உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    BJP MLA Raja Singh: راجہ سنگھ نےکیاملک بھرمیں حجاب پر پابندی کا مطالبہ، کہی اپنی ویڈیو میں یہ باتیں

    راجہ سنگھ (Telangana BJP MLA Raja Singh) نے کرناٹک حکومت کو حجاب پر پابندی لگانے پر مبارکباد دی۔ سنگھ نے باقی ریاستوں پر زور دیا کہ وہ کرناٹک حکومت کے ذریعہ قائم کردہ مثال کی پیروی کریں اور حجاب پر مکمل پابندی عائد کریں۔

    راجہ سنگھ (Telangana BJP MLA Raja Singh) نے کرناٹک حکومت کو حجاب پر پابندی لگانے پر مبارکباد دی۔ سنگھ نے باقی ریاستوں پر زور دیا کہ وہ کرناٹک حکومت کے ذریعہ قائم کردہ مثال کی پیروی کریں اور حجاب پر مکمل پابندی عائد کریں۔

    راجہ سنگھ (Telangana BJP MLA Raja Singh) نے کرناٹک حکومت کو حجاب پر پابندی لگانے پر مبارکباد دی۔ سنگھ نے باقی ریاستوں پر زور دیا کہ وہ کرناٹک حکومت کے ذریعہ قائم کردہ مثال کی پیروی کریں اور حجاب پر مکمل پابندی عائد کریں۔

    • Share this:
      حیدرآباد (Hyderabad): بھارتیہ جنتا پارٹی (BJP) کے رہنما اور گوشہ محل کے ایم ایل اے راجہ سنگھ (Raja Singh) نے منگل کو ملک گیر حجاب (Hijab) پر پابندی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ تعلیمی اداروں میں کسی کے مذہب کی تبلیغ کے لیے جگہ نہیں ہیں۔ ٹویٹر پر جاری ایک ویڈیو پیغام میں حیدرآباد میں واقع گوشہ محل نامی علاقہ کے ایم ایل اے راجہ سنگھ نے کرناٹک حکومت کی تعریف کی، جہاں مسلم طلبا کو کالج کے احاطے میں داخل ہونے سے روکا گیا تھا۔

      راجہ سنگھ نے کرناٹک حکومت کو حجاب پر پابندی لگانے پر مبارکباد دی۔ سنگھ نے باقی ریاستوں پر زور دیا کہ وہ کرناٹک حکومت کے ذریعہ قائم کردہ مثال کی پیروی کریں اور حجاب پر مکمل پابندی عائد کریں۔ انھوں نے ہندی میں ایک ٹویٹ میں کہا کہ کرناٹک کی حکومت نے اسکولوں اور کالجوں میں حجاب پہننے پر پابندی لگا دی ہے، میں اس کی حمایت کرتا ہوں۔ جو بھی اس کی مخالفت کر رہا ہے، میں ان سے کہنا چاہتا ہوں کہ برائے مہربانی اپنے بچوں کو مدرسے میں تعلیم دلائیں کیونکہ اسکول ہو یا کالج ہو، ان کا نیم (اصول) ہوتا ہے۔


      سنگھ نے مزید کہا کہ اگر مسلمانوں کو کرناٹک حکومت کے تازہ ترین مینڈیٹ سے کوئی مسئلہ ہے تو انہیں اپنے بچوں کو کالجوں اور اسکولوں میں بھیجنا بند کر دینا چاہیے۔

      انھوں نے اپنے ویڈیو میں کہا ہے کہ کرناٹک حکومت نے ایک بہت اچھا فیصلہ کیا ہے کہ حجاب پہن کر اسکول اور کالج میں نہ آئیں۔ یہ بہت اچھا فیصلہ ہے۔ میں کرناٹک حکومت کو مبارکباد دینا چاہوں گا اور وزیر اعلی کو بھی مبارکباد دینا چاہوں گا۔ کرناٹک حکومت نے جو کام کیا ہے، اسے ہر ریاست کی حکومتیں کریں، کیونکہ کرناٹک حکومت کا فیصلہ ہے کہ اسکول یا کالج پڑھنے کے لیے ہے، نہ کہ اپنے مذہب کی تبلیغ کرنے کے لیے۔

      انھوں نے اپنے ویڈیو میں مزید کہا کہ تو اس سے آپ کو تکلیف کیوں؟ اگر آپ کو تکلیف ہے تو اپنا اسکول اور کالج الگ سے بنوالیں۔ آپ لوگوں کے پہلے سے ہی کئی مدرسے ہیں۔ مدرسوں میں پڑھالیں۔ اسکول میں آکر ہندو اور مسلمان کرنے کا آپ کو حق حاصل نہیں ہے اور جب حکومت فیصلہ لیتی تو اگر حکومت سے ناراضگی ہے تو آپ اپنی دوکان الگ سے کھول لیں۔ مخالفت کیوں کرتے ہوں؟ آپ مت بھجیے اسکول اور کالج کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کرناٹک حکومت نے جو فیصلہ کیا ہر حکومت اسی طرح کا فیصلہ لیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: