உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    توتیکورن تشدد : 13 افراد کی موت کے بعد حرکت میں آئی حکومت ، ہمیشہ کیلئے بند ہوگا اسٹرلائٹ پلانٹ

    توتیکورین میں تشدد بھڑکنے کے بعد پولیس فائرنگ میں 13 لوگوں کی موت ہوگئی تھی۔

    توتیکورین میں تشدد بھڑکنے کے بعد پولیس فائرنگ میں 13 لوگوں کی موت ہوگئی تھی۔

    تمل ناڈو حکومت نے توتیکورین میں واقع اسٹرلائٹ پلانٹ کو ہمیشہ کیلئے بند کرنے کا حکم دیا ہے۔

    • Share this:
      چنئی : تمل ناڈو حکومت نے توتیکورین میں واقع اسٹرلائٹ پلانٹ کو ہمیشہ کیلئے بند کرنے کا حکم دیا ہے۔ توتیکورین میں تشدد بھڑکنے کے بعد پولیس فائرنگ میں 13 لوگوں کی موت ہوگئی تھی۔ تمل ناڈو کے توتیکورین ضلع میں ویدانتا گروپ کی اسٹرلائٹ کاپر یونٹ کے خلاف مہینوں سے جاری مظاہرہ اچانک پرتشدد ہوجانے کے بعد پولیس کو فائرنگ کرنی پڑی ، جس میں 13 لوگوں کی موت ہوگئی تھی اور 30 سے زیادہ افراد زخمی ہوگئے تھے۔ تشدد بھڑکنے کے بعد علاقہ میں دفعہ 144 نافذ ہوگیا تھا اور انٹرنیٹ خدمات بند کردی گئی تھیں۔
      مظاہرین کے مطابق کاپر فیکٹری سے ہورہی آلودگی کی وجہ سے یہاں کا زمینی پانی بھی آلودہ ہورہا ہے ۔ علاقہ میں پینے کے پانی کی پریشانی بڑھ رہی ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اس فیکٹری کی آلودگی کی وجہ سے صحت سے وابستہ سنگین پریشانیاں پیدا ہورہی ہیں۔ حال ہی میں اس کمپنی نے شہر میں اپنی مزید یونٹ لگانے کا اعلان کیا ہے ، اس لئے مقامی لوگ مظاہرہ کررہے ہیں۔ مظاہرین نے موجودہ فیکٹری کو بند کرنے اور مستقبل میں کوئی اور یونٹ چالو نہیں کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔
      سال 1997 میں شروع ہوئی یہ کمپنی توتیکورن میں کاپر کی کھودائی کرتی ہے۔ پلانٹ کی یونٹ میں ایک اسمیلٹر ، ایک ریفائنری ، ایک فاسفورس ایسڈ پلانٹ ، ایک کاپر راڈ پلانٹ اور تین کیپٹو پاور پلانٹ شامل ہیں۔ مقامی لوگوں اور تحفظ حقوق ماحولیات سے متعلق گروپوں کا کہناہے کہ اس پلانٹ کی وجہ سے گراونڈ واٹر اور ہوا آلودہ ہورہی ہے۔
      First published: