உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک : بیف کھانے پر وزیر اعلی کا سر قلم کرنے کی دھمکی دینے والا بی جے پی لیڈر گرفتار

    شموگا: شموگا کے ایک بی جے پی لیڈر نے کرناٹک کے وزیر اعلی سدارميا کو شہر کے گوپی سرکل میں بیف کھانے کا چیلنج دیا ہے۔ بی جے پی لیڈر نے دھمکی دی ہے کہ اگر سدارميا بیف کھاتے ہیں، تو ان کا سر قلم کر دیا جائے گا۔

    شموگا: شموگا کے ایک بی جے پی لیڈر نے کرناٹک کے وزیر اعلی سدارميا کو شہر کے گوپی سرکل میں بیف کھانے کا چیلنج دیا ہے۔ بی جے پی لیڈر نے دھمکی دی ہے کہ اگر سدارميا بیف کھاتے ہیں، تو ان کا سر قلم کر دیا جائے گا۔

    شموگا: شموگا کے ایک بی جے پی لیڈر نے کرناٹک کے وزیر اعلی سدارميا کو شہر کے گوپی سرکل میں بیف کھانے کا چیلنج دیا ہے۔ بی جے پی لیڈر نے دھمکی دی ہے کہ اگر سدارميا بیف کھاتے ہیں، تو ان کا سر قلم کر دیا جائے گا۔

    • News18
    • Last Updated :
    • Share this:

      شموگا: کرناٹک کے وزیر اعلی سدارميا کو بیف کھانے پر سر قلم کرنے کی دھمکی دینے والے بی جے پی لیڈر ایس این چنابسپا کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ شموگا کے ایک بی جے پی لیڈر بسپا نے سدارميا کو دھمکی دی تھی کہ اگر انہوں نے شہر کے گوپی سرکل میں بیف کھایا تو ان کا سر قلم کر دیا جائے گا۔


      ایک انگریزی روزنامہ 'ڈكن ہیرالڈ کے مطابق 'شموگا میونسپل کے سابق صدر ایس این چنا بسپا نے کہا تھا کہ وزیر اعلی سدارمیا ایک ظالم کی طرح برتاؤ کر رہے ہیں ۔ چنا نے کہا کہ 'اگر وزیر اعلی کو بیف کھانا ہے تو کھائیں، انہیں کوئی نہیں روکے گا۔ لیکن شموگا کے گوپی سرکل میں اگر وہ بیف کھاتے ہیں ، تو ان کا سر قلم کر دیا جائے گا۔ ہم ایسا کرنے کے لئے سوچیں گےبھی نہیں ۔


      بیف پر وزیر اعلی کے بیان کے خلاف بی جے پی کے احتجاج میں چنا نے کہا تھا  کہ کانگریس لیڈر کے اقدامات نے ہندوؤں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا کام کیا ہے۔ ہم سب گائے کے دودھ پیتے ہوئے بڑے ہوئے ہیں۔


      قابل ذکر ہے کہ گزشتہ ہفتے دہلی میں واقع کرناٹک بھون میں گائے کے گوشت کی شبہ میں پولیس کے چھاپہ پر اپنی شدید ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے سدارميا نے کہا تھا کہ وہ گائے کے گوشت کھائیں گے اور بی جے پی کو کوئی حق نہیں کہ انہیں روکے۔


      ادھر بی جے پی لیڈر کے بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے سدارميا نے کہا ہے کہ انہیں اپنی زندگی کا کوئی ڈر نہیں۔ ان کے مطابق یہ وہی لوگ ہیں جو خود بیف کھاتے ہیں۔ اگر دھمکی کی بات صحیح ہے تو پولیس ایکشن لے گی۔

      First published: