ہوم » نیوز » وطن نامہ

شادی کیلئے تیار ہو رہی تھی خاتون، تبھی ہوا کچھ ایسا کہ دیکھ کر آپ کے اڑ جائیں گے ہوش

آپ کو بتہ لگے گھر میں سانپ نکل آیا ہے تو آپ کیا کریں گے۔ یقینا آپ کے ہاتھ پاؤں پھول جائیں گے اور آپ ڈر سے کانپنے لگیں گے لیکن سوشل میڈیا پر ہمیں ملا ایک ویڈیو تو کچھ اور ہی بیان کر رہا ہے ساتھ ہی اس ویڈیو میں آپ ایک خاتون کی ہمت بھی دیکھ سکتے ہیں۔

  • Share this:
شادی کیلئے تیار ہو رہی تھی خاتون، تبھی ہوا کچھ ایسا کہ دیکھ کر آپ کے اڑ جائیں گے ہوش
سوشل وائرل۔۔۔

آپ کسی شادی تقریب میں شامل ہونے کی تیاری کر رہے ہیں اور تبھی آپ کو بتہ لگے گھر میں سانپ نکل آیا ہے تو آپ کیا کریں گے۔ یقینا آپ کے ہاتھ پاؤں پھول جائیں گے اور آپ ڈر سے کانپنے لگیں گے لیکن سوشل میڈیا پر ہمیں ملا ایک ویڈیو تو کچھ اور ہی بیان کر رہا ہے ساتھ ہی اس ویڈیو میں آپ ایک خاتون کی ہمت بھی دیکھ سکتے ہیں۔ دراصل گزشتہ سال سوشل میڈیا  (Social Media) میں کرناٹک کا ایک ویڈیو تیزی سے وائرل ہوا تھا جسے دیکھ کر آپ کے رونگٹے کھٹے ہو جائیں گے۔ اس ویڈیو میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ شادی میں جا رہی ایک خاتون نے گھر میں سانپ دیکھا اور اسے کوئی اوزار نہیں ملا تو ہاتھ سے ہی سانپ (Snake) پکڑ لیا۔


خاتون کے اس جذبے کو سوشل میڈیا یوزرس نے خوب سراہا  تھا۔ دراصل کرناٹ کی خاتون ہے جو ایک اسنیک ریسکیو ہیں۔ یعنی وہ سانپوں کے تحفظ کیلئے کام کرتی ہیں اور وہ اتنی ایکسپرٹ ہیں کہ وہ بغیر کسی اوزار یا بغیر کسی تحفظ کے ہی ننگے ہاتھوں سے سانپ کو پکڑ لیتی ہیں۔ ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ انہوں نے بغیر ڈرے ہی بڑے سکون سے خطرناک سانپ کو پکڑا۔ اس دوران وہاں کھڑے لوگ صرف ان کو تکتے رہے۔ لوگ موبائل نکال کر ویڈٰو شوٹ کرتے رہے لیکن کسی کی نزدیک جانے کی ہمت نہ ہوئی۔




دو منٹ سے کم کے ویڈیو میں نرجرا ساڑی پہنے نظر آرہی ہے۔ ساڑی میں سانپ پکڑنا کافی مشکل ہے۔ یہ باکل بھی پرسکون نہیں ہے۔ اس کے بعد بھی نرجرا نے بغیر ڈرے سانپ کو ایسے پکڑ لیا جیسے وہ کوئی میلے سے لایا ہوا کھلونا سانپ ہو۔ ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ الماری کے پیچھے ۔چھپے سانپ کو پکڑنے کیلئے خاتون نے صرف چھڑی کا استعمال کیا۔ اس چھڑی کے سہارے ہی انہوں نے سانپ کو ایک جگہ کیا اور پھر پونچگ پکڑ کر اسے اٹھا لیا۔ اس دوران وہ کہہ رہی ہیں کہ وہ ایک تقریب کیلئے تیار تھیں اور آنے سے پہلے وہ ساڑی بدل نہیں سکتی تھیں۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jun 15, 2021 03:17 PM IST