உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سبریمالا مندر میں خواتین کو داخلہ کی ملی اجازت: سپریم کورٹ کا بڑا فیصلہ

    عدالت نے سبريمالا مندر میں خواتین کے داخلے کی اجازت دے دی ہے۔

    عدالت نے سبريمالا مندر میں خواتین کے داخلے کی اجازت دے دی ہے۔

    سپریم کورٹ نے کیرالہ کے سبريمالا مندر میں 10-50 سال کی عمر کی خواتین کے داخلہ پر روک کو چیلنج دینے والی درخواستوں پر سماعت کرتے ہوئے مندر میں خواتین کے داخلے کی اجازت دے دی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      سپریم کورٹ نے کیرالہ کے سبريمالا مندر میں 10-50 سال کی عمر کی خواتین کے داخلہ پر روک کو چیلنج دینے والی درخواستوں پر جمعہ کو اپنا فیصلہ سنا دیا۔ عدالت نے سبريمالا مندر میں خواتین کے داخلے کی اجازت دے دی ہے۔ چیف جسٹس دیپک مشرا کی قیادت والی پانچ رکنی آئینی بنچ نے آٹھ دنوں تک جاری رہی سماعت کے بعد یکم اگست کو اس معاملے میں اپنا فیصلہ محفوظ رکھ لیا تھا۔

      عدالت نے واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ ہر عمر کی خواتین اب مندر میں داخل ہو سکیں گی۔ جمعہ کو اپنے فیصلے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ ہماری ثقافت میں خواتین کی حیثیت قابل احترام ہے۔ یہاں خواتین کو دیوی کی طرح پوجا جاتا ہے اور مندر میں داخل ہونے سے روکا جا رہا ہے۔

      چیف جسٹس دیپک مشرا نے فیصلہ کو پڑھتے ہوئے کہا، " مذہب کے نام پر مردوں کی غلبہ والی سوچ صحیح نہیں ہے۔ عمر کی بنیاد پر مندر میں داخلے سے روکنا مذہب کا لازمی حصہ نہیں ہے۔ آپ کو بتا دیں کہ سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ 4-1 کی اکثریت سے آیا ہے۔ چیف جسٹس نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ پوجا کرنے کا حق تمام عقیدت مندوں کو دیا جاتا ہے اور صنف کی بنیاد پر اس میں کوئی تفریق نہیں کی جاتی ہے۔

      بتا دیں کہ  سبریمالا مندر میں 10 سے 50 سال کی عمر کی خواتین کو داخلہ کی اجازت نہیں دی جاتی تھی۔ مندر انتظامیہ کے مطابق، اس عمر کی خواتین کے مندر میں داخلہ پر روک اس لئے لگائی گئی ہے کیوں کہ وہ حیض کی مدت کے دوران پاک نہیں رہ پاتی ہیں۔

       
      First published: