ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

کیا حکومت ملک میں خانہ جنگی جیسے حالات پیدا کرنا چاہتی ہے؟ بنگلورو میں پرکاش امبیڈکر کا مودی حکومت سے بڑا سوال

پرکاش امبیڈکرنے کہاکہ یکم اپریل سے حکومت این آپی آر کی کارروائی شروع کرنے والی ہے۔ این پی آر میں ملک کے شہریوں سے جانکاری نہ ملنے پر ڈاؤٹ فل یعنی مشکوک قرار دینے کی گنجائش رکھی گئی ہے۔ اس طرح حکومت این پی آر کے ذریعہ ایک طرح سے شہریت چھیننے کا عمل شروع کرنے والی ہے۔

  • Share this:
کیا حکومت ملک میں خانہ جنگی جیسے حالات پیدا کرنا چاہتی ہے؟ بنگلورو میں پرکاش امبیڈکر کا مودی حکومت سے بڑا سوال
پرکاش امبیڈکرنے کہاکہ یکم اپریل سے حکومت این آپی آر کی کارروائی شروع کرنے والی ہے۔ این پی آر میں ملک کے شہریوں سے جانکاری نہ ملنے پر ڈاؤٹ فل یعنی مشکوک قرار دینے کی گنجائش رکھی گئی ہے۔ اس طرح حکومت این پی آر کے ذریعہ ایک طرح سے شہریت چھیننے کا عمل شروع کرنے والی ہے۔

سی اے اے، این آرسی اور این پی آر کو اگر واپس نہیں لیاگیاتو ملک میں خانہ جنگی جیسے حالات پیدا ہوسکتے ہیں۔ کیا مرکزی حکومت یہی چاہ رہی ہے؟۔ بنگلورو میں بابا صاحب امبیڈکر کے پوتے پرکاش امبیڈکر نے بنگلورو میں یہ بات کہی۔ بنگلورو کے شانتی نگر میں سی اے اے ،این آرسی اور این پی آر کےخلاف دلت تنظیموں کے احتجاجی جلسہ سے پرکاش امبیڈکر نے خطاب کیا۔

پرکاش امبیڈکرنے کہاکہ یکم اپریل سے حکومت این آپی آر کی کارروائی شروع کرنے والی ہے۔ این پی آر میں ملک کے شہریوں سے جانکاری نہ ملنے پر ڈاؤٹ فل یعنی مشکوک قرار دینے کی گنجائش رکھی گئی ہے۔ اس طرح حکومت این پی آر کے ذریعہ ایک طرح سے شہریت چھیننے کا عمل شروع کرنے والی ہے۔

پرکاش امبیڈکرنے اپنے خطاب میں کہاکہ اس معاملے میں حکومت فوری طور پرسی اے اے کے خلاف احتجاج کررہی تنظیموں سے گفتگو کرے۔ سی اے اے کی مخالفت کررہے لوگوں کی آواز کو سنے۔ اگر حکومت ایسا نہیں کرتی ہے تو عوام اور سرکار کے درمیان آمنا سامنا ہوگا۔ انہوں نے سوال کیاکہ کیا اس طرح کیا حکومت ملک میں خانہ جنگی جیسے حالات پیدا کرناچاہتی ہے؟۔

آر پی آئی اور دیگر دلت تنظیموں کے تحت ہوئے اس اہم اجلاس میں  تمل ناڈو کے مشہور سیاستدان، رکن پارلیمان، تول تِروماولم نے بھی خطاب ۔ تول تِروما ولم نے مرکزی حکومت سے اپیل کی کہ وہ مذہب کے بنیاد پر لوگوں کو  تقسیم نہ کرے۔ شانتی نگر کے رکن اسمبلی این اے حارث نے بھی اس احتجاجی جلسہ میں حصہ لیا۔ این اے حارث نے کہاکہ سی اے اے، این آرسی اور این پی آر صرف مسلمانوں کے خلاف نہیں بلکہ دیگر مذاہب ،طبقوں کے بھی خلاف ہے۔

اس اجلاس عام سے شہر بنگلورو کے ممتاز علما کرام مولانا مقصودعمران رشادی اور مولانا شبیراحمد ندوی نےبھی خطاب کیا۔ علمائ کرام نے سبھی مذاہب کے لوگوں کو سی اے اے ، این آرسی اور این پی آر کے خلاف متحد ہونے کی اپیل کی۔

First published: Mar 12, 2020 10:52 PM IST