உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ٹیپو کیسے حکمراں تھے بی جے پی والے اپنے دل پر ہاتھ رکھ کر پوچھیں : روشن بیگ

    بی جے پی ٹیپو کو ہندو مخالف بادشاہ بتا کر سرکاری جینتی کی مخالفت کر رہی ہے تو وہیں کانگریس ٹیپو کو اولین مجاہد آزادی  تسلیم کرکے سرکاری جینتی کا دفاع کر رہی ہے۔

    بی جے پی ٹیپو کو ہندو مخالف بادشاہ بتا کر سرکاری جینتی کی مخالفت کر رہی ہے تو وہیں کانگریس ٹیپو کو اولین مجاہد آزادی تسلیم کرکے سرکاری جینتی کا دفاع کر رہی ہے۔

    بی جے پی ٹیپو کو ہندو مخالف بادشاہ بتا کر سرکاری جینتی کی مخالفت کر رہی ہے تو وہیں کانگریس ٹیپو کو اولین مجاہد آزادی تسلیم کرکے سرکاری جینتی کا دفاع کر رہی ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

      گلبرگہ۔  ٹیپو جینتی کے سرکاری سطح  پر انعقاد پر کرناٹک میں  سیاسی ماحول گرم ہے۔ بی جے پی ٹیپو کو ہندو مخالف بادشاہ بتا کر سرکاری جینتی کی مخالفت کر رہی ہے تو وہیں کانگریس ٹیپو کو اولین مجاہد آزادی  تسلیم کرکے سرکاری جینتی کا دفاع کر رہی ہے۔  کانگریس کے مطابق  پورے امن  وامان کے ساتھ ٹیپو جینتی کا انعقاد کیا جائیگا۔ کانگریس لیڈران کا کہنا ہے کہ بی جے پی والے خود بھی جانتے ہیں کہ ٹیپو ایک سیکولر حکمراں تھے۔

      آج کرناٹک بھر میں بی جے پی نے ٹیپو  جینتی کے خلاف مظاہرہ کیا۔ بی جے پی سرکاری جینتی کی شدید مخالفت کر رہی ہے۔ بی جے پی کا کہنا ہے کہ کرناٹک کے ساحلی اضلاع میں ٹیپو مخالف جذبات پائے جاتے ہیں،  اس لئے اس سے گریز کیا جا نا چاہئے۔ دوسری جانب برسر اقتدار کانگریس بی جے پی کے احتجاج کو خاطر میں لانے کو تیار نہیں ہے۔ کانگریس کا کہنا ہے کہ پورے امن و امان کے ساتھ دس نومبر کو ٹیپو جنیتی کا سرکاری سطح پر انعقاد کیا جائیگا۔


       کانگریس حکومت بی جے پی کے ان الزامات کو بھی مستر د کر رہی ہے کہ ٹیپو ایک ہندو مخالف راجا  تھے۔  ریاستی وزیر کا کہنا ہے کہ  اس کا جواب بی جے پی لیڈران اپنے دل پر ہاتھ رکھ  کردیں کہ ٹیپو کیسے حکمراں تھے۔ دوسری جانب جے ڈی ایس  ٹیپو جینتی کی حمایت میں سامنے آئی ہے۔ دس نومبر کو بنگلور میں جے ڈی ایس کے دفتر  پر بھی ٹیپو جینتی کا انعقاد کیا جا رہا ہے۔ سابق وزیر اعظم دیو گوڑا تقریب کی صدارت کریں گے۔

      First published: