ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

موہن بھاگوت کاپراناراگ، کہا۔ ملک کے130کروڑلوگ ہیں ہندو،آرایس ایس سبھی کاکرتاہےاحترام

آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت نےکہاکہ آرایس ایس کی نظر میں ملک میں 130 کروڑآبادی ہندوسماج ہی ہے۔چاہےان کامذہب اورتہذیب کچھ بھی ہو۔

  • Share this:
موہن بھاگوت کاپراناراگ، کہا۔ ملک کے130کروڑلوگ ہیں ہندو،آرایس ایس سبھی کاکرتاہےاحترام
حیدرآباد کے سروورنگر اسٹیڈیم میں ایک جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے بھاگوت نے کہا، جب میں ہندو کہتا ہوں تو میں کسی کو باہرنہیں چھوڑتا۔۔(فائل فوٹو)۔

آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت نےکہاکہ آرایس ایس کی نظر میں ملک میں 130 کروڑآبادی ہندوسماج ہی ہے۔چاہےان کامذہب اورتہذیب کچھ بھی ہو۔انہوں نےکہاکہ مذہب اورتہذیب پرتوجہ دیےبغیرجولوگ قومیت کاجذبہ رکھتےہیں۔اورہندوستان کی ثقافت اوراس کی وراثت کااحترام کرتےہیں وہ ہندوہیں۔ موہن بھاگوت نےمزیدکہاکہ مادروطن کاسپوت چاہےکوئی بھی زبان بولےچاہےوہ کسی بھی علاقےکاہواسکی عبادت کاطریقہ کچھ بھی ہووہ ایک ہندوہے۔اسی لیےآرایس ایس سبھی کوقبول کرتاہے۔اوران کےتعلق سےبہترسوچھ رکھتاہے۔


آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت
آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت


بھاگوت نے کہا، بھارت ماتا کابیٹا، وہ جو بھی زبان بولتاہے ، خواہ وہ کسی بھی خطے سے ہے ، کسی بھی شکل میں پوجا کرتاہے یا کسی بھی طرح کی عبادت پر یقین نہیں رکھتا ہے،وہ ہندوہے اس سلسلے میں ، ہندوستان کے تمام 130 کروڑ لوگ سنگھ کے لئے ہندو معاشرے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آر ایس ایس سب کوقبول کرتاہے ، ان کے بارے میں اچھا سوچتا ہے اور مستقبل میں انہیں ایک اعلیٰ سطح پر لے جانا چاہتا ہے۔ واضح رہےکہ تلنگانہ میں آرایس ایس کاسہ روزہ وجےسنکلپ کیمپ جاری ہےجس میں ملک کےسیکڑوں آرایس ایس کارکنان حصہ لےرہےہیں ۔اسی پروگرام میں موہن بھاگوت نےان خیالات کااظہارکیا۔




سنگھ کی نظرمیں 130 کروڑ کا پورا معاشرہ ہےہندو: موہن بھاگوت

حیدرآباد کے سروورنگر اسٹیڈیم میں ایک جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے بھاگوت نے کہا، جب میں ہندو کہتا ہوں تو میں کسی کو باہرنہیں چھوڑتا۔ ایک جوہندوستان کواپنی مادروطن سمجھتاہے اور لوگوں، پانی، جنگل، زمین اور جانوروں سے محبت کرتا ہے اور سب کی فلاح و بہبود کے لئے بہترین ثقافت کا مظاہرہ کرتا ہے، وہ ہندو ہے۔ سنگھ کے مطابق پورا 130 کروڑ معاشرہ ہندو ہے۔

آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت
آرایس ایس کےسربراہ موہن بھاگوت


رابندرناتھ ٹیگور کے مضامین کا کیا ذکر

موہن بھاگوت نے رابندرناتھ ٹیگور کے ایک مضمون 'سودیشی سماج کا انتظام' کا ذکر کیا. انہوں نے بتایا کہ ٹیگور کے مطابق ، معاشرہ ہندوؤں اور مسلمانوں کے مابین تنازعات کو ختم کرنے اور ایک ساتھ مل کررہنے کا راستہ تلاش کرے گا اور یہ علاج ایک ہندو حل ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ہیرو کام نہیں کرے گا بلکہ دیہات اور علاقوں میں اسے نوجوان ہیروز کی ایک ٹیم بنانی ہوگی ، جو معاشرے کے بارے میں بے لوث جذبات رکھتے ہیں اور جن کا کردارناقابل فراموش ہے۔ اس کے ساتھ ہی ہندوستان کا مستقبل بدل سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا ہندوستان کی طرف دیکھ رہی ہے اور خوشی اور امن کا راستہ دکھانے کے لئے دنیا کو ایک منظم ہندو معاشرے کی ضرورت ہے۔ حیدرآباد میں تین روزہ وجئے سنکلپ کیمپ جاری ہے۔ اس کیمپ میں شرکت کرتے ہوئے، سنگھ کے سربراہ نے بتایا کہ سنگھ کس طرح کی فتح حاصل کرنا چاہتا ہے۔ بھاگوت نے کہا کہ تماشی یا شاہی فتح ہندو معاشرے میں ممانعت سمجھی جاتی ہے اور اسلاف نے مذہب کی فتح کی راہ اپنانے کا مشورہ دیاہے۔
First published: Dec 26, 2019 08:55 AM IST