ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

فلم کاسین بن گیا حقیقت: 30روپئے میں فروخت ہورہی تھی بریانی، پولیس چھاپے میں ہوا بڑا انکشاف

رمیسورم میں محکمہ فوڈ سیفٹی نے حکام سڑک کے کنارے کی ایک گاڑی پر چھاپہ مارا تو ان کے ہوش اڑ گئے۔ چکن بریانی کے نام پر لوگوں کو دھوکہ دے کر انہیں کو ا بریانی کھلائی جارہی تھی

  • Share this:
فلم کاسین بن گیا حقیقت: 30روپئے میں فروخت ہورہی  تھی بریانی، پولیس چھاپے میں ہوا بڑا انکشاف
علامتی تصویر: نیوز18

اگر آپ ابھیشیک بچن اور بھومیکا چاولہ کی فلم رن دیکھ چکے ہیں ، تو آپ کو اس فلم میں دکھائے گئے کواگوشت بریانی کا سین یقیناً یاد ہوگا۔ اس سین میں ، یہ دکھایا گیا ہے کہ کس طرح روڈ سائیڈ کارنر پر چکن بریانی کے نام پر اداکار وجے راج کو کوا بریانی کھلائی جاتی ہے۔۔ اسی طرح کا معاملہ تامل ناڈو کے رامیسرم میں بھی سامنے آیا ہے۔


'ہندوستان ٹائمز' کی ایک رپورٹ کے مطابق ، جب رمیسورم میں محکمہ فوڈ سیفٹی نے حکام سڑک کے کنارے کی ایک گاڑی پر چھاپہ مارا تو ان کے ہوش اڑ گئے۔ چکن بریانی کے نام پر لوگوں کو دھوکہ دے کر انہیں کو ا بریانی کھلائی جارہی تھی۔ بتایا جارہا ہے کہ کوابریانی یہاں چکن بریانی کے نام پر 30 روپے میں فروخت ہورہی تھی۔


پورا معاملہ کیا ہے؟


در حقیقت ، جس بنڈی پر چھاپہ مارا گیا تھا وہ رامیسرم مندر کے قریب ہے۔ یہاں عقیدت مندوں کوبنڈی پر کوا بریانی فروخت ہونے کا شبہ ہوا۔ کیونکہ یہاں عقیدت مند کووں کو دانا ڈالتے تھے۔ لیکن کچھ دنوں سے یہاں کوے مردہ مل رہے تھے۔ ایک عقیدت مند نے اس کے بارے میں پولیس کو اطلاع دی۔ اس کے بعد پولیس محکمہ فوڈ کے عہدیداروں کے ساتھ اس علاقہ کا جائزہ لیا۔

150 مردہ کوے برآمد : پولیس

پولیس نے گاڑی پر چھاپہ مارا اور وہاں سے 150 مردہ کوے برآمد کرلئے۔ پولیس نےبنڈی چلانے والے شخص اور اس کےساتھی کو گرفتار کرلیا۔ دوران تفتیش ان دونوں نے حیران کن انکشافات کیا۔

کیسے چل رہا تھا کالا کاروبار

بنڈی والے تاجر نےپولیس کو بتایا کہ اس کالے کاروبار سےبہت لو گ وابستہ ہے۔ پہلے یہ لوگ چاؤل میں زہر ملا کر سڑک پر پھیلاتے تھے۔ جسے کھانے کے بعد کوےمر جاتے تھے ، پھر یہ مردہ کوے چھوٹے دکانداروں کو فروخت کردیئے جاتے ہیں۔ دکاندار یہ کوا کا گوشت چکن بریانی کے نام پر فروخت کرتے تھے۔ جانچ کے دوران بنڈی والے بتایا کہ کوے گوشت سے نہ صرف بریانی بلکہ ’’چکن لولی پاپ، بھی کم قیمتوں پر فروخت کیے جارہے تھے۔قیمت کم ہونے سے بنڈی پر صارفین کا ہجوم رہتاتھا۔

تاہم ، یہ پہلا موقع نہیں ہے جب کوا بریانی کا معاملہ منظرعام پر آیا ہے۔ اس سے پہلے دہلی اور کولکاتہ میں کوا اور کتے کی بریانی کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ جبکہ اس پہلے چنئی میں ہی سال 2018 میں ، محکمہ خوراک نے ایک بنڈی پر چھاپہ مارا اور کتے اور بلی کا گوشت فروخت کرنے والے کو گرفتار کرلیاتھا۔
First published: Feb 04, 2020 10:21 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading