உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

     بھگوان کرشن کی طرح ہندوستان نے روس-یوکرین جنگ کو روکنے کے لئے سب کچھ کیا: ایس جے شنکر

    Russia Ukraine War: وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ ہندوستان نے فروری میں بحران شروع ہونے کے بعد سے ’صحیح راستہ‘ اپنایا تھا۔ انہوں نے کہا، ’سب سے ضروری موضوع... دشمنی کو اس سطح تک بڑھنے سے روکنا ہے، جہاں یہ صرف نقصان ہی پہنچائے‘۔

    Russia Ukraine War: وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ ہندوستان نے فروری میں بحران شروع ہونے کے بعد سے ’صحیح راستہ‘ اپنایا تھا۔ انہوں نے کہا، ’سب سے ضروری موضوع... دشمنی کو اس سطح تک بڑھنے سے روکنا ہے، جہاں یہ صرف نقصان ہی پہنچائے‘۔

    Russia Ukraine War: وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ ہندوستان نے فروری میں بحران شروع ہونے کے بعد سے ’صحیح راستہ‘ اپنایا تھا۔ انہوں نے کہا، ’سب سے ضروری موضوع... دشمنی کو اس سطح تک بڑھنے سے روکنا ہے، جہاں یہ صرف نقصان ہی پہنچائے‘۔

    • Share this:
      نئی دہلی: وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے منگل کو کہا کہ ہندوستان نے یوکرین-روس جنگ کو فوراً ختم کرنے اور اس سے پیدا ہوئے ایندھن اور کھانے کی کمی کے پیش نظر ملک کے اپنے مفاد کی دفاع کرنے کے درمیان توازن قائم کرلیا ہے۔ دہلی یونیورسٹی میں ’مودی@20: ڈریمس میٹ ڈیلیوری‘ کتاب پر ایک تبادلہ خیال کے دوران خطاب کرتے ہوئے ایس جے شنکر نے کہا کہ جنوب ایشیا کے اندر زیادہ انضمام تبھی ہوسکتا ہے جب ہندوستان اس کی قیادت کرے۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے کے دیگر ممالک ہندوستان کی طرف دیکھ رہے ہیں کہ وہ قیادت کرے اور اس کے لئے وسائل جمع کرے۔

      یوکرین میں جو ہو رہا ہے، اس کا موازنہ مہابھارت کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے کہا کہ زندگی بہت مشکل ہے اور یہ کہ سبھی متبادل آسان نہیں ہیں، وزیر خارجہ نے کہا کہ ہندوستان نے فروری میں بحران شروع ہونے کے بعد سے ‘صحیح راستہ‘ اپنایا تھا۔ انہوں نے کہا، ’سب سے ضروری موضوع… دشمنی کو اس سطح تک بڑھنے سے روکنا ہے، جہاں یہ صرف نقصان ہی پہنچائے‘۔ انہوں نے کہا کہ بھگوان کرشن کی طرح، ہندوستان نے جنگ کو روکنے اور بات چیت اور سفارت کاری کے ذریعہ امن کی راہ پر واپسی کی وکالت کرنے کے لئے سب کچھ کیا ہے۔

      ’یوکرین جنگ کے ساتھ ہندوستان کو اپنے مفاد کا تحفظ بھی کرنا ہے‘

      انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان کو اپنے تاریخی اور اسٹریٹجک مفادات کے ساتھ ساتھ یوکرین بحران سے نکلنے والے بڑے موضوعات جیسے ایندھن، کھانا اور کھاد کی کمی کو بھی پورا کرنا ہے۔ انہوں نے کہا، ‘جب کسی جدوجہد کی وجہ سے پوری دنیا کے لوگ بہت گہرائی تک متاثر ہوتے ہیں، تو وہاں اور زیادہ سمجھدار اور خاموش آوازوں کی ضرورت ہوتی ہے‘۔ انہوں نے کہا، ’انہوں نے کہا، ’ساتھ ہی، ہندوستان کو وہ کرنا ہوگا جو اسے اپنے مفاد کے تحفظ کے لئے کرنا ہے‘۔

      جنوب ایشیا میں ہندوستان کے کردار پر کیا بولے وزیر خارجہ

      جنوبی ایشیا سے جڑے ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا کہ ہندوستان اس علاقے پر بہت دھیان دے رہا ہے کیونکہ پڑوس کے تقریباً ہر ملک کی سرحد ہندوستان کے ساتھ متصل ہے، جہاں سب سے بڑی معیشت اور سیاست ہے۔ انہوں نے کہا، ’مجھے یقین ہے اور معلوم ہے کہ یہ وزیر اعظم کا یقین ہے کہ حقیقت میں جنوبی ایشیا میں ایک علاقہ بنانے کی پہل اور ذمہ داری ہمارے ساتھ ہے۔ اگر ہم پہل کرتے ہیں، اگر ہم اسے آگے بڑھاتے ہیں، تو یہ یقینی طور پر ہوگا۔ اگر ہم نہیں کرتے ہیں، تو ایسا نہیں ہوگا۔ ظاہر ہے کہ ہمیں دوسروں کی ضرورت ہے‘۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: