ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

کرناٹک : قوت مدافعت کو بڑھانے کیلئے بیداری مہم شروع کرنے کا فیصلہ ، علما ، آیوش ڈاکٹروں اور عوامی نمائندوں کی اہم میٹنگ

اجلاس میں یونانی ، آیرویدا ، ہومیوپیتھی کے ڈاکٹروں نے کورونا وبا کے پیش نظر محکمہ آیوش سے منظور کئے گئے احتیاطی نسخوں کی جانکاری فراہم کی ۔

  • Share this:
کرناٹک : قوت مدافعت کو بڑھانے کیلئے بیداری مہم شروع کرنے کا فیصلہ ، علما ، آیوش ڈاکٹروں اور عوامی نمائندوں کی اہم میٹنگ
کرناٹک : قوت مدافعت کو بڑھانے کیلئے بیداری مہم شروع کرنے کا فیصلہ

بنگلورو سمیت کرناٹک کے چند شہروں میں کورونا کے پازیٹیو کیسوں میں اچانک اچھال آیا ہے۔ کورونا سے مرنے والوں کی تعداد بھی بڑھ رہی ہے ۔ موجودہ صورتحال پر غور و فکر کرنے کیلئے ایک اہم اجلاس منعقد ہوا ۔ بنگلورو کی مسجد قادریہ میں ہوئے اس اجلاس میں علما کرام ، ڈاکٹرس اور عوامی نمائندوں نے شرکت کی ۔ اجلاس میں چامراج پیٹ کے ایم ایل اے ضمیر احمد خان ، شیواجی نگر کے ایم ایل اے رضوان ارشد نے اپنے اپنے حلقوں میں کورونا متاثرین کیلئے اسپتالوں میں موجود سہولیات ، اضافی انتظامات کی جانکاری فراہم کی ۔ اب جبکہ کیسوں میں اضافہ ہورہا ہے تو اسپتالوں میں بیڈ کی قلت ، ایمبولینس ، وینٹلیٹرس ، طبی عملے ، رضاکاروں کی کمی اور طرح طرح کے مسائل بھی پیدا ہور ہے ہیں ، ان حالات میں کس طرح کام کیا جائے ، اس پر اجلاس میں غور و خوص کیا گیا ۔


میٹنگ میں یہ تجویز بھی سامنے آئی کہ وقف اداروں کے تحت قائم ہاسٹلوں ، شادی گھروں کو بھی ضرورت پڑنے پر استعمال کیا جانا چاہئے ۔ ایم ایل سی نصیر احمد نے کہا کہ کورونا متاثرین کی فوری مدد کرنا اس وقت انسانیت کا سب سے بڑا تقاضہ ہے ۔ لہذا وقف ادارے ، ملی اور سماجی تنظیمیں سب مل کر آگے آئیں اور اس وبا سے نمٹنے کیلئے حکومت کا ہاتھ بٹائیں ۔ جمعیت علماء ہند  کرناٹک کے صدر مولانا افتخار احمد قاسمی نے کہا کہ دو محاذوں  پر اس وقت کام کرنے کی ضرورت ہے ۔ پہلا یہ کہ جو افراد کورونا وائرس سے متاثر ہوئے ہیں ، ان کے لئے طبی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے ۔ کورونا کے مریضوں کے علاج میں کسی طرح کی کمی نہ ہونے پائے اس پر توجہ مرکوز ہو ۔ ساتھ ہی کورونا کی وبا سے بچنے کیلئے جو طریقے حکومت نے بتائے ہیں ، اس سلسلے میں بھی عوام میں بیداری پیدا کی جائے ۔


میٹنگ میں یہ تجویز بھی سامنے آئی کہ وقف اداروں کے تحت قائم ہاسٹلوں ، شادی گھروں کو بھی ضرورت پڑنے پر استعمال کیا جانا چاہئے ۔
میٹنگ میں یہ تجویز بھی سامنے آئی کہ وقف اداروں کے تحت قائم ہاسٹلوں ، شادی گھروں کو بھی ضرورت پڑنے پر استعمال کیا جانا چاہئے ۔


اجلاس میں یونانی ، آیرویدا ، ہومیوپیتھی کے ڈاکٹروں نے کورونا وبا کے پیش نظر محکمہ آیوش سے منظور کئے گئے احتیاطی نسخوں کی جانکاری فراہم کی ۔ ڈاکٹروں نے کہا کہ قوت مدافعت کو بڑھانے کیلئے ہر طریقہ علاج میں قدرتی نسخے موجود ہیں ، جن سے قوت مدافعت بڑھ سکتی ہے ۔ بنگلورو سٹی جامع مسجد کے خطیب و امام مولانا مقصود عمران رشادی نے کہا کہ ڈاکٹر بار بار یہ بات کہہ رہے ہیں کہ اس بیماری کو شکست دینے کیلئے ہر شخص اپنی قوت مدافعت کو بڑھائے ۔ اس سلسلے میں کئی قدرتی اور آسان  نسخے عوام کیلئے تجویز کئے گئے ہیں ۔ مولانا مقصود عمران رشادی نے کہا کہ قوت مدافعت کو بڑھانے کیلئے حکومت سے منظور شدہ نسخوں کے سلسلے میں عوام میں بیداری پیدا کی جائے گی ۔ ڈاکٹروں کی رہنمائی کے ساتھ علما کرام اورعوامی نمائندے اپنی اپنی سطح پر بیداری مہم چلائیں ۔

اجلاس میں مولانا مزمل والا جاہی نے کہا کہ کورونا کی بیماری کو لیکر عوام میں پائے جارہے خوف کو دور کرنے کی ضرورت ہے ۔ ساتھ ہی لوگوں تک صحیح طبی جانکاری فراہم کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اجلاس میں ڈاکٹروں نے کافی مفید معلومات فراہم کی ہیں اور علما  کرام ان معلومات کو عوام تک پہنچانے کا کام اپنے اپنے طور پر انجام دیں گے ۔ طب یونانی سے وابستہ ڈاکٹر جنید نے کہا کہ حکومت نے حال ہی میں یونانی ، ہومیوپیتھی ، آیورویدا اور دیگر روایتی طریقہ علاج کے ڈاکٹروں کو خدمات انجام دینے کی مشروط اجازت دی ہے ۔ انہوں نے واضح کیا کہ آیوش کے ڈاکٹر کورونا کے مریضوں کی تشخیص نہیں کرسکتے اور نہ کورونا کے مریضوں کیلئے کوئی دوا کی سفارش کرسکتے ہیں ۔ تاہم کورونا کی وبا کے پیش نظر محکمہ آیوش  نے چند نسخوں کو منظوری دی ہے اور یہ تمام نسخے قوت مدافعت کو بڑھانے سے متعلق ہیں ۔ لہذا  یونانی اور دیگر قدیم طریقے علاج کے ڈاکٹروں کی یہ ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ ان نسخوں کو عوام تک پہنچائیں ۔

اجلاس میں ڈاکٹر سراج اور ڈاکٹر سمیع اللہ نے کہا کہ صحت و تندرستی کے سلسلے بیداری مہم شروع کرنے کی علما کرام کی پہل وقت کی اہم ضرورت ہے ۔ کرائسیس منیجمنٹ آف انڈیا تنظیم کے نمائندے افسر احمد نے کہا کہ حکومت کی گائیڈ لائنس کے مطابق ہی کورونا مرض سے عوام کی حفاظت کیلئے بیداری مہم چلائی جائے گی ۔
First published: Jun 30, 2020 09:07 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading