ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

پارٹی نے دلت وزیراعلیٰ بنانے کافیصلہ کیا تو کبھی الیکشن نہیں لڑوں گا: سدارمیا

سدارمیا نے کہا ہے کہ اگر پارٹی کسی دلت کو وزیراعلیٰ بنانے کافیصلہ کرتی ہے تو وہ اپنا راستہ تبدیل کرلیں گے اور وہ کبھی الیکشن نہیں لڑیں گے۔

  • Share this:
پارٹی نے دلت وزیراعلیٰ بنانے کافیصلہ کیا تو کبھی الیکشن نہیں لڑوں گا: سدارمیا
سدارمیا نے کہا ہے کہ اگر پارٹی کسی دلت کو وزیراعلیٰ بنانے کافیصلہ کرتی ہے تو وہ اپنا راستہ تبدیل کرلیں گے اور وہ کبھی الیکشن نہیں لڑیں گے۔

میسور: ووٹنگ کے ایک روز بعد ہی کرناٹک کے وزیراعلیٰ سدارمیا نے کہا ہے کہ اگر پارٹی کسی دلت کو وزیراعلیٰ بنانے کافیصلہ کرتی ہے تو وہ اپنا راستہ تبدیل کرلیں گے۔ انہوں نے واضح کیا کہ وہ پارٹی کے فیصلے کا استقبال کریں گے اور جو پارٹی کا فیصلہ ہوگا وہی ان کا بھی فیصلہ ہوگا۔ حالانکہ سدارمیا نے کہاکہ ایسا ہوا تو وہ پارٹی کارکن کے طور پر کام کریں گے، لیکن کبھی الیکشن نہیں لڑیں گے۔


سدارمیا کے اس بیان کے بعد بی جے پی لیڈر سدا نند گوڑا نے کہاکہ کانگریس کو معلوم ہے کہ وہ الیکشن نہیں جیت رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ سدارمیا پہلے دعوی کررہے تھے کہ وہ وزیراعلیٰ بنیں گے، اب وہ کچھ اور کہہ رہے ہیں۔ اسی سے معلوم ہوتا ہے کہ کانگریس اپنی جیت کو لے مطمئن نہیں ہے۔


کرناٹک انتخابی تشہیر کے دوران بی جے پی اور کانگریس دونوں ہی جماعتوں نے دلت رائے دہندگان کو اپنی طرف متوجہ کرنے کی کوشش کی تھی۔ وزیراعظم مودی نے ایک انتخابی ریلی میں کانگریس پر دلتوں کی توہین کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ 2013 میں کانگریس نے پوری تشہیر ملک ارجن کھڑگے کے نام پر لڑا اور آخر میں سدارمیا کو وزیراعلیٰ بنا دیا۔


گزشتہ ماہ کانگریس کے سینئر لیڈر ملک ارجن کھڑگے نے بھی کہا تھا کہ نتیجے آنے کے بعد نئے وزیراعلیٰ کو لے کر فیصلہ کیاجائے گا۔ کھڑگے نے کہا تھا کہ نئے ممبران اسمبلی کے صلاح ومشورے کے بعد پارٹی ہائی کمان نئے وزیراعلیٰ پر فیصلہ کرے گی۔ اس کے بعد قیاس آرائیوں کا دور شروع ہوگیا تھا کہ وزیراعلیٰ عہدہ کے لئے سدارمیا کانگریس کی ممکنہ پسند نہیں ہیں۔ حالانکہ بعد میں سدارمیا نے یہ واضح کیا تھا کہ ویزراعلیٰ عہدے کے لئے وہ پارٹی کی پہلی پسند ہیں۔

 

 
First published: May 13, 2018 03:40 PM IST