ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

تلنگانہ حکومت کا بڑا اعلان: تین لاکھ مزدوروں کو بھیجے گی ان کے گھر واپس

تلنگانہ میں ایک اندازہ کے مطابق آٹھ لاکھ ایسے مزدور ہیں جنکا تعلق دوسری ریاستوں سے ہے ان میں سے زیادہ تر شمالی ہند کی ریاستوں بہار اتر پردیش جھارکھنڈ چھتیس گڑھ راجستھان اور مغربی بنگال کے رہنے والے ہیں۔

  • Share this:
تلنگانہ حکومت کا بڑا اعلان: تین لاکھ مزدوروں کو بھیجے گی ان کے گھر واپس
علامتی تصویر

حکومت تلنگانہ نے ریاست کے مختلف مقامات سے ایک ہفتہ تک روزانہ 40 اسپیشل  کے ذریعہ دوسری ریاست کے مزدوروں کو انکے گھر بھیجنے کا اعلان کیا ہے مزدوروں کے لیے اسپیشل ٹرینس حیدرآباد سکندرآباد نام پلی ورنگل کھمم داما چرلہ اور دوسرے اسٹیشنز سے ملک کے مختلف مقامات کے لیے چلائے جائیں گے۔ تلنگانہ میں ایک اندازہ کے مطابق آٹھ لاکھ ایسے مزدور ہیں جنکا تعلق دوسری ریاستوں سے ہے ان میں سے زیادہ تر  شمالی ہند کی ریاستوں بہار اتر پردیش جھارکھنڈ چھتیس گڑھ راجستھان اور مغربی بنگال کے رہنے والے ہیں۔

لاک ڈاؤن میں توسیع کے تیسرے مرحلہ کے بعد کام اور تنخواہ سے محروم لاکھوں مزدوروں میں شدید بے چینی دیکھی گئی ہے ۔ حیدرآباد اور ریاست کے کئی مقامات پر یہ مزدور سڑکوں پر احتجاج کرتے ہوئے دیکھے جا رہے ہیںتلنگانہ کے ڈائریکٹر جنرل آف پولیس کے مہیندر ریڈی نے دو مئی کی شام اعلان کیا تھا کہ اپنے گھر واپس جانے کے خواہشمند دوسری ریاستوں کے ورکرس ویب سائٹ https://tsp.koopid.ai/epassپر رجٹریشن کے ذریعہ ای پاس حاصل کریں۔ اس ویب سائٹ کے ذریعہ تین اور چار مئی کو تقریباً آنھ  ہزار ای پاس جاری کیے گئے لیکن چار مئی کی دوپہر کو ہی اس ویب سائٹ  پر شدید ٹریفک کی وجہ سے اسے عارضی طور معطل کرنے کا میسیج دیکھا گیا۔ اب حکومت تلنگانہ نے اعلان کیا ہے کہ ایسے  مائیگرینٹ ورکرس جنہوں نے مقامی پولیس اسٹیشنز پر اپنے نام درج کروائے ہیں انہیں سفر کا اجازت نامہ دیا جائے گا ۔ حکومت نے  ان ورکرس  کو یقین دلایا کہ وہ نہ گھبرائیں ان کے سفر کے مکمل انتظامات کیے جائیں گے  ۔ محکمہ پولیس کو ہدایت دی گئی کہ وہ انکے سفر کے لیے ضروری تعاون کریں۔

شہر حیدرآباد میں مقامی پولیس اسٹیشنز پر آدھار کارڈ کے ذریعہ رجسٹریشن کا آغاز کیا جا چکا ہے کئی پولیس اسیشنس پر مایگرانٹ ورکرس کی لمبی قطاریں دیکھی گئیں۔  ان میں سے اکثر مزدوروں نے یہ التجا کی کہ ان کے ٹکٹ کا بھی انتظام کروایا جاۓ ۔

لاک ڈاؤن کے آغاز پر  تلنگانہ کے چیف منسٹر کے چندرشیکھرراؤ نے مائیگرینٹ ورکرس کو ریاست کی ترقی کے حصہ دار کہتے ہوئے انہیں مقامی راشن کارڈ رکھنے والے شہریوں کی طرح چاول آٹا اور نقد رقم اور ان کے لیے ٹھکانے قائم کرنے کا اعلان کیا تھا ان میں کچھ کو چاول ملے لیکن  نقد رقم  تقسیم نہیں کی گئی۔


اسی دوران جب لاک ڈاؤن کو دوسری اور پھر تیسری بار توسیع دی گئی تو یہ مزدور بے چین ہو کر سڑکوں پر نکل آئے ۔ جیسے ہی مرکزی حکومت نے مزدوروں کو ایک ریاست سے دوسری ریاست سفر کی اجازت دی اس کے دوسرے ہی دن یعنی یکم مئی کو تلنگانہ سے جھارکھنڈ کے لیے خصوصی ٹرین کا انتظام کیا گیا تھا جس کے ذریعہ بارہ سو مزدوروں کو حیدرآباد سے ہتھیا تک سفر کے انتظامات کیے گئے تھے۔ ایک اندازے کے مطابق اگلے ایک ہفتہ کے دوران تلنگانہ سے  ڈھائی سے تین لاکھ مزدوروں کو ان کے گھر بھجوایا جائے گا ۔
First published: May 05, 2020 12:30 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading