ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

دیشا قتل کیس انکاؤنٹر: سپریم کورٹ میں ہوئی سماعت،عدالت نے سنایا یہ بڑا فیصلہ

عدالت نے اس معاملہ کی جانچ کے لئے عدالتی جانچ کے احکام دیئے۔ یہ جانچ تین رکنی کمیٹی کرے گی جس کی قیادت سپریم کورٹ کے سابق جج جسٹس وی ایس سرپورکار کریں گے۔

  • Share this:

تلنگانہ کے سائبر آباد پولیس کمشنریٹ کے حدود میں 26سالہ ویٹرنری ڈاکٹر کی اجتماعی عصمت دری کے بعد اس کے قتل اور لاش کو جلادینے کی واردات میں ملوث ملزمین کی انکاونٹر میں ہلاکت کے معاملہ کی سماعت آج دوسرے دن بھی سپریم کورٹ میں کی گئی۔عدالت نے اس معاملہ کی جانچ کے لئے عدالتی جانچ کے احکام دیئے۔ یہ جانچ تین رکنی کمیٹی کرے گی جس کی قیادت سپریم کورٹ کے سابق جج جسٹس وی ایس سرپورکار کریں گے۔عدالت عظمی نے کہا کہ اس عدالت کے تاحکم ثانی احکامات تک کوئی بھی عدالت یا حکام اس معاملہ کی جانچ نہ کرے۔عدالت نے کہاکہ سپریم کورٹ کی جانب سے کی جانے والی عدالتی جانچ کو اندرون چھ ماہ مکمل کرنا چاہئے۔




سماعت کے دوران جسٹس بوبڈے نے تلنگانہ حکومت کی طرف سے رجوع ہونے والے سینئر وکیل مُکل روہتگی سے کہا ”ہم یہ نہیں کہہ رہے ہیں کہ آپ(پولیس) خاطی ہے۔ہم جانچ کے احکام دے رہے ہیں اور اس میں پولیس کو بھی شامل کیاجائے گا۔ جسٹس بوبڈے نے مکل روہتگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ یہ کہہ رہے ہیں کہ اس انکاونٹر میں ملوث پولیس ملازمین کے خلاف فوجداری عدالت میں قانونی چارہ جوئی کی جائے گی تو ہمارے لئے کرنے کے لئے کچھ بھی نہیں رہے گا تاہم اگر آپ یہ کہہ رہے ہیں یہ ملازمین پولیس بے گناہ ہیں تو پھر عوام کو حقیقت معلوم ہونے دیجئے۔اس معاملہ پر حقائق کو ہم گھڑنا نہیں چاہتے۔اس معاملہ کی جانچ ہونے دیجئے۔اس پر آپ کیوں مزاحمت کررہے ہیں؟



مکل روہتگی نے عدالت سے کہا کہ ماضی میں عدالت نے سپریم کورٹ کے موظف جج کو جانچ کے لئے مقرر کیا تھا تاہم جانچ کی نگرانی سپریم کورٹ کا جج نہیں کرسکتا۔ قبل ازیں عرضی گزار جی ایس مانی نے بنچ سے کہا کہ یہ انکاونٹر جان بوجھ کر کیاگیا ہے۔اس مرحلہ پر چیف جسٹس بوبڈے نے عرضی گزار سے سوال کیا کہ آپ نے کیوں یہ عرضی دائر کی ہے؟اور کہا کہ دراصل وہاں کیا ہوا کوئی بھی نہیں جانتا۔ مکل روہتگی نے دلائل پیش کئے اور انکاونٹر کی تفصیلات سے عدالت عظمی کو واقف کروایا۔انہوں نے کہا کہ دو ملزمین نے پولیس کی پستول چھینی اور فائرنگ کردی۔انہوں نے واضح کیاکہ انکاونٹر کے سلسلہ میں عدالت کی جانب سے قبل ازیں جاری کردہ رہنمایانہ خطوط کی پولیس نے خلاف ورزی نہیں کی ہے۔اس انکاونٹر پر پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں سے بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے۔وکلا جی ایس مانی،پردیپ کماریادو،مکیش کمار کی جانب سے داخل کردہ اس عرضی کی سماعت جسٹس بوبڈے،جسٹس عبدالنظیر،جسٹس سنجے پر مشتمل بنچ نے سماعت کی
First published: Dec 12, 2019 02:02 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading