئیں اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے کے عزم کا بھی ثبوت ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: