உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک اسمبلی انتخابات: شمالی ہندوستان کے "ڈمی" لیڈر ہے یدی یورپا: سدارمیا

    سدھارمیا

    سدھارمیا

    میسور: کرناٹک اسمبلی انتخابات سے قبل لیڈروں کے درمیان الزام تراشی کا دور مسلسل جاری ہے۔ وزیراعلیٰ سدا رمیا نے ریاست میں بی جے پی کے وزیراعلیٰ کا چہرہ بی ایس یدی یورپا کو "ڈمی" امیدوار قرار دیا ہے۔

    • Share this:
      میسور: کرناٹک اسمبلی انتخابات سے قبل لیڈروں کے درمیان الزام تراشی کا دور مسلسل جاری ہے۔ وزیراعلیٰ سدا رمیا نے ریاست میں بی جے پی کے وزیراعلیٰ کا چہرہ بی ایس یدی یورپا کو "ڈمی"  امیدوار قرار دیا ہے۔  سدا رمیا نے کہا کہ بی جے پی کو جیت کے لئے صرف شمالی ہندوستانیوں پر بھروسہ ہے اور ان کے پاس وزیراعلیٰ عہدے کا کوئی چہرہ نہیں ہے، اس لئے وہ یوگی آدتیہ ناتھ اور وزیراعظم نریندر مودی کے بھروسے  بیٹھے ہیں۔

      وزیراعلیٰ سدا رمیا کے مطابق اس بار انتخابی لڑائی باہری اور شمالی ہندوستان بنام کرناٹک کے مقامی لیڈر کے درمیان ہے۔ انہوں نے ٹوئٹ کرتے ہوئے لکھا ہے "بی جے پی کے پاس کرناٹک میں کوئی وزیراعلیٰ عہدہ کا چہرہ نہیں ہے۔ وہ تشہیر کے لئے وزیراعظم مودی اور یوپی کے وزیر اعلیٰ آدتیہ ناتھ جیسے شمالی ہندوستانیوں کی "امپورٹ"  کررہے ہیں۔  بی جے پی  نے اپنے وزیراعلیٰ عہدے کا امیدوار بی ایس یدی یورپا کو ڈمی بنادیا ہے"۔

      سدارمیا پر جوابی حملہ کرتے ہوئے بی جے پی نے کہا ہے کہ ان کی سیاسی سطح میں مسلسل گراوٹ آرہی  ہے۔ بی جے پی کے مطابق سدا رمیا شمال-جنوب کی باتیں  کرکے کرناٹک کو تقسیم کرنے کی سیاست کررہے ہیں۔

      سدار میا گذشتہ ایک سال سے بی جے پی اور آر ایس ایس کو کنڑ اور کرناٹک مخالفت کہتے آرہے ہیں۔ گذشتہ ماہ کنڑحامی تنظیموں، کارکنان اور ادبی دنیا کے لوگوں کے ساتھ سدارمیا نے کرناٹک کے لئے ایک الگ جھنڈے کی بات کہی تھی۔ سدا رمیا بی  جے پی کو "ہندی بیلٹ" پارٹی بھی کہتے ہیں۔

      کرناٹک کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ پورے اسمبلی الیکشن کو شمالی ہندوستان کے لوگ انتظام کررہے ہیں اور بی جے پی کے مقامی لیڈران ان کی کٹھ پتلی ہیں۔

       
      First published: