ہوم » نیوز » وطن نامہ

شاہین باغ کی خاتون مظاہرین کی حمایت میں سورا بھاسکر اور سیتا رام یچوری نےمودی حکومت پرعائد کیا بڑا الزام

سی پی آئی لیڈر سیتا رام یچوری (Sitaram Yechury) نےکہا کہ فسطائی طاقت کچھ بھی کر لیں، لیکن ملک کو بٹنے نہیں دیں گے وہیں سورا بھاسکر (Swara Bhaskar) نے آئین کےحق میں اتنی بڑی تحریک چلانے کےلئے شاہین باغ کی خاتون مظاہرین کا شکریہ ادا کیا۔

  • Share this:
شاہین باغ کی خاتون مظاہرین کی حمایت میں سورا بھاسکر اور سیتا رام یچوری نےمودی حکومت پرعائد کیا بڑا الزام
سورا بھاسکر نے آئین کے تئیں حکومت کے مایوس رکن رویہ پر افسوس کا اظہار کیا۔ تصویر: یو این آئی

نئی دہلی: قومی شہریت (ترمیمی) قانون، این آرسی اور این پی آرکےخلاف شاہین باغ میں جاری مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے مارکسی کمیونسٹ پارٹی کے جنرل سکریٹری اور سابق رکن پارلیمنٹ سیتا رام یچوری نےکہا کہ آج 26 جنوری یوم جمہوریہ کا دن ہے، اسی دن آئین کا نفاذ عمل میں آیا تھا اس لئے آج ہم لوگ آئین کی حفاظت کا حلف لیتے ہیں۔ انہوں نےکہا کہ شاہین باغ کی خواتین ملک کو بچانے نکلی ہیں اور وہ ملک کو تقسیم نہیں ہونے دیں گی۔ انہوں نےکہا کہ فسطائی طاقت کچھ بھی کرلیں،لیکن ملک کو بٹنے نہیں دیں گے۔ انہوں نے دعوی کیا کہ مودی جی اور امت شاہ ایک شاہین باغ بننے سے پریشان تھے، اس وقت ملک میں سینکڑوں شاہین باغ بن چکے ہیں اور صرف دہلی میں ہی درجنوں شاہین باغ ہیں۔ انہوں نےکہاکہ اگر حکومت شاہین باغ اور ملک کے دیگر حصوں میں ہونے والے احتجاج کو ختم کرانا چاہتی ہے، تو پہلے اسے قومی شہریت (ترمیمی)قانون، این آر سی اور این پی آر واپس لینا ہوگا۔


سیتا رام یچوری نے کہا ہے کہ شاہین باغ کی خاتون مظاہرین ملک کومزید تقسیم نہیں ہونے دیں گی۔ تصویر: یو این آئی
سیتا رام یچوری نے کہا ہے کہ شاہین باغ کی خاتون مظاہرین ملک کومزید تقسیم نہیں ہونے دیں گی۔ تصویر: یو این آئی


انہوں نےکہا کہ حکومت یہ سمجھتی تھی اس کی مخالفت صرف مسلمان ہی کریں گے، میں ان کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ میں سیتا رام یچوری ہندو اس کی مخالفت کر رہا ہوں۔ انہوں نےکہا کہ ہم (ہ سے ہندو اور م سے مسلم) ہ اور میم سے بنا ہے، لیکن موجودہ حکومت اس کے خلاف کام کر رہی ہے۔ انہوں نے مظاہرین سے کاغذ نہ دکھانےکی اپیل کرتے ہوئےکہاکہ ہم کسی بھی صورت میں کاغذ نہیں دکھائیں گے۔ انہوں نےکہا کہ 1947 میں تقسیم کے وقت مسلمانوں کے پاس متبادل تھا کہ وہ پاکستان چلے جائیں، لیکن مسلمانوں نے ہندوستان میں رہنا پسندکیا۔ انہوں نےکہاکہ کشمیر میں انٹرنیٹ بند ہے اور ہزاروں لوگ جیلوں میں بند ہیں، لیکن حکومت اس کے بارے میں کچھ بتانا نہیں چاہتی۔ انہوں نے شاہین باغ خاتون مظاہرین سے اظہار یکجہتی کرتےہوئےکہا کہ یہ مظاہرہ اس وقت تک جاری رکھیں جب تک حکومت اسے واپس نہیں لیتی۔

ممتاز اداکارہ اور سماجی کارکن سورا بھاسکر نے آئین کے حق میں اتنی بڑی تحریک چلانے کےلئے شاہین باغ خاتون مظاہرین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے اس مظاہرہ کے ذریعہ ملک کے عوام کا ایمان جگادیا ہے، اس کے لئے آپ کا شکریہ۔ انہوں نے مظاہرین کے تئیں حکومت کی بے حسی پر سخت تنقید کرتے ہوئےکہا کہ دادیاں نانیاں روٹھی ہیں، لیکن یہ نالائق پوتےان کو منانے کےلئے نہیں آئے ہیں۔ انہوں نےکہا کہ سب سے آسان کام دادی نانی کو منانا ہوتا ہے۔

اداکارہ سورا بھاسکر نے شاہین باغ میں خواتین کے احتجاج کو خطاب کیا۔ تصویر: یو این آئی


سورا بھاسکر نے آئین کے تئیں حکومت کے مایوس رکن رویہ کا ذکر کرتے ہوئےکہا کہ جو لوگ حکومت میں رہتے ہوئے آئین کی عزت نہیں کرتے وہ دوسروں کی عزت کیا کریں گے۔ انہوں نےکہا کہ ہمارا آئین صرف خود مختاری کا دستاویز نہیں ہے بلکہ کیا ہوسکتا ہے اور ایسا ایک خواب ہے جس میں سب کے لئے جگہ ہے۔انہوں نےکہا کہ ہم لوگوں نے جن کو ووٹ دےکرمنتخب کیا تھا کہ وہ ملک کو آئین کے مطابق چلائیں گے، لیکن وہ آج ملک کے آئین کےلئے خطرہ بن گئے ہیں۔ انہوں نےکہا کہ جیسے انتخابات آتے ہیں ہمارے لیڈر اول جلول بولنا شروع کردیتے ہیں اور شاہین باغ کے بارے میں اول جلول بولنےلگے ہیں، لیکن وہ یہاں آکر دیکھیں ہر جگہ ترنگا ہی نظر آئےگا۔ انہوں نے موجودہ حکومت الزام لگاتے ہوئےکہا کہ اقتدار سے اسے اندھا کردیا ہے اور وہ صحیح سوچ نہیں پارہے ہیں اور جب بھی دیکھیں یکطرفہ طور پر پاکستان پاکستان پاکستان کرتے نظر آتے ہیں۔ اگر انہیں پاکستان سے اتنا ہی لگاؤ ہے تو وہ پاکستان چلے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ملک میں اتحاد و سالمیت سے بڑھ کر کچھ نہیں ہے اور شاہین کی خواتین ملک کو بچانے کے لئے نکل پڑی ہیں اور انہوں نے جو لڑائی چھیڑی ہے اسے ہر حال میں برقرار رکھیں۔

نیوز ایجنسی یو این آئی کی رپورٹ
First published: Jan 27, 2020 07:11 PM IST