உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Climate Change سے متعلق اہداف کے حصول میں مدد کرسکتا ہے ہندوستان: اقوام متحدہ نمائندہ

    ماحولیاتی تبدیلی کو لے کر یو این کو ہے ہندوستان سے یہ امید۔

    ماحولیاتی تبدیلی کو لے کر یو این کو ہے ہندوستان سے یہ امید۔

    اقوام متحدہ کی نمائندہ کائٹ ماحولیاتی بحران سے نمٹنے کی کوششوں پر پالیسی سازوں، تاجروں اور تھنک ٹینکس کے ساتھ بات چیت کرنے کے لیے ہندوستان کے دورے پر ہے۔ آپ کو بتادیں کہ وہ ٹفٹس یونیورسٹی کے فلیچر اسکول کی ڈین بھی ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے موسمیاتی تبدیلی کے اعلیٰ سطحی مشاورتی گروپ کی رکن رشیل کائٹ نے کہا کہ ہندوستان میں نہ صرف 2070 تک 'نیٹ-زیرو' کاربن کے اخراج کا ہدف حاصل کرنے کی صلاحیت ہے، بلکہ وہ دوسرے ممالک کو بھی اس میں مدد کر سکتا ہے۔ کائٹ نے کہا کہ دنیا کو ہندوستان پر داؤ لگانے کی ضرورت ہوگی، کیونکہ یہاں سے موسمیاتی تبدیلی کے بہت سے حل سامنے آئیں گے۔

      ماحولیاتی بحران پر رشیل کائٹ نے کہی بڑی بات
      کائٹ ماحولیاتی بحران سے نمٹنے کی کوششوں پر پالیسی سازوں، تاجروں اور تھنک ٹینکس کے ساتھ بات چیت کرنے کے لیے ہندوستان کے دورے پر ہے۔ آپ کو بتادیں کہ وہ ٹفٹس یونیورسٹی کے فلیچر اسکول کی ڈین بھی ہیں۔ کائٹ کے مطابق، شمسی توانائی کے استعمال میں اضافے کے علاوہ، ہندوستان گرین ہائیڈروجن اور گرین امونیا کا سینٹر بننے کے لیے بھی سنجیدہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کے تھنک ٹینک جیسے نیتی آیوگ اور دیگر سرکاری محکموں کے ساتھ بات چیت میں گرین ہائیڈروجن کے تئیں ہندوستان کی وابستگی پر زور دیا گیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      بورس جانسن اورPM Modiکی ملاقات کے بعد ہوسکتے ہیں کئی اعلانات

      وزیراعظم نریندر مودی کا اعلان
      وزیر اعظم نریندر مودی نے اقوام متحدہ کی موسمیاتی تبدیلی کانفرنس میں اعلان کیا کہ ہندوستان 2070 تک 'نیٹ-زیرو' کاربن کے اخراج کا ہدف حاصل کر لے گا۔ اس کے علاوہ، انہوں نے کہا تھا کہ نان فوسسل ایندھن کی صلاحیت کو 2030 تک 500 گیگا واٹ تک لے جایا جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      ہندوستان کے لئے اتنا میٹھا کیوں بول رہے ہیں شہباز شریف؟ کیا ہے Pakistan کا ارادہ؟

      ساتھ ہی ریچل کائٹ نے کہا، 'میں نے یہاں جس سے بھی ملاقات کی، سب نے گرین ہائیڈروجن کے بارے میں بات کی۔ ہندوستان اپنی معیشت کے لیے سبز توانائی فراہم کرنے والا بن سکتا ہے بلکہ اسے برآمد کرنا بھی شروع کر سکتا ہے۔ تاہم کائٹ نے اس کے لیے 'کافی فنڈز' کی ضرورت بتائی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: